سید محمد باقر امامی کی کتاب پر ایک نگاہ

محمود فاضلی
مترجم: سید محمد جون عابدی

2015-09-30


کتاب «سید محمدباقر امامی و کروژُک‌های مارکسیستی او» سید  محمد  باقر امامی کی زندگی,  اس کی  سرگرمیوں اور  ان  گروہوں  کے بارے میں  ہے  جنہیں اس  نے   سال ٍ۱۳۲۳ش کے بعد   تشکیل دیا تھا اور یہ کتاب   مندرجہ  ذیل  عناوین:

  «از کروژُک‌های مارکسیستی تا سازمان انقلابی کمونیستی (ساکا) 1323-1350»، «خاطرات»یعنی یادداشت اور «مدارک» یعنی  اسناد کے  ساتھ تین فصلوں پر مشتمل ہے ۔ان سالوں میں اطراف میں ہونے  والی تمام   تبدیلیوں اور  تحریکوں سے قطع  نظر امامی کا مقصدیہ تھا کہ  ایران میں مزدوروں کی ایک   کمیونسٹ  پارٹی تشکیل دیا جائے۔اس  کا اصرا ر اس بات پر تھا کہ کسی کمیونسٹ پارٹی کے نہ ہونے کے پیش نظر ضروری ہے کہ ایک کمیونسٹ پارٹی  بنائی  جائے۔اس  کےخیال  کے  مطابق   کمیونسٹ   پارٹی(کروژک)  (۱) بنانے  کے علاوہ  دوسرا  کوئی   چارہ  نہیں  ہے ۔

کتاب  کرروژک  ہای مارکسیستی    ،ایران   کی ایک   غیر  معروف  بائیں  جماعت  کی   تنظیم  کے بارے میں  تجزئیہ ہے  ،ایک  ایسی تنظیم  ٍٍجس  نے  ۱۳۲۳ ش میں   مذکورہ  نام  کے  ساتھ  اپنی   فعالیتیں شروع کی  تھیں  اور    فروردین   ۱۳۵۰ میں    «سازمان انقلابی کمونیستی ایران»(ساکا)(2)نام سے   ظاہر  ہوئی  اور   اس کے بعد  بکھر  گئی۔یہ تنظیم  ۲۷ سالوں  تک   نشیب و فراز  کےساتھ   اپنی   فعالتیں  انجام  دیتی  رہی اور  متعدد  بار  نام   تبدیل  ہونےا ور بکھر کر دوبارہ     منظم  ہونے کے   باوجود   ایک  ہی   سمت  میں  سرگرمیاں  انجام  دیں ۔اس  تنظیم کا  بانی  ،نظریہ پرداز  اور  رہنما   سید  محمد  باقر امامی    ہے  ۔اور  تاریخ    اور   بائیں   جماعت  نے نہ صرف  اس کو اور اس کے ذریعہ  تشکیل شدہ   گروہو ں کی   طرف  توجہ  نہیں  دی بلکہ  صرف   چند  مصنفین   نے ہی بائیں    جماعت  کی  فعالیتوں  کی  تاریخ کے ضمن میں  امامی کی فعالیتوں  کی  طرف   اشارہ  کیا ہے اور  اسے    براہ  راست   یا کسی  طریقہ  سے حکومت پہلوی  کے  حٖفاظتی  نظام سے  مربوط شخص کے طور   پر  پہچنوایا ہے یا کم  از  کم اس کو  مشکوک  شخصیت  جاناہے۔ عبد الصمد  کاربخش نے  اپنی   کتاب  «نظری به جنبش کارگری در ایران» اور  بیژہ جزنی  نے  کتاب «تاریخ سی ساله سیاسی ایران» میں  امامی اور  اس کے ساتھیوں  کی   سرگرمیوں  کی  طرف اشارہ کیا ہے ۔جزنی   بغیرکسی دستاویز اور ثبوت  کے    اس   پر الزام  عائد  کرتا ہے  کہ ۱۳۳۱ش میں   جیل  سے  آزاد  ہونے  کے بعد اس  نے  مشکوک   سرگرمیاں  انجام  دینا  شروع کردی  تھیں ۔اس  نے  ادا رہ   اطلاعات  سے    ارتباط پیدا  کیا اور اس کے بعد  سے اپنے تعلقات  کو  پولس کے ساتھ  برقرا ررکھا ۔جزنی کے  مطابق   امامی   کی فعالیتیں ساواک  (پہلوی  حکومت  کی   انٹلیجنس)کے  تحت نظر تھیں  اور  اس کے   گروہوں کابکھرنا اورمتحد ہونا پولس  کے زیر نظرانجام پاتا تھا۔(۳) اور   «یونس پارسا بناب»نے  کتاب «تاریخ صد ساله احزاب و سندیکاهای سیاسی ایران»  میں   اس  کی طرف  اشارہ  کیا ہے ۔

امیرحسین فطانت اپنی یادداشت’’قہرمان کیست؟‘‘ میں   سید  باقر امامی   کے   بارے میں  کہتے ہیں :’’آٹھویں    نمبر کا  درواز کھلا اور  تقریبا   بیس   تیس  سے زیادہ    نئے  قیدی  چوتھی   بیرک  میں    داخل ہوئے۔ان میں  سے اکثر  ادھیڑ عمر کے تھے اور ان کے چہروں سے معلوم  ہورہا تھا کہ   وہ   طلاب  یا  روشن  فکر افراد میں  سے نہیں ہیں ، ان میں سے  اکثر مزدور تھے  اور ان کا تعلق «ساکا»، ’’سازمان انقلابیون کمونیست ایران‘‘ نامی  گروہ سے تھا۔اس  زمانہ  کی  بائیں جماعت  کے سیاسی  میدان میں  اس  جماعت ، اس  گروہ  کی داستان بہت  دلچسپ ہے۔یہ  گروہ   سید   محمد  باقر  امامی  نامی  شخص  کا پیرو تھا  ۔امامی  ایک  مذہبی  اور شریف  گھرانہ میں   پید اہوا تھا   اور جوانی  کے دور میں  روسیوں  کے  جانے کے بعد  اس کی دوستی  کچھ روسیوں  سے ہوگئی  جس  کے  نتیجہ میں وہ مارکیسسٹ  افراد کا  ایک  بڑا   نظریہ   پرداز  بن  گیا   اگرچہ  اس  کے  اپنے کچھ خاص  نظریات  بھی تھے۔وہ   اور  حزب تودہ  (ایران کی   کمیونسٹ   پارٹی )کبھی  بھی  ایک  پلیٹ فارم  پر جمع  نہیں  ہوئے   ۔وہ  حزب تودہ اور  اس کے رہنماؤں کوکمیونسٹ ہی مانتا تھا۔سید  باقر امامی  کی  پوری زندگی  سیاسی  واقعات  سے  بھری ہوئی  ہے۔اسے سزائے موت  دینے کی پیش کش کی گئی تھی۔اس  کے بعد  عمر قید  کی سزا سنائی  گئی  ،روسیوں  کی  جاسوسی  کرنے  کا  الزام  لگایا گیا اور حزب تودہ  سے نکال دیا گیا  وغیرہ ۔انہیں وجوہات کی  بنیاد  پر  اسنے  اپنے آپ کو  الگ  کرلیا اور  مزدور طبقہ کے ساتھ ملکر  ایک   مطالعاتی  مجلس  کا  انعقاد کرنے لگا جسکا  نام  روسی لفظ’’کروژک‘‘یعنی  مجلس یا نشست  رکھا ۔اس مزدوروں کے گروہ نے  سالوں تک  مارکسسٹ  آثار اور ان کے رسالوں  کو اورخود  باقر امامی  کی  تحریروں  کو  جاری رکھا  ۔تنہا  ایسا  گروہ  تھا  جو ساواکیوں  کے   ہاتھوں  سے بچا  ہوا تھا۔اور  مخفیانہ طور  پرا پنی   فعالیتوں کو  انجام دے رہا تھا۔یہاں تک کہ روشن  فکروں کےاس  گروہ میں داخل  ہونے کے بعد  ساواک  نے  اس گروہ   کے  ارکان اور  اس کی  سرگرمیوں  پر تسلط پیدا  کر لیا۔اوراب وہ وقت تھا کہ میں قید خانہ  شمارہ  ۴  میں    باقر امامی   کے پیروؤں کے ذریعہ  اس  کی  داستان  سنتا  تھا  ۔لیکن   اصلی داستان  سید باقر امامی  سے متعلق ہے ۔وہ لوگ  کہتے  تھے  کہ یہ مزدور  ارکان  اور’’ساکا ‘‘سے متعلق  افراد  اس  کا  بہت  احترام کرتے تھے۔میں  نے صرف  درویشوں اور  قطبوں کا ایسا  احترام  دیکھا  تھا ۔وہ خود فقیروں اور  مزدوروں کے محلے  میں    ایک  بہت   ہی چھوٹے سے  گھر میں   رہتا تھا۔وہ  اپنے دوش پر ایک   عبا    ڈالے ہوئے ایک  چراغ     کی  روشنی میں   اسی  چھوٹے سے کمرے میں    گروہ  بنانے اور  مارکسسٹ نظریات  لکھنے میں   مشغول  رہتا تھا۔‘‘(۵)

اس کتا ب کی   پہلی فصل  میں   مصنف  نے  باقر  امامی  سے  متعلق  بہت  کم  دستاویزات ،اس کی تحریروں اوراس  ۲۷ سالہ  گروہ کے   چند  ارکان    اور رہنماؤں  کی یادداشتوں کا  تنقیدی  جائزہ  لیا  ہے  ۔اور   ۱۳۲۳ ش تک  کی باقرامامی  کی  مبہم   زندگی ،اس  گروہ  کے   وجود میں آنے کی کیفیت،اس کی  مارکسسٹ سے متعلق   فعالیت،روسی  تنظیم ،ایرانی   کمیونسٹ   پارٹی(یکا)،اور  ایران  کی کمیونسٹ انقلاب پارٹی(ساکا) کو  ۱۳۲۳ سے  ۱۳۵۰  تک   بیان کی  کرنے کی   کوشش کی  ہے ۔(۶)

­­­­­­­­­­­­کتاب کی    دوسری  فصل   میں  اس  ۲۷ سالہ  گروہ   کے ایک  رہنما اور  تین  دیگر اعضا اپنی   یادداشت اور  باقی  یاددیں  بیان  کرتے ہیں ۔اس  فصل میں   رمضان  آزاد،ہونان  عاشق  اور  ہادی  پاکزاد کی  یادداشتوں کو بھی  بیان کیا گیا ہے ۔رمضان  آزاد نے   تیل  کے قومی  بنائے جانے  کی نہضت  کے  دوران   حمید  ستار زادہ(۷)  کے ساتھ   ایک بے نام   گروہ کے ساتھ  ملکر   اپنی سرگرگرمیاں  شروع کی تھیں ،وہ  اس گروہ  اور اسی  طرح  یکا اور ساکا سے منسلک  ہونے کی  کیفیت اور  ان  میں  سے ہر گروہ کی سرگرمیوں  کو  بیان  کرتا ہے ۔ہونان  عاشق جو  باقر  امامی  کے  بہت  نزدیکی  دوستوں اور اس کے  شاگردوں میں  سے ہے ،اس کے   ساتھ   مسلک ہونے  اور ۱۳۵۰ تک کی اپنی فعالیتوں کوبیان کرتا ہے ۔ہادی   پاکزاد ،ساکا   کے  شعبہ  اصفہان کا  انچارج ،۱۳۴۸۔۴۹ میں  اس  گروہ  کے درمیان  پھوٹ پڑنے  اوربعض  ارکان کے  مسلحانہ   قد م  اٹھانے کی  وضاحت  کرتے ہوئے  ان میں سے  ہر ایک  گروہ کی  سرگرمیوں کو بیان کرتا ہے ۔«هونان عاشق، رمضان آزاد، و هادی پاکزاد»کی  یادداشتیں   درواقع  ۱۳۸۱  میں  خود  ان کے ساتھ براہ  راست  مصنف  کی گفتگوکا  نتیجہ ہے ۔باقر امامی  کی  زندگی    اور اس ک فعالیتوں سے متعلق    ’’مختار کیا ‘‘کے ذریعہ لکھی   گئی  کچھ یادداشت  ایسی  ہیں  جو ابتک  طبع  نہیں ہوسکی ہیں ۔وہ ان  یادداشتوں میں امامی  کے  بچپن  سے  موت تک  کے واقعات کو  بیان کرتا ہے ۔مذکورہ شخص    امامی  کے  ۱۳۳۳سے ۱۳۴۶ تک اسرار  کا  محرم تھا ۔اس  کی لکھی   ہوئی  باتیں  اس لئے  اہمیت کی حامل ہیں   کہ اس نے ان باتوں کو  خود اسی سے سنا  تھا  اور  اس کے سلسلہ  میں بعض  دیگرافرادکے ذریعہ بیان  کی  گئی باتوں سے مشابہت کے باوجود  کچھ  ایسی  باتیں  بھی ہیں جو  بالکل  مختلف  ہیں ۔اس کی   لکھی  ہوئی  باتوں کو  کتاب کے ضمیمہ  شمارہ ایک  میں   صفحہ  ۱۸۵ سے ۲۱۳ تک    میں  بیان   کیا گیا ہے ۔

 اس کتاب کی تیسری  فصل میں’’   مدارک‘‘کے  عنوان سے ۸ تیر   ۱۳۱۱ کو فوج  کی  طر ف سے ایران میں روسی جاسوسی  کے  گروہ کی   مقدمہ  کی  سماعت  کو  ،نیما  یوشیج کے ذریعہ باقر   امامی  کے  اشعار کا  تجزیہ اور اس کے دومضامین کو   بیان   کیا  گیاہے ۔اس مجموعہ  کے   دستاویزات اور  یادداشت کے اصلی متن  میں کوئی   تبدیلی  نہیں کی گئی ہے ۔

کاوہ  بیات  اس کتاب   پر اپنا  نوٹ لگاتے ہوئے کہتے ہیں :’’مختلف  گروہوں کے رنگوں   کو   سمیٹ  کر ایک ہی   یا   چند  مشخص   صورتوں  میں  بیان کردینا اور  ان  کے  اس  اختلاف کو  نظر انداز  کردینا   ہماری  تاریخ  نگاری کی   لاپرواہی  کی  ایک  علامت ۔اور  یہی  بات ایران  کی   بائیں جماعت کی عصری   تحریکوں  کی  تاریخی  نگاری  پر بھی صادق  آتی  ہے ۔’’سید  محمد  باقر امامی  وکروژک  ہای  مارکسستی او‘‘کی  سرگذشت  بھی  انہیں  چند  مختلف رنگوں  کو  مجموعہ ہے  جس نے  ۱۳۲۰کے   بعد   کےسالوں  میں   حزب تودہ  سے   الگ  ہوکر  قابل غور  فعالیتیں  انجام  دیں  لیکن  انکو   تاریخ  میں نظر انداز  کردیا گیا ۔‘‘

کتاب  کےمصنف محمدحسین  خسرو پناہ  جو  ایران میں سیاسی  گروہوں اور  خواتین  کی   تحریکوں کی  تاریخ کے سلسلہ  میں   تحقیق  کررہے  ہیں  ،امامی  کی   مبہم  زندگی کے جوانی  کے دور کے سلسلہ میں  کہتے  ہیں :’’امامی   روسی    اسکول میں  اپنی  تعلیم کے دور  کو زندگی کا  ایک  اہم  موڑ مانتا  تھا کیونکہ اس کا دعویٰ  تھا کہ وہ  اسی دور میں مارکسزم   سے آشنا   ہوا  تھا ‘‘۔ 

امامی   کے  قریبی   دوستوں میں  سے   آلبرٹ سہرابیان اور مختا ر کیا    خود  سے  نقل  کرتے  ہوئے  کہتے  ہیں :’’اس  اسکول  کے کچھ  اساتید کا  تعلق   بلوشویک  پارٹی  سے تھا ۔روس کی  سوشل ڈموکریٹک   مزدور وں  کی پارٹی   بلوشیک  نے مارکسزم کی   ترویج  اوراس  کی تبلیغ کی ذمہ  داری  انہیں کو سونپی تھی۔روس  کی   زاری  حکومت  ان کے   عقاید  سےآشنائی کے بغیر  انہیں   ایران  بھیجتی  تھی ۔ان اساتید میں  سے ایک    استاد ، باقر امامی اور اس کے  چچازاد  بھائی  سید  حسن امامی  کو  طلاب کے درمیان  سےمنتخب کیا اور رسمی  کلاس  ختم ہوجانے  کے بعد  انہیں  مارکسز م کی  تعلیم  دیتاتھا ۔اور اس کی  تدریس کا طریقہ  بھی  انہیں  سکھاتا تھا۔وہ یہ باتیں  انہیں   املا  کرتا اور  وہ  دونوں  اسے لکھتے تھے‘‘۔

اسی   طرح    کی  فصل ’’دوست نوشتہ   مختار کیا ‘‘ میں  مصنف کا  خیال ہے:’’امامی   نے  حزب تودہ  کی  تشکیل میں  شریک  نہیں تھا  اور اس کا شدید  مخالف  تھا‘‘۔وہ  باقرامام  سے  منقول  ایک   بات  میں  کہتا ہے :’’(امامی ) کہتا  تھا:یہ  سرمایہ داروں   اور  متوسطہ   گروہوں   جن مفاد مخلتف ہیں  پر مشتمل  ایک   گروہ ہے یہ درواقع کوئی پارٹی نہیں  ہے ۔بلکہ  ایک گروہ ہے۔پارٹی    عوام  کے  مزدر  طبقہ کے  روشن  فکر افراد  کے ساتھ ملکر  بنانی   چاہئے ۔اور  کمیونزم  کی  مضبوط  بنیاد   وں  پر استوار ہونی   چاہئےتاکہ  یہ  پارٹی سوشلسٹ انقلاب  کی  رہبری  کرتے  ہوئے  اس  انقلاب کو  کمیونزم تک   پہونچاسکے۔اور اس  نظریہ  کے  تحقق  کے  لئے امامی نے  ایک  پریس   کھولنےکا   فیصلہ  کیا ،کیوں  کہ   پریس میں  کام   کرنے  والے  افراد کسی  ملک  کا  روشن  فکر طبقہ ہوتا ہے ۔اس نے سوچا  کہ  ایک  پریس  خریدیں  اور  وہیں   سے  گروہ بنانے کا  کام   شروع کیا جائے۔

’’۔۔۔شاہرود میں  امامی  کی ملاقات  احمد بسطامی  سے  ہوتی ہے  ۔بسطامی   اس کو  گروہ  بنانے  کی  طرف  متوجہ   کرتا ہے اورتہران   واپس  آتے  ہی وہ  مارکسزم کے سلسلہ میں    کلاسیں  لگانے  یا  پارٹی   بناننے کی  فکر میں   لگ جاتا ہے ۔تاکہ   لوگ ان  کلاسون میں  شرکت  کریں  اور  مارکسزم  سے آشنائی پیدا  کریں  اور   جو لوگ  اس مسئلہ کو   بہتر  طور  پر  سمجھ جائیں   اور گروہی  کام  کرنے  کو  تیار  ہوں   تو انہین   دیگر   افراد سے  الگ   کرلیا جائےاوران کی  تربیت    جائے اور  پارٹی  کے  کام  ان  کو  سکھائے جائیں  تاکہ  اس  طرح  ایک  مظبوظ  گروہ  آمادہ  کیا جاسکے۔‘‘

مختار کیا   اپنی  یادداشت  میں تہران  میں  مقیم    ایک  ارمنی   عورت  سے   امامی  کی ملاقات اور ایک دوسری   ارمنی   عورت سے  اس  کی ناکام  شادی   اور اس  کی  مالی   مدد کرنے کو   یوں بیان کرتا ہے :’’ویولٹ کا بیٹا  جو   ۸ یا   ۹ سال  کا   تھا   عمارت کی  دوسری منزل  سے پہلی منزل کی   بالکنی   پر  گر کر  شدید  زخمی   ہوگیا تھا ۔اس کے  فوری  علاج  کا    خرچ  جو اس  وقت  ۶۰ ہزار تومان   آرہا تھا اسے  امامی  نے (گروہ کی   جو رقم اس کے  پاس  تھی ،اس میں سے)  ادا کیا ۔امامی  کی ماں نے اسے  اسدآباد  شمیران  میں   ایک   ۱۵۰۰ میٹر  کی زمین اس کو  دی تھی اور  وہ اس کو   فروخت کرنے کے لئے    مسلسل  اینجٹ کے آفس کا چکر لگایا کرتا تھا ۔وہ اکثر  دوسرے   افراد  سے کہا کرتا تھا کہ میں ساٹھ   ہزارتومان کا  مقروض  ہوں اس لئے  اس زمیں کو  بیچنا  چاہتا ہوں ۔لیکن  اسوقت اسے کوئی خریدا  ر نہیں   ملا ۔۔۔۔۔

لھٰذا  ہم  نے  فیصلہ  کیا   کہ  امامی  کے پاس   گروہ کا   جو  ۶۰ س۸۰  ہزار تومان  تک   کی  رقم ہے لیکر کام شروع کیا جائے۔امامی  اپنے  ذاتی  کاموں کے  لئے   ان پیسوں کے  استعمال کا  مخالف تھا اور میٹنگوں میں اس  کے  نقصانات کو متعدد باربیان کرچکا تھا چکاتھا۔اگرامامی  ہم کو   بتادیتا  کہ  اس نے  اس رقم کو  وویلوٹ کے  بچہ کو بچانے  میں  خرچ  کردیا ہے  تو  ہم  کوئی  دوسرا نتظام کرلیتے ۔ ہم اس زمیں   کے کاغذات  دیکھے تھے  اور اس نے   ہمیں    بتایا  تھا  کہ  وہ اسے  بیچنا چاہتا ہے ۔اس کے لئے  اس   کے   عمر  بھر کے اس نظریہ   کے  مقابلہ میں پیسوں کی  کوئی  اہمیت نہیں   تھی۔‘‘امامی  زمیں نہ  بکنے  اور  رقم   واپس  نہ دے پانے کی وجہ  سے   خود کشی  کرنےکا  قدم   اٹھا  تا ہے ۔یادداشت میں  امامی کی  خود  کشی کے سلسلہ میں یوں آیا ہے :’’امامی کو  اس  رات کچھ نہین  سوجھ رہا تھا  ۔  معشوقہ کے  بچہ کے   علاج  کے لئے ساتھیوں  کی اجازت کے بغیر   گروہ  کی  ساٹھ  ہزار تومان خرچ کرنے   کی  وجہ  سے  اس نے  خود  کے لئے  موت کا  حکم   صادر کرلیا۔اور خود ہی  اس   حکم  کو ناٖفذ  بھی کرلیا ۔میں    ایک  روز دیکھا  کہ  امامی   تخت  پر لیٹا ہوا ہے  اور  اس  کی اور   منھ  کھلا ہوا تھا اور  اس نے  چاقو سے  اپنے بائیں   ہاتھ کی  رگ  کاٹ لی تھی۔

 حاشیے:

۱۔ کروژکкружок ((kroozhok روسی  زبان کے ایک لفظ  ہے  جس کے معنی محفل یا  مجلس کے ہوتے ہیں ۔

۲۔مذکورہ گروہ کے بارے میں مزیداطلاع کے  لئے  «نگاهی گذرا در باره ساکا، هادی پاکزاد» http://www.akhbar-rooz.com/article.jsp?essayId=59749. اور «ساکا: سازمان انقلابی خودسامانده کارگران ایران، پیمان وهاب زاده،
http://www.akhbar-rooz.com/article.jsp?essayId=59690کی  طرف رجوع  کریں ۔         

۳۔ بیژن جزنی، تاریخ سی ساله ایران، بی جا، بی نا 1357، ص 103.
 

۴۔امیرحسین   فطانت کے  بارے  میں مزید  جاننے کے لئے  مضمون«یک فنجان چای بی موقع»، هفته نامه تاریخ شفاهی، شماره: 16۲، 21 خرداد 1393 کی  طرف مراجعہ کریں ۔

۵۔ امیر فطانت، قهرمان کیست، مصنف کی اپنی  ویبلاگ

۶۔باقر امامی  کی زندگی  کے  بار میں   مزید  جاننے کے لئے کتاب کے ضمیمہ شماره 2 صفحه 232 اور  ضمیمہ۳ صفحہ ۲۶۹ سے ۲۸۹  کی  طرف  مراجعہ کریں ۔

۷۔ حمید ستارزاده ریاست «گروه انقلابی مارکسیستی ایران» (گاما)، مزید  معلومات کے لئے صفحات 147 سے 152کی  طرف مراجعہ  کریں.

 



 
صارفین کی تعداد: 3557


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 
حسن مولائی کی یادیں

سو افراد، سینکڑوں افراد، ہزاروں

وہ لوگ جو چند گھنٹوں پہلے جمرات جا رہے تھے تاکہ رمی جمرات کا فریضہ ادا کرسکیں اب تولیہ اوڑھے سو رہے تھے۔ جب جنازے ختم ہوئے، تو مجھے سمجھ نہیں آئی کہ مجھے کہاں لوٹنا چاہئیے۔ اچانک میرے پیروں نے کام کرنا چھوڑ دیا اور میں نے پہلی مرتبہ وہاں گریہ کرنا شروع کردیا۔ واپس پلٹ کر ان سفید پیکروں کو دیکھنا شروع کیا۔ پوری سڑک جنازوں سے سفید ہوچکی تھی۔ ایک جوان مرد کی آواز پر چونکا جو میرے ساتھ کھڑا تھا اور میرے پیروں کے سامنے چپلیں رکھ رہا تھا۔
حجت الاسلام والمسلمین جناب سید محمد جواد ہاشمی کی ڈائری سے

"1987 میں حج کا خونی واقعہ"

دراصل مسعود کو خواب میں دیکھا، مجھے سے کہنے لگا: "ماں آج مکہ میں اس طرح کا خونی واقعہ پیش آیا ہے۔ کئی ایرانی شہید اور کئی زخمی ہوے ہین۔ آقا پیشوائی بھی مرتے مرتے بچے ہیں

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔

شدت پسند علماء کا فوج سے رویہ!

کسی ایسے شخص کے حکم کے منتظر ہیں جس کے بارے میں ہمیں نہیں معلوم تھا کون اور کہاں ہے ، اور اسکے ایک حکم پر پوری بٹالین کا قتل عام ہونا تھا۔ پوری بیرک نامعلوم اور غیر فوجی عناصر کے ہاتھوں میں تھی جن کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں تھا کہ وہ کون لوگ ہیں اور کہاں سے آرڈر لے رہے ہیں۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔