"مہرنجون" دفاع مقدس میں

تمام دلاور ایک گاؤں سے

"مہرنجون" ایک گاؤں کے نوجوانوں کا ایران پر عراق کی جانب سے تھونپی گئی جنگ کے محاذوں پر شرکت کیلئے جوش و ولولہ کی داستان ہے۔ وہ گاؤں کے اسکول کی دریوں سے اُٹھ کر فوجی ٹریننگ کیلئے جاتے ہیں اور پھر جنگی کاروائیوں میں شرکت کرتے ہیں۔ جن میں سے کچھ لوگ گاؤں واپس آجاتے ہیں اور کچھ درجہ شہادت پر فائز ہوجاتے ہیں۔ اس کتاب میں، نوجوانوں نے محاذ پر جو کوششیں کی اور جو تجربات کسب کئے ہیں، اُنہیں کتاب لکھنے والے کے ذریعے سامنے لا یا گیا ہے ، جو خود انہی نوجوانوں میں سے ایک تھے ۔
مٹی کے برتن بنانے والے شہید کی زندگی سے کچھ باتیں

انقلاب میں ایک مرد کا روپ

بہت سے لوگ اُس سے متاثرتھے، اُس کی خصوصیات میں سے ایک اُس کا پرکشش ہونا تھا۔ اُس نے چودہ سال کی عمر سے ہی جدوجہد کا آغاز کر دیا تھا، ۳۳ سال کی عمر میں جیل کا مزہ بھی چکھ لیا تھا، ۱۳ سال تک جیل میں رہا۔ کام کرنے کے ساتھ ساتھ اُسے پڑھائی کا بھی شوق تھا۔ اُس کی پڑھائی اور جدوجہد ساتھ ساتھ چلتے تھے۔
"تب و تاب*" محمد رضا فرتوک زادہ کی نگاہ میں جدوجہد کا زمانہ

شیراز یونیورسٹی کی انقلابی فضا کا واقعہ

ڈاکٹر محمد رضا فرتوک زادہ نے اپنی کتاب "تب و تاب" میں شیراز اور تہران میں انقلاب اسلامی کی کامیابی کے بارے میں بہت سی معلومات سے اپنے قارئین کو آگاہ کیا ہے۔ چونکہ وہ اُن دنوں ایک اسٹوڈنٹس تھے اس لئے اُن کے زیادہ تر واقعات یونیورسٹی اور پہلوی حکومت کے خلاف طلباء جدوجہد سے مربوط ہیں۔

ایرانیوں کے یورپ کے بارے میں لکھے گئے پہلے سفرنامے پر ایک نظر

"طالبی کا سفر"(مسیر طالبی)
" مسیر طالبی" یا" ابوطالب بن محمد اصفہانی " (1) کے سفر کی شرح ،وہ پہلا سفر نامہ ہے جو ایرانیوں نے یورپ کے بارے میں لکھا،یہ سفر نامہ پہلی بار سن 1352 میں شائع ہوا اور اس کے بعد اب تک پانچ دفعہ شائع ہوچکا ہے
بیر جند سے تعلق رکھنے والا آفاقی انسان

ڈاکٹر محمد حسن گنجی کے تعلیمی دور کی یادیں

یہ کتاب ایک دلچسپ اور آزمودہ کتاب ہے جسکے واقعات ناقابل فراموش ہیں ایک ایسے شخص کے واقعات کہ جس کو ایران کی تاریخ کبھی بھی فراموش نہیں کرسکے گی ،اور اس بات کو کہنے میں مجھے کوئی تردید اور شک نہیں۔۔۔۔

ایثار و شہادت کی اندازہ گیری ،تاریخ شفاہی کی رو سے

مختلف شعبوں کے خصوصی سیشن منعقد کروانے کا اقدام نہ صرف نئی اطلاعات کے تبادلے و جزئی مسائل پر توجہ دلانے کا سبب بنتا ہے بلکہ اسکے ساتھ ساتھ ،تحقیقی شعبوں پر بھی مثبت اثرات ڈالتا ہے کہ گذشتہ دس دہائیوں کے دوران ،تاریخ شفاہی کی خصوصی نشستوں اور اس کے نتیجے میں شائع ہونے والا مواد اور مطالب ،اسکا منہ بولتا ثبوت ہیں اور اسکے نتیجے میں شائع ہونے والے ماخذ ،مضامین اور قیمتی تجربات سے بھری تحریریں محقیقین کوکافی مدد فراہم کرتی ہیں۔ تاریخ شفاہی کی نویں خصوصی...

سید محمد باقر امامی کی کتاب پر ایک نگاہ

کتاب «سید محمدباقر امامی و کروژُک‌های مارکسیستی او»سید محمد باقر امامی کی زندگی, اس کی سرگرمیوں اور ان گروہوں کے بارے میں ہے جنہیں اس نے سال ٍ۱۳۲۳ش کے بعد تشکیل دیا تھا

مشہد کے تھیٹر کی تاریخ کے زرین صفحات

مصنف نے مشہد کے تھئیٹر کے سلسلے میں کوششیں کرنے والے مختلف گروہوں کا تجزئیہ کرتے ہوئےآذربائیجان کے مہاجروں، روس اوربرطانیہ کی قونصلیٹ(قونصل خانہ) اور ریڈیو مشہد(۳) کے افتتاح کو مشہد کے تھئیٹر کی تقویت کا عنصر بتایا ہے

زبانی روایت کا مطالعہ؛ خدو سردار، سرکشی سے حکمرانی تک

یہ بچہ آج را ت ہی پیدا ہوگا یہ بیٹا ہوگا اور بہت بلند قسمت کا حامل ہوگا۔وہ اس قدر شہرت اور قدرت حاصل کریگا کہ اس کے سامنے کوئی ٹک نہیں سکے گا۔ اس کانام ہرجگہ پھیل جائیگا اور اپنے زمانے میں اس کی شخصیت بے مثل و بے نظیر ہوگی۔

ایک اخبار بیچنے والے کی یادداشتیں

رنجبر نے ایرانی پریس کی دنیا میں ۸۶ سال تک اخبار بیچنے کا ریکارڈ قایم کیا ہے۔ اس کتاب میں ۱۲۹۹کی بغاوت سے ۱۳۵۷ش کے انقلاب تک کے تاریخ کے واقعات کے سلسلے میں رنجبر صاحب کی یادداشت کو تحریر کیا گیا ہے۔
1
 
جنوبی محاذ پر ہونے والے آپریشنز اور سردار عروج کا

مربیوں کی بٹالین نے گتھیوں کو سلجھا دیا

سردار خسرو عروج، سپاہ پاسداران انقلاب اسلامی کے چیف کے سینئر مشیر، جنہوں نے اپنے آبائی شہر میں جنگ کو شروع ہوتے ہوئے دیکھا تھا۔
لیفٹیننٹ کرنل کیپٹن سعید کیوان شکوہی "شہید صفری" آپریشن کے بارے میں بتاتے ہیں

وہ یادگار لمحات جب رینجرز نے دشمن کے آئل ٹرمینلز کو تباہ کردیا

میں بیٹھا ہوا تھا کہ کانوں میں ہیلی کاپٹر کی آواز آئی۔ فیوز کھینچنے کا کام شروع ہوا۔ ہم ہیلی کاپٹر تک پہنچے۔ ہیلی کاپٹر اُڑنے کے تھوڑی دیر بعد دھماکہ ہوا اور یہ قلعہ بھی بھڑک اٹھا۔