کتاب: تهران، خیابان آشیخ هادی

کتاب تهران، خیابان آشیخ هادی ع۔پاشائی کے نام احمد شاملو(۱)کے خطوط پر مشتمل ہے اور یہ کتاب حالیہ دنوں میں چشمہ پریس سے شائع ہوکر منظر عام پر آئی ہے۔

فرسٹ کیپٹن ہوشنگ صمدی کی یادداشتیں

فرسٹ کیپٹن ہوشنگ صمدی کی یادداشتیں سید قاسم حسینی کی کوشش و کاوش سے زیور طباعت سے آراستہ ہوئیں۔ کیونکہ بحری فوج کی بہت کم یادداشتیں منظر عام پر آئی ہیں اس لیے یہ یادداشتیں دوسری جنگ کی یادداشتوں سے منفرد ہیں۔

رضا شاہ، ایران کی عصری تاریخ کے روشن سائے میں

«رضاشاه در سایہ روشن تاریخ معاصر ایران، از آغاز تا پایان سلطنت» رضا شاہ ،ایران کی عصری تا ریخ کی روشنی میں، ابتدا سے حکومت کے خاتمے تک۔ رضا شاہ پہلوی کے بارے میں ایک نئی کتاب ہے جس میں موجودہ ماخذوں کی طرف رجوع کرتےہوئے سیاسی منظر نامہ میں رضا شاہ پہلوی کی تاریخی شخصیت اور حالات کا تجزئیہ کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔

عراق کی یادداشتیں

کتا ب ’’یادداشتہائے عراق ‘‘ کو معروف اور نوبل انعام یافتہ مشہور مصنف ماریو ورگس لیوسا (Jorge Mario Pedro Vargas Llosa) کے عراق کے سلسلہ میں عینی مشاہدات کی بنیاد پر لکھا گیا ہے ۔ اس کتاب کے مطالب عراق پر اتحادی فوج کے حملہ اور اس کے سلوک کے سلسلہ میں دستاویزات کو شامل ہے ۔اس کتاب کے قارئین کو ،عراقی عوام کے صدام کی آمرانہ حکومت سے آزاد ی حاصل کرنے میں کامیابی کے تجربہ سے بخوبی آگاہی حاصل ہوسکتی ہے اور قارئین عراق میں رونما ہونے والے واقعات کے سلسلہ میں درست قضاوت کرسکتے ہیں ۔

ایران کی معماری پر زبانی تاریخ کا ایک مقدمہ

آج بھی ایران میں معماری کے بہت سے قدیم شواہد موجود ہیں کہ جن سے لوگ غافل ہیں۔ ہمارے پاس زبانی تاریخ مٹنے والی ہے، ایران میں معماری پر ماضی کی تاریخ جو آج بھی لوگوں کے سینوں میں پوشیدہ ہے اس سے پہلے کہ ہم اس قیمتی معلومات سے ان کے مرنے کے ساتھ محروم ہوجائیں بیدار ہونا چاہیے۔ کتاب حاضر زبانی تاریخ کے علمی اور عملی مباحث کے سلسلے میں ایک لمحہ فکریہ ہے۔ "زبانی تاریخ " معماری ایران کے قیمتی شواہد کو محفوظ کرنے کے سلسلے میں پہلا قدم ہے۔

شاملو کا سفر نامہ امریکہ

کتاب «روزنامہ سفر میمنت اثر ایالات متفرقہ امریغ» کو ایران کے مشہور شاعر احمد شاملو نے لکھا ہے یہ کتاب ۱۳۶ صفحات پر مشتمل ہے جو ۲۳ سال کے انتظار کے بعد مازیار پریس سے شائع ہوئی ۔یہ کتاب ۱۳۸۴ ش سے وزارت ثقافت و تعلیم کی طرف سے طباعت کی اجازت کی منتظر تھی ۔تقریبا دو مہینہ پہلے اس کو شائع کرنے کی اجازت ملی ۔شائع ہوکر منظر عام پر آتے ہی احمد شاملو کے معتقدین نے اس کا پرزور استقبال کیا اور اب یہ دوسری بار زیر طبع ہے ۔

شمس لنگردوی کی کتاب پر ایک نظر

کتاب کے فریم سے باہر کی تصویریں

بعض چیزوں کے ساتھ صرف تجربہ کیا جاسکتا ہے اور ان کے ساتھ زندگی گزاری جاسکتی ہے تاکہ صحیح شناخت حاصل ہوجائے۔ یہ پہلا نکتہ تھا جو شمس لنگرودی کے بارے میں کہنا چاہ رہا تھا۔ خوش قسمتی سے یہاں اس کا موقع مل گیا۔

کتاب "ایران میں ماموریت"

یہ کتاب خاص توجہ اور اہمیت کی حامل ہے اس کی وجہ یہ ہے کہ اس کتاب میں مصنف کا کردار اور اس کی موقعیت انقلاب ایران کی تبدیلیوں میں اہم معلومات تک پہنچاتی ہے۔

پہلوی حکومت کی سیاسی شخصیت لیفٹیننٹ جنرل عبد اللہ آذر برزین سے گفتگو

۷۲۸ صفحات پر مشتمل کتاب (فرماندہی و نافرمانی) ایران کی شفاہی و تصویری تاریخ کا ایک مجموعی عنوان ہے کہ جو پہلوی دوم کے زمانے سے متعلق ہے جسے حسین دھباشی کی سرپرستی و کوششوں نے آراستہ کیا ہے۔

سردار محمد جعفر اسدی کی یاداشت

کتاب "تیسری ہدایت"

سید حمید سجاد منش نے کتاب’’ہدایت سوم ‘‘ میں سردار محمد جعفر اسدی (۱) کی بچپن سے لیکر مسلط کردہ جنگ کے خاتمہ تک کی یادوں کو تحریر کیا ہے۔ یہ کتاب ان ستر واقعات کو شامل ہے جن میں سردار اسدی کے جوانی کے دور اور شہیدمحراب آیۃ اللہ مدنی سے ملاقات ،انقلاب سے پہلے کی مزاحمتیں ،انقلاب کی کامیابی اور مسلط کردہ جنگ کا تذکرہ کیا گیا ہے ۔
...
10
 
حسن مولائی کی یادیں

سو افراد، سینکڑوں افراد، ہزاروں

وہ لوگ جو چند گھنٹوں پہلے جمرات جا رہے تھے تاکہ رمی جمرات کا فریضہ ادا کرسکیں اب تولیہ اوڑھے سو رہے تھے۔ جب جنازے ختم ہوئے، تو مجھے سمجھ نہیں آئی کہ مجھے کہاں لوٹنا چاہئیے۔ اچانک میرے پیروں نے کام کرنا چھوڑ دیا اور میں نے پہلی مرتبہ وہاں گریہ کرنا شروع کردیا۔ واپس پلٹ کر ان سفید پیکروں کو دیکھنا شروع کیا۔ پوری سڑک جنازوں سے سفید ہوچکی تھی۔ ایک جوان مرد کی آواز پر چونکا جو میرے ساتھ کھڑا تھا اور میرے پیروں کے سامنے چپلیں رکھ رہا تھا۔
حجت الاسلام والمسلمین جناب سید محمد جواد ہاشمی کی ڈائری سے

"1987 میں حج کا خونی واقعہ"

دراصل مسعود کو خواب میں دیکھا، مجھے سے کہنے لگا: "ماں آج مکہ میں اس طرح کا خونی واقعہ پیش آیا ہے۔ کئی ایرانی شہید اور کئی زخمی ہوے ہین۔ آقا پیشوائی بھی مرتے مرتے بچے ہیں

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔

شدت پسند علماء کا فوج سے رویہ!

کسی ایسے شخص کے حکم کے منتظر ہیں جس کے بارے میں ہمیں نہیں معلوم تھا کون اور کہاں ہے ، اور اسکے ایک حکم پر پوری بٹالین کا قتل عام ہونا تھا۔ پوری بیرک نامعلوم اور غیر فوجی عناصر کے ہاتھوں میں تھی جن کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں تھا کہ وہ کون لوگ ہیں اور کہاں سے آرڈر لے رہے ہیں۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔