مشہد کے تھیٹر کی تاریخ کے زرین صفحات

غلامرضا آذری خاکستر
مترجم: جون عابدی

2015-09-21


آئینی انقلاب سے اسلامی انقلاب تک مشہد کے  تھیٹر کا  تجزئیہ

کتاب ’’ تاریخ تئاتر مشهد از انقلاب مشروطه تا انقلاب اسلامی‘‘ علی  نجف زادہ (۱)کی تحریر ہے جو  مشہد کے سلسلے میں تازہ نشر  ہونے والی کتاب ہے۔ یہ کتاب  ۱۳۹۳  میں انصار  پریس  سے شائع ہوئی۔ جدید طرز کی تھیٹر کی تاریخ مشہد  میں قاجار کے زمانہ میں پہونچتی ہے علی نجف زادہ یونیورسٹی  کےپروفیسر اور  مشہد کی تاریخ  کے محقق جدید  طرز  تھئیٹر کے مشہد  میں  وارد ہونے کے سلسلے میں اس  منسجم  اور  مستند کے مقدمے میں لکھتے ہیں : ’’آئینی انقلاب کےبعد مذہبی اور سنتی نمایش کے ساتھ ساتھ روحوضی جیسےتھئٹر کے  شرائط  بھی فراہہم ہونے لگےاور مشہد میں جدید طرز کے تھیٹر کے  قیام میں روسیوں  کا  بہت اہم کردارتھا۔ خصوصا  قفقاز  کے مہاجرین نے قفقازمیں موجیوں  کی انجمن تشکیل  دیکر  اس کو   وسعت دینے  اور  ناٖفذ کرنے میں اہم کردار ادا کیا تھا ۔ قاجاری حکومت کے خاتمے اور پہلوی حکومت کے برسر کار  آنے کے بعد روسی سوشلسٹ ریاستوں کا مجموعہ  (سویت  اتحاد)میں  ایرانی مہاجرین کے  سلسلے میں سیاست میں تبدیلیاں پیدا ہوگئیں ۔انمیں  سے اکثر   ایران اور  مشہد واپس  آنے  پر مجبور ہوگئے۔ اگرچہ رضاخا ن کا زمانہ تھٗیٹر کے لئے میدان فراہم کرنے میں بہت مددگار نہیں تھا۔لیکن اس کے باوجودان مہاجرین اور ان کی اولادوں نے مشہد میں شہریور۱۳۲۰ کے بعدسےمشہد کے تھیٹر کےسلسلے میں بہت اہم کردار ادا کیا۔ اژدری،پیراستہ اور ابراہیم حلمی۔۔۔ کے خاندان  منجملہ ان مہاجرین میں  سے تھے۔‘‘(۲)

مصنف نے مشہد کے تھئیٹر کے سلسلے میں کوششیں کرنے والے مختلف گروہوں کا تجزئیہ کرتے ہوئےآذربائیجان کے مہاجروں، روس اوربرطانیہ کی قونصلیٹ(قونصل خانہ) اور ریڈیو مشہد(۳) کے افتتاح کو  مشہد کے  تھئیٹر کی تقویت کا  عنصر  بتایا ہے اور  انکا خیال ہے :’’چالیس  کے دہائی  کے آخر   اور  مشہد  میں  تھئیٹر  تعلیمی  مرکز  خراسان کی    تشکیل کےلئے  محمد علی  مقدم  کی ماموریت  کی ابتدا سے  ہی   تھئیٹر  سے  متعلق  گروہوں نے  منظم   فعالتیں  شروع  کردیں اور مشہد کے  تھئیٹر  کی  رونق کا  دور شروع ہوگیا ۔۔۔

لطفی  مقدم کا دور  منصور همایونی، فریدون صلاحی، داریوش ارجمند و داوود کیانیان ایکٹنگ اور ہدایت  کاری  اور  رضاصابری کی   تحریر کازمانہ مشہد  کے  تھئیٹڑکا     سنہرا  دور  تھا۔ اس دوران   رودکی، پارت، آپادانا، نیما و آرش تھئیٹر کے  گروہوں  نے  بہت  کامیاب  ڈراموں  کے مناظر   پیش  کئے  تھے ۔‘‘(۴)

 

ماخذوں کا تجزئیہ

  آج کے  تاریخ  کے   اکیڈمک اور  جامعاتی  محققین  کی  کوشش  ہوتی ہے کہ  اپنی تحقیقات میں   ماخذوں پر ان کی مکمل  نگاہ ہو۔اور پہلے  موضوع کے تمام  پہلؤوں  کا   تجزئیہ کرلیں  اور  اس کے بعد   کتاب لکھیں ۔اگر ہم  مشہد  کے تھئیٹر کی  تاریخ کے  ماخذوں پر نکاہ  کریں   تو ا ن کو  ہم   ساتھ  حصوں مین   تقسیم کرسکتے ہین۔

۱۔عمومی  ماخذ:مصنف نے  اپنی   تحقیقات  کی تکمیل کے  پیش نظر  عام   کتا بوں  سے استفادہ  کیا ہے ۔ان مین  سے  یہ کتابیں  بطور نمونہ ہیں : ’’سرگذشت ما فروغ زندگی‘‘ تحریر عزیز الملوک آذرخشی(شیبانی)،’’ قیام کلنل محمد تقی خان پسیان ‘‘تالیف علی آذری، خاطرات عارف قزوینی، انگیزه، خاطراتی از دوران فعالیت حزب توده تحریر غلام حسین بقیعی، ’’جنگ جهانی در ایران‘‘، تحریر سر کلارماونٹ اسکرین مشہد میں قونصل جنرل برطانیہ وغیرہ ...

۲۔خصوصی  ماخذ:کتاب’’تاریخ   تئاتر مشہد ‘‘ کو  مستند اور موثق  بنانے  کے لئے  خصوصی  ماخذوں کا  استعمال  کرنا  مصنف  کی  کوششوں کی  نشاندہی  کرتا  ہے ۔ان  کتابوں میں سے بعض مندرجہ ذیل  ہیں : ’’گزیده اسناد نمایش در ایران‘‘ مؤلف: علی میرانصاری و سید مهرداد ضیایی، ’’گزیده اسناد نمایش در ایران‘مؤلف:مسعود کوهستانی نژاد، کتاب ’’هنر نمایش در ایران تاسال 1357‘‘ تحریر تاجبخش فنائیان، ’’تئاتر کودکان و نوجوانان‘‘تحریر داوود کیانیان، ’’بنیاد نمایش در ایران‘‘ تالیف ابوالقاسم جنتی عطایی، ’’سیری در تاریخ تئاتر ایران‘‘از قلم مصطفی اسکویی، ’’صد سال سینما در مشهد‘‘ تألیف حسین حسین‌پور وغیرہ...۔ ان کتابوں مین   سے  منصور ہمایونی  کی  کتاب’’سرگذت تئاتر  در مشہد‘‘،اور اصغر  میر خدیوی کی کتاب’’سی سال  پشت صحنہ  تئاتر‘‘مشہد کی  تھئٹر   کی تاریخ  سے  مخصوص  ماخذ ہین ۔

ایک  دو  ہفتہ   پہلے  صدسال  تئاتر مشہد کے عنوان  سے   دوجلدوں پر  مشتمل   حمید رضا  سہیلی کی  ایک  کتاب   منظر عام پر   آئی  ہے جس میں  انہوں  نے  مصنف کی  کتاب سے  استفادہ   کیا ہے ۔خوشوقسمتی سے  مشہد کی  تھئیٹر کی  تاریخ سے متعلق  بہت سے  قابل  توجہ   کتابیں    منظر  عام   پر آچکی   ہیں ۔بعض  کتابیں  ان  لوگوں کے توسط سے لکھی گئی  ہیں   جو خود  تھئیٹر کے ماہرین  تھے ۔اس  سلسلہ میں مصنف    کا خیال ہے:’’اب تک   جن  محققین اور   مصنفین نے تھئیٹر کی  تاریخ کے سلسلہ میں   قلم  اٹھایا اور  مشہد  کی  تھئیٹر کی تاریخ کے   سلسلہ میں   کتابیں لکھی ہیں  ان  کے پاس   علمی   تاریخ   نویسی  کا  تجربہ نہین تھا ۔اور انہوں  ان تحریروں میں تاریخ  نویسی  کے  فن اور ان وسائل کو  بخوبی  اجرا  نہیں  کیا ہے ۔اسی  وجہ سے  انہوں  نے     موجودہ  ماخذوں   کی کم    اطلاعات  حاصل  ہوسکیں اور مشہد  کے سماجی    اور رتاریخی   تبدیلیوں    کے  تجزئیہ میں  ان کا استعمال کیا ۔ اس  کی  کمی کا نتیجہ   یہ ہوا   کہ   مشہد کی تھئٹر کی  تاریخ  کے کم سے  نصف صدی  سے چشم پوشی ہوگئی ۔ اور  اس  تحقیق کا  نقص  یہ ہے کہ  مصنف  نے  اپنے زمانہ سے  قریب واقعات کو    تھئیٹر   کی   فعالیت  کے قدیمی   دور کی   ابتدا  قراردےدیا ۔اور اس قسم کی  کمزوریاں   عام  طور سے  پشہ ور  مصنفین  کے  ذریعہ   پیدا  ہوتی ہین ۔وہ  تاریخ   نویسی  کے کام مین آنے  سے  پہلے چونکہ خود  تھئٹر کے کام  میں  تھے  لھٰذا  انہوں  نے  تاریخی   طریقہ  کا ر اپنانے کے بجائے  اپنے  تجربہ اور دلچسپی  کی بنیاد  پر  قلم  اٹھالیا لکھنا شروع کردیا ۔‘‘(۷)

۳: زبانی تاریخ :کتاب  ’’تاریخ  تئاتر مشہد ‘‘ا کاایک   نقص زبانی   تاریخ   پر سنجیدگی سے غور  نہ کرنااور مشہد کے تھئیتر  میں   تحریف کرنے والے افراد کی یادداشت سے    استفادہ  کرنا ہے ۔افسوس کہ  انہوں  اس سلسلہ میں  بہت کم  انٹرویولئے  اوراس مسئلہ پر زیادہ  توجہ نہیں  دی ہے ۔اس کتاب  میں   زبانی  تاریخ  کے ماخذ کے  عنوان سے  تھئیٹر کے  اداکاروں میں سےصرف  چار افراد  محمدعلی لطفی مقدم، حاج حسین عاملی، تیمور قهرمان و آقای شهناز مبشر کے  ہی  انٹرویو ہیں ۔ مشہد  کے تھئیٹر کی  زبانی  تاریخ   کی منصوبہ بندی  حالیہ  سالوں  مین آستان قدس  رضوی  کے  زبانی تاریخ کے  دستاویز  کے   منتظم کے ذریعہ  ہوئی ہے ۔اور   مصنف   صرف اس  کے ایک  پہلو  پر  نگاہ ڈالی ہے اور  اس سلسلہ می  موجود  دیگر  ماخذوں   پر توجہ نہیں دی ہے ۔

۴۔پریس:کتاب  کی  اطلاعات کا  ایک  بڑا حصہ  یادداشت،معلومات،خبروں اور ان کی تجزئیات پر  مشتمل ہیں  جو  مشہد   کے اخباروں  مین شائع ہوئے تھے ۔مصنف  نے    چند سالوں مین  شہر  مشہد  کے بعض   ادارون میں    ہر روز  پیش  آنے والےواقعات  کو  اخبارات کی   بنیاد   پر جمع کیاہے  اور  کوشش کی ہے  اخبارات کی  پورٹ کے  کے مطابق تاریخی  کتابوں  کی  تحریرکریں ۔ پرنٹ  میڈیا  اگرچہ  تاریخی    تحقیقات مین   تاریخ ،مقام اور ناموں کے سلسلہ میں    بہترین  اور  مددگار  ثابت ہوسکتی ہے لیکن ایک  مستقل  تحقیق  دیگر  ماخذوں  ،دستاویز  اور زبانی تاریخ  کے ذریعہ  ہی مکمل ہوتی ہے ۔کتاب   میں  مصنف نے مندرجہ ذیل مشہدی  اخبارات کا استعمال کیا ہے: آزادی، آشفته، آژنگ، آفتاب شرق، آتش شرق، آیندگان، اخبار دانشگاه مشهد، اطلاعات، ایران نما، بهار، توس، تماشا، تیاتر، چمن، جام جم، حبل المتین، خراسان فرهنگی، خوشه، خورشید، فرشیدی، دادگستران، راستی، زرین، نامه فرهنگ خراسان، فکر آزاد، سوره، شهامت، شرق، طوس، عصر جدید، کیهان، ناطق خراسان، نبرد ما، نوای خراسان، نوبهار، نور ایران، نور خراسان، هیرمند، رعد و نمایش‌.  

مجموعی طور  پر  مصنف نے   کتاب میں   تقریبا  ً ۵۰ اخبارا ت  کا براہ راست استعمال کیا ہے ۔جو   ایک  کامل   تحقیق کے سلسلہ میں  ان کی کوششوں  اورزحمتوں  کی   علامت ہے ۔موجودہ  کتاب   تجزئیات کا  نہ  ہونا   اس  کتاب کی  بڑی مشکل ہے  جو  قارئین کو  مایوس کرتی ہے ۔کیونکہ   کتاب   مین   صرف   اخبارات سے  اطلاعات کو  جمع کیا  گیا ہے اور مصنف    بغیر   تجزئیہ اورتحلیل  کے ان   رپورٹوں کو پیش کرنے  پر اکتفا  کیا ہے ۔

۵۔دستاویزات:آقای  نجف زادہ  کی اس  کتاب ک ے دیگر  ماخذوں  مین   سے   مشہد کے تھئٹر سے   مربوط   چند  دستاویزات  ہیں ۔انہوں نے   کز اسناد آستان قدس رضوی و کتابخانه ملی کے  محافظ خانہ  میں  موجود  ان ستاویزات کو  ماخذ کے  طور  پر استعمال کیاہے ۔

۶۔مضامین: علی نصیریان، علی اکبر کوثری، مهدی غروی، نیایش‌پور حسین، شعله پاکروان جیسے  مصنفین کے مضامین کا حوالہ   اس  کتاب کے دیگر   ماخذوں مین سے ایک ہے ۔  کتاب  مین  ذکر ان  مضامین  کا  تجزئیہ  یہ بتا تا  ہے کہ ان مین سے  صرف ایک مضمون  مشہد سے  مربو ط ہے (۸) دیگر  جن  ۱۷ مضامین کا  تذکرہ کتاب میں   ہے وہ  صرف   عام  باتوں اور  شخصیتوں سے  متعلق ہیں ۔

مذکورہ موارد کے علاوہ مصنف   نے کچھ معلومات   انٹرنٹ   سے حاصل  کی ہیں  اور یہ  اس  بات  کی نشاندہی کرتی ہےکہ  مصنف تمام  قسم کے ماخذوں   اور سہولیات کو  استعمال کرنے  کی کوشش کی ہے۔اور  ایسا  معلوم  ہوتا ہےکہ اگر نجف زادہ صاضب نے  ماخذوں کے سلسلہ مین زبانی تاریخ کا  مکمل  استعمال کیا ہوتا تو یقینی  طو ر  پر یہ کتاب آئینی  انقلاب سے  اسلامی   انقلاب  تک  مشہد  کے تھئٹر  کی  تاریخ کے سلسلہ میں ایک  مکمل  کتا ب ہوتی۔

 

کتاب کا  طرز تحریر

کتاب  تاریخ   تئاتر  مشہد  ایک  مقدمہ اور ایک  پیش  لفظ  پر   مشتمل ہے  جس میں    مصنف   نے      مشہد  میں   تھئیٹر کے  میدان مین   ہونے والی  تحقیقات کی صورت حال اور زمانہ  قاجار مین تھئیٹر کی  توسیع کے  رکاوٹوں   اور  چیلنجوں کے سلسلہ میں   گفتگو کی  ہے۔ اس کے   بعد کتاب کے  مطالب کو  پانچ  فصلوں میں  تقسیم  کیا ہے پہلی فصل مین    مشہد  میں  آئینی انقلاب سے  شہریور ۱۳۲۰  تک    کے   تھئٹر کے  موضوع کو   دو عام   عنوان  ’’ تئاتر مشهد در دوره قاجار و تئاتر در دوره رضا شاه‘‘ کو تاریخی  موضوعات کے  ساتھ  بیان کیا ہے ۔

قاجاری دور میں تھٗیٹر سے متعلق مندرجہ ذیل  عناوین کو  کتاب میں ذکر کیاہے:

مشہدمیں قفقاز کی من موجیوں کی انجمن،قمر لہنسکی کا گروہ،مشہد کےتھئٹر میں  حاجی  بکوف کا  مقام، تھئیٹڑ مین اعتبار السلطنہ  ھال  کی  اہمیت ،ارکان حرب  ہال اور فوجیوں کا  تھئٹر ،کرنل  محمد  تقی خان  پسیان  کے زمانہ میں   مشہد کا  تھئٹر۔

مصنف نے  مذکورہ  موضوعات  کی  تحقیق  کے ضمن میں  مشہد  میں  تھئیٹر کے میدان مین  فعالیت کا  تجزئیہ  کیا ہے ۔پھر    پہلوی  کے   زمانہ  کےاہم مسائل  کا  تذکرہ  کیا کہ  اس مین   تھئٹر  نے کیسے قدم رکھا۔

مصنف کی نگاہ میں رضا شاہ کے زمانہ کے   اہم  عناوین  یہ ہیں: کا  مشہد کےتھئٹر میں اژدری خاندان کردار،کمال الوزارہ اور خواتین کا پہلا تھئیٹر،سید علی آذری  اور خواتین کے لئے  پہلا عام تھئٹر  اور عما د عصار پریشانی  سے نمائیش نویسی تک،اس کے نجفف زادہ صاحب نے پہلوی اول  کے دور میں مشہد میں تھئٹر کے ہال کی تاریخ کو بیان کیا ہے ۔اور شیرو خورشید  تھئٹر  ہال،تماشہ خانہ نادری،ہوٹل پارس ہال،دبیرستانی ہال  اور اروسی۔۔۔۔ وغیرہ  ایسے  ہال  ہین جن  کے بیان پر مصنف  نے توجہ دی ہے ۔

کتاب  کی دیگر  موارد  جن پر  غور کیا   گیا ہے  وہ  کتاب   میں  مناسب  فصل  بندی  کا  نہ ہونا ہے،اس  مسئلہ  پر  مصنف  نے گاہ  نہیں کی ہے۔ایسا   لگتا ہےکہ چونکہ  کتا ب کا موضوع   ایک  خاص  مسئلہ اور  محدود وقت سے تعلق  رکھتا ہے  اس لئے  اس  فصل  کو  مرتب  کرنے  کی  ضرورت  ہی محسوس نہیں ہوئی۔اور صرف   کتاب کے مطالب کی   تریتیب  ہی کافی تھی ۔

کتاب   تاریخ  تئاتر  مشہد کے دوسری فصل  مین  ۱۳۲۰ سے ۱۳۲۸ ش تک  تھئیٹڑ کےسلسلہ میں  ہونے  والی تبدیلیوں کا تذکرہ کیا گیاہے ۔اس  فصل  مطالب سات    جدا   موضوعات  پر مشتمل ہین ۔اور  ویہ درج ذیل  ہیں شامل کے قبضہ کے دوران  مشہد کا تھئٹر،مشہدکے ااماتیک  مین شوقین   فنکاروں کی انجمن،سرخ  فوج اور  مشہد کی تھئٹرل   انجمن ،مشہد  مین   پولنڈی  تھئٹر ۔اور   اس کےشہریور  ۱۳۲۰ ش کے بعد  کے گرہوں اور   چیرٹبل   انجمنوں کے کردار کے  بارے مٰن گفتگو کی ہے۔اور   ان میں  سے اہم   انجمنیں   یہ ہیں :طبیبوں کی  انجمن ،انجمن  پروین اور  فنکاروں کی ایران  فلم   انجمن ، مشہد  مین  جمہوری  گروہ  کی  نمائیشیں ۔

اس  فصل میں  مصنف   مشہد کے تھئٹر کے سلسلہ مین  تحقیق کےساتھ  شہرویور ۱۳۲۰ سے ۱۳۲۸ تک  کے  واقعات کو  بیان کیا ہے ۔لیکن  بعض   ایسے  مطالب  ہیں   جن کا مذکورہ  تاریخ سے  کوئی  تعلق  نہیں ہے ۔مثلا  گروہ  ہنرستان  تھئیٹر  جو ۱۳۳۵۔۳۶ سے   مربوط ہے ۔ڈیوڈ سن کی  تربیتی   کلا س  کا  تعلق  ۱۳۳۴ سے ہے ،گروہ  پیشاہنگان کا  تعلق ۱۳۳۷ ش سے ہے۔یونیووسٹی کے  تھیٹر  گروپ  کا تعلق ۱۳۳۸ سے ہے ۔اور  ان  تمام  کو  ۱۳۲۰سے ۱۳۲۸ کے   کودوران    کے  گروہ میں شامل کرکے  تجزئیہ کیا  گیا ہے ۔

تیسری  فصل میں   مصنف نے  مشہد کے   تھیئٹر ہالوں کی  بنیاد  کی تاریخ   بیان  کی  ہے اور  قومی  تھئیٹر اور  گلشن  تھئئٹر کا تجزئیہ  کتاب مین  پیش  کیاہے ۔

چوتھی فصل مین  ۱۳۲۸ سے ۱۳۴۸  تک   کے  مشہد  کے تھیٹر گروپ  کا  تذکرہ  کیا   ہے ۔انہوں نے  مشہد کے  تھیٹر  میں   مشہد  ریڈیو کے قیام کے سلسلہ میں   مطالب  جمع کرنے کے بعد  مشہد  کے تھئیٹر  کےسلسلہ مین  اس کے   کردار  کو  بیان کیا اور حسن  رضیانی اور میرخدیوی  جیسے  فنکاروں کے سلسلہ مین   خاص  طور  پر گفتگو کی ہے ۔اس   کے  خراسان  ثقافتی   ادارے مین   تھئٹر کے دفتر کے قیام  کے سلسلہ میں  گفتگو کی ہے ۔اس  فصل مین    خیام، نادر، جوانان، شهزاد، آپادانا، پارت، کانون بانوان و دوشیزگان اور آرش  جیسے  تھئٹر  گروپ کی کا  تجزئیہ  پیش کیا ہے ۔

اس کتاب  کی آخری  فصل کے  مطالب ۱۳۴۸ سے  ۱۳۵۷  تک   کوواقعات  پر  مشتمل ہیں ۔اس  فصل میں  مصنف نے    نیما، رودکی، توس، تھئیٹر پارس جیسے فیسٹیول کے انعقاد اور تھیٹر گروپوں اور  ۱۰ صوبائی  سطح   کےتھئیٹر  فیسٹیول  کا   تذکرہ  کیا ہے۔

مشہد میں صوبائی  ثقافت و فن کا پہلا  فیسٹیول ۱۳۴۷ش میں شروع ہوا تھا۔اس   فیسٹیول میں مرکز  تھیٹر کے   آرٹ  اسٹوڈنٹ کے ذریعہ  دونمایش  ناموں  کا  اکرا کیاگیاتھا ۔نمایش نامہ  پنجہ کو  منصور  ہمایونی نے  تحریر اور ہدایت کاری  کی تھی اور دست بالای دست کو غلا م حسین  ساعدی  نے لکھا تھا جس  کے ہدایت  کات  منوچہرخادم  زادہ  تھے  جنہیں   اسٹیج   پر دیکھایا  گیا تھا۔(۹)

اگر   مصنف اسلامی  انقلاب میں   مشہد کے   تھئیٹر کے کردارکے سلسلہ مین  بعض مطالب کو خاص  طور پر بیان کرتے  تو تاریخ  کو  واقعات اورتاریخ  وار  واقعات کےبیان سے ہٹ کر  مصنف   کا  نظریہ اور  ان کی  توجہات کچھ خاص اور اہم   واقعات کی طرف ہوجاتیں ۔کیوں کہ   سعید  تشکری  اپنی  جدید  کتاب میں ’’مفتون و فیروزہ ‘‘ کے  عنوان  سے مشہد کے اسلامی   انقلاب سے  پہلے کے حالات کو  مشہد کے ایک  گروہ  کی  فعالیتوں  کی داستان  کی وضاحت  کے  ساتھ  یوں   بیان  کرتے ہین :’’اس زمانے کی درجہ اول  کی  شخصیات کو  ایرانی  معاشرہ  کی  مذہبی روشن  فکر شخضیات میں  شمار کیا جاتا تھا۔اور یہ افراد ڈاکٹر شریعتی کے پیروکار تھے۔ ابوذر تھیٹر  گروپ جو  ایران میں مذہبی تھیٹر پروگرام بنانے لگا تھا اس کا تعلق  بھی اسی طبقہ سے تھا ۔اوراس  مذہبی  روشن فکری کی تحریک نے  تھئیٹر  کے کاموں بھی حمایت  حاصل کرنا شروع  کردی۔ میں نے اس تبدیلی  کی  منظر کشی ناول  کے پیرایئے میں   ۱۵۰۰ صفحات میں   کی   ہے ۔یا دوسرے  لٖفظوںمیں  یہ ناول   نہ  بتانےکی کوشش کرتی ہے کہ  انقلاب سے پہلے   فن  اورفنکاری کی  کیا  تعریف تھی اور  تھئیٹر  انے  سادہ اور  صحیح   طریقہ  سے کس  طرح  اس  فن کی  اشاعت کی  ہے ۔‘‘(۱۰)

زبانی  تاریخ  کے ماخذوں کے سلسلہ مین مصنف نے  سعید تشکری، محمد برومند، رضا جوان کے محاظ خانہ اورآستان قدس کے دستاویزاتی مرکز  کے زبانی تاریخ کے  شعبہ می محٖفوظ اںٹرویو کا  استعمال نہین کیا ہے اوریہ  امر اس کتاب  کے نقائص  مین  شمار ہوتاہے ۔بہر حال ان  کمیوں سے قطع  نظر  کتاب  تاریخ  تئاتر  مشہد ،مشہد  کی عصری  تاریخ کے سلسلہ مین ایک  با ارزش  کتاب ہے ۔ اس  کتاب  مشہد میں   جدید  تھئیٹر  کی ستر سالہ   تاریخ  کے نشیب  وفراز کو بیان  کیا گیا ہے ۔اس  قسم  کی  کتابوں کی اشاعت  مستقبل مین  مشہد کی  عصری تاریخ کے سلسلہ میں   تحقیق کرنے  والے   کے  لئے  مددگار  ثابت ہوگی  کہ  اس سلسلہ  پیشہ ورانہ نقطہ  نگاہ  اسے  اس کے تمام  پہلوؤں کا تجزئیہ  کرسکیں ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۔اب تک اس  مصنف کی  لکھی   ہوئی  کتابیں’’  گروه‌های مهاجر به مشهد از صفویه تا کنون‘‘ اور ’’تاریخ نظمیه بیرجند در دوره قاجار‘‘  شائع ہوچکی ہین ۔

۲۔ نجف زاده، علی. تاریخ تئاتر مشهد از انقلاب مشروطه تا انقلاب اسلامی. مشهد. انصار. 1393.ص13
 

۳۔۱۴ اردیبہشت،۱۳۱۹ بروز بدھ   شام   ۷ بجے  رضا  شاہ  کی موجودگی میں   صدائےتہران کو   نشر  کرنے  والی   مشین(یعنی تہران ریڈیو)   کووسعت دینے کا  قانون   ناٖفذ کیا گیا ۔ اور  تہران  ریڈیو کے افتتاح  کے  ۹سال کےبعد   مشہد  ریڈیوکا   قیام  عمل میں  آیا ۔ریڈیو مشہد کے  پروگرام روزانہ  شام  ۶سے آٹھ   بجے  تک   5/36   جو  8200 کلو فی سیکنڈ کے نشر کے مساوی ہے  کی فریکوینسی   سے  نشر ہوتے  تھے۔اس  ریڈیوکا آغا ز   خراسانی  فوج  کے  افسروں کے  کلب سے ہوا۔اس ریڈیو اسٹیشن کے  پاس  وسائل کے طور   پر ایک کمرہ تھا   جس کی درودیوار کو  فوجی خدمات انجام دینے والے افراد کے کمبلوں سے  بند کیا گیا تھا   تاکہ  باہری  آواز اند  نہ  آسکے ۔اور اس کے تکنیکی   وسائل میں  ایک  مائیکرفوں اورایک  رکارڈر تھا۔

صادقی باجگیران،‌‌ها‌شم . مرزداران دامنه کیسمار (روایتی از کردهای شمال خراسان) مشهد: واسع: دامینه.1388. ص595
 

۴۔ نجف زاده، علی. تاریخ تئاتر مشهد ص14
 

۵۔  ۲۵  تصویری صفحات  پر مشتمل کتاب سرگذشت تئاتر در مشهد سال 1348 میں  ادارہ فن و ثقافت  خراسان کی کوششوں سے شائع ہوئی۔

۶۔۳۳۶  تصویری صفحات کی یہ کتاب ۱۳۷۲ میں  تمدن  پریس کے توسط سے  مشہد میں  طبع  ہوئی۔

 ۷۔ نجف زاده، علی. تاریخ تئاتر مشهد ص 17

۸۔ زمانی زوارزاده، محمد رضا. نمایش در مشهد. فصلنامه تئاتر. شماره 4 و 5 سال 1368

۹۔ نجف زاده، علی. تاریخ تئاتر مشهد .ص 348
۱۰۔ مهر. نیوز  ایجنسی جمعہ ۷ شهریور ۱۳۹۳. نیوز Id: 2359362



 
صارفین کی تعداد: 3527


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 
حسن مولائی کی یادیں

سو افراد، سینکڑوں افراد، ہزاروں

وہ لوگ جو چند گھنٹوں پہلے جمرات جا رہے تھے تاکہ رمی جمرات کا فریضہ ادا کرسکیں اب تولیہ اوڑھے سو رہے تھے۔ جب جنازے ختم ہوئے، تو مجھے سمجھ نہیں آئی کہ مجھے کہاں لوٹنا چاہئیے۔ اچانک میرے پیروں نے کام کرنا چھوڑ دیا اور میں نے پہلی مرتبہ وہاں گریہ کرنا شروع کردیا۔ واپس پلٹ کر ان سفید پیکروں کو دیکھنا شروع کیا۔ پوری سڑک جنازوں سے سفید ہوچکی تھی۔ ایک جوان مرد کی آواز پر چونکا جو میرے ساتھ کھڑا تھا اور میرے پیروں کے سامنے چپلیں رکھ رہا تھا۔
حجت الاسلام والمسلمین جناب سید محمد جواد ہاشمی کی ڈائری سے

"1987 میں حج کا خونی واقعہ"

دراصل مسعود کو خواب میں دیکھا، مجھے سے کہنے لگا: "ماں آج مکہ میں اس طرح کا خونی واقعہ پیش آیا ہے۔ کئی ایرانی شہید اور کئی زخمی ہوے ہین۔ آقا پیشوائی بھی مرتے مرتے بچے ہیں

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔

شدت پسند علماء کا فوج سے رویہ!

کسی ایسے شخص کے حکم کے منتظر ہیں جس کے بارے میں ہمیں نہیں معلوم تھا کون اور کہاں ہے ، اور اسکے ایک حکم پر پوری بٹالین کا قتل عام ہونا تھا۔ پوری بیرک نامعلوم اور غیر فوجی عناصر کے ہاتھوں میں تھی جن کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں تھا کہ وہ کون لوگ ہیں اور کہاں سے آرڈر لے رہے ہیں۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔