کتاب جولائی ۸۲

محمود فاضلی
مترجم: جون عابدی

2015-09-19


’احمد متوسلیان،سیدمحسن موسوی، کاظم اخوان اور تقی رستگار۔ لبنان میں ایرانی سفارت  خانہ کے ان چار افراد کو ۱۳۶۱ میں عراق کی طرف  سے  ہمارے  ملک  پر تھونپی ہوئی جنگ کے دوران اسرائیلی عناصر کیطرف سے  اغوا کر لیا  گیا تھا۔ ان کی  کھوج میں  لگی ہوئی   انجیسیوں کے مطابق  ان کے  اثرات   اب بھی   موجود ہیں۔ حمید   داؤدآبدی  نے  اپنی  کتاب ’’جولای ۸۲‘‘ میں ان    چار  ایرانی  سفارتی  افراد   کے   بارے میں  لکھاہے   جنہیں    ۳۲ سال  پہلے اغوا کر لیا  گیا تھا اور وہ اب بھی   صیہونی  قید   میں  ہیں ۔یہ کتاب ۵۲۴ صفحات  پر مشتمل ہے ۔

حمید   داؤدی  نے  اس  کتاب مین  ۱۴ تیر  ۱۳۶۱(۱)سے    ۱۳۸۴  کی  گرمیوں  تک   تمام اخبارات   تک  کی  تمام خبروں اور  واقعات کو  جمع کرنے کی  کوشش  کی ہے ۔

یہ  کتاب ناشر کی  باتوں اور  مصنف  کی  یادداشتوں   پر  مشتمل ہے  اور  کتاب کے ۱۳ ویں صفحہ  سے ’’روز شماری   گروگانگری ‘‘کے  عنوان کا  آغاز  ہوتا اور  صفحہ  ۳۰۲  تک   جاری   رہتا ہے ۔صفحہ  ۳۰۳  سے  اس کتاب  کے ملحقات  کو  بیان  کیا  جاتا  ہے جس میں  ۴۷  صفحات  ان ہی   ملحقات کے ہی  جن کی  طرف  کتا  ب میں  اشار ہ کیا  گیا ہے ،اور یہ سلسلہ  ۴۶۷ تک   جاری  رہتا ہے ۔۴۶۹ سے  ۵۲۴  تک کے صٖفحات     میں  تصویروں کو  پیش کیا گیا ہے ۔

اس  کتاب کے مقدمہ  میں  آیا ہے کہ ’’اس کتاب میں اب تک  اس   حل   نشدہ    معمے کو  مورد تجزئہ  قرار دیا  گیا  ہے جس  کو تقریباً صدی کا  چوتھایئ  حصہ   گذر   چکا ہے ۔ یہ  داستان   جمہوری اسلامی  ایران   کے ان چار  شہریوں  کے  اس  مبہم   اور  نامکمل  سفر   کی ہے جو گرمیوں کی    تپتی   دوپہر میں    طرابلس   ۔بیروت کے  ساحلی     روڈ سے  اس  ملک کے مقبوضہ  دارالسلطنت کی  طرف   جارہے  تھے‘‘۔

اس  کتاب کے  ایک حصہ میں  آیا ہے ’’۔۔۔ میں   سنا ہے کہ گذشتہ ایلی  جبیقہ   کوبیروت میں  قتل کردیا  گیا ۔اور  اس نے مرنے  سے  پہلے   ’’الحیات‘‘ کو   انٹرویو دیتے  ہوئے  کہا   تھا کہ  لبنان   میں    اغوا کئے  گئے  چار  ایرنیوں  کو  احتمالااسرائیل منتقل کردیا گیا ہے۔‘‘ الحیات اخبار کے مطابق  ایلی لبنان کی   منحل فوج کے حفاظتی  شعبہ کا   ذمہ دار  تھا ،وہمزید  کہتا ہے :’’میں نے منحل  فوج کے  کمانڈر   سمیر  جعجع  سے  سنا تھا   کہ ان  چار ایرانی  سفارت خانہ  کے افراد وکواغوا کرکے  مشرقی  بیروت  لیجایا گیا تھا ا ور  وہاں  سے  بھی  ہٹا  کر  باہر  بھیج دیا  گیا ہے۔خانہ  جنگی   کے دوران   جعجع  کے  پا س  متعدد  قید  خانہ  تھے  جس میں   فوج کے مشکوک اور  فعال  افراد کو   رکھا جاتا  تھا۔‘‘اس  خبار   نے  لکھتا ہے :’’وہ  میلیشیا   کے آخری   کمانڈر  سمیر  جعجع کے اس   بیان  کی  جسمیں  پہلے کہا تھا  کہ  ایرانی  سفارتی افراد کو   جیقہ کے سپرد کیا گیا  ہے  کی تکذیب   کرتےہوئے کہتاہے:’’میں اغواشدہ  ایرانیوں کو  دیکھا   ہی  نہیں  وہ لوگ  میرے   زیر نظر تھے ہی  نہیں ۔‘‘

داؤدآبادی   ان   چار  سفارتی   افراد کے  اعزاز میں   منعقد  ہونے والی  تقریبوں کے سلسلہ می  کہتے ہیں :’’۔۔۔بہرحال  اس  منظر  نامہ  کو ایک جگہ  سے  کم  کیا جائے ۔یا ان کی   شہادت  کے بارے میں   کہاجائے  یا  قید کے بارے میں؛لیکن   ہم  ہر سال ایک  نئی  کہانی اور  ایک جدیدتماشہ کا مشاہدہ   کرتے ہیں ۔ آج  می  ٹی وی  دیکھ  رہا  تھا ،اس  مین  بڑی  دلچسپ  بات   تھی ؛ انکو یا د آیا  کہ چار  افراد  اغوا  کئے   گئے  تھے۔مصطفیٰ دیرا نی  کا  لبنا ن میں  ایک  انٹرویو نشر ہوا جس میں   انہوں   نے  بہت   دلچشپ بات  کہی ۔دیرانی کہرہے تھے:’’میں قید مین  تھا   ایک  اسرائیلی   پوچھ  تاچھ  کرنے  والا  آیا اور  اس نے  مجھ سے  کہا ’’تمہاری شکل   سید  محمد  محسن موسوی سے ملتی  ہے۔‘‘یقینا اس  شخص نے  موسی  کو   دیکھا  ہوا  تھا اسی   لئے تو   اس نے مجھ سے  کہا  کہ  تم  سید  محسن  موسوی  لگتے ہو۔یہ  بات  بہت  اہم تھی۔کیوں  اس بات کو   منعکس  نہیں  کیا  گیا ؟۔۔۔۔امریکہ  نے مغربی   اغوا  شدہ  افراد کے لئے  فلمیں بنائیں  ۔’’منطقہ  جنگی ‘‘ جنگی   علاقے نامی  فیلم   بنائی ۔’’جان میک کارٹی‘‘ جس نے خود کو جلا لیاتھا  اس کے سلسلہ میں  متعدد  پوسٹر اور  کتابیں  شائع کیں ۔لیکن آپ بتائیں   کہ  اس ۲۴ سا ل کے دوران ایک کتاب  بھی ان  چار افراد ک ی  زندگی سے متعلق    آپ کی  ایک  کتاب   بھی  نظر  آئی۔ایک  ۵۰  صفحہ کی  کتاب   فاتح  بیت المقدس ۔۔۔کو  لیکر  ڈھنڈھورا پیٹ  رہے ہیں ۔اس  کی   لباس جنگ میں  اس کی تصویر   نکال کر  کہتے   ہمار ے  سفارتی  افراد؛۔۔۔‘‘

مصنف  دوسرے مقام    پر کہتے ہیں  :اخبار’’الخلیج ‘‘ کا    رپورٹر  ،ان چار  اغوا شدہ  افراد کی  کھوج کے سلسلہ میں  ایران کی   سفارتی  امور   کی کمزور ی کے سلسلہ میں    معتقد  ہے:’’ ان  چار  اغوا شدہ  ایرانیوں کے سلسلہ میں  ایران  کے داخلی ذرائع  ابلاغ کی   خاموشی  پر بہت  تعجب  ہے۔مجھے لگتا   ہے ایرانی سفارتی امور   کے  ذمہ  داران  نے  اپنے  ان چار  اغوا  شدہ  افراد  کھوج میں    بہت  سستی سے کام لیا ہے ۔سال میں  ایک بار ان کی  یاد  میں  پروگرام کرتے ہیں اور  سال  بقیہ  ایام  میں انہیں فراموش کردیتے  ہیں ۔۔۔‘‘

کتاب کے مصنف  داؤدآبادی ،نسیم  نیوز  ایجنسی کے ساتھ انٹرویوں  مین  کہتے  ہین :’’۱۳۸۶ سے  وزارت   خارجہ کتاب ’’کمین جولای ۸۲ ‘‘ کی  دوسری   طباعت  پر  پابندی  لگائی  ہے۔ یہ  طے  کیا   گیا  تھا  کہ اس کتاب  کا  انگریز  ی ترجمہ  ملک  تمام   سفارت خانوں کو   ارسال کیا جائیگا   لیکن  مجھے نہیں  لگتا  ایسا  ہوا ہوگا ۔جس   زمانہ  میں   ان  اغوا  شدہ  افراد کے سلسلہ  میں    مجلس  شورائے  اسلامی (پالیمنٹ)میں  کمیٹی  تشکیل  دی گئی  تھی   تو اس  کمیٹی کے تمام  ارکان   اسی  کتاب  کے  مطالب   سے استفادہ  کرتے   تھے ۔یا یوںکہا جائے کہ  اس  کتاب  نے  معاشرے    کے افراد  کو  بہت  متاثر کیا  تھا ۔۱۳۸۶  میں  وزارت  خارجہ  نے اس  کتاب کے  تجزئیہ  کی ذمہ   داری ایک  ٹیم کے حوالہ کی اور  اس  کے بعد  یہ اعلان کیا   اساسیی طور پپر اس  کتاب کو  شائع  ہی  نہین   ہونا چاہئے تھا۔اس  کی  وجہ  یہ  بتائی گئی  کہ  اس  کتاب میں  حاج  احمد  متوسلیان  کو  ایک  پاسدار’’فوجی ‘‘ بتایا  گیا   ہے نہ کہ  سفارت خانہ   سے متعلق  کوئی شخص۔افسوس کی بات  یہ ہے کہ  ہم   اب  بھی ان  چار  افراد کو    ڈپلومیٹ    ہی کے طو ر   پر روشناس  کرانا چاہتے  ۔جبکہ  ۱۵ سال  پہلے    مغربی   ممالک نے اپنی کتابوں  میں  انہین    پاسدا ر ہی بتایا  تھا۔افسوس کہ ہم   مظلوموں کے دفاع کے  خاطر  لبنان  گئے تھے اور  دنیا  والوں کو  یہ بتانا  چاہتے  ہین   کہ  یہ چار اغوا شدہ  افراد  پاسدار  نہین   تھے۔لیکن  اسرائیل  ،لبنا   ن  پر اس  حملہ   پر  ٖکر  رہا ہے ۔‘‘

اسی  طرح کے  کتاب کے مصنف  مدعی ہیں ک:’’افسوس  کی بات   ہے   ان چار  اغوا شدہ  افراد  کے سلسلہ میں لبنان کی کسی   عدالت  ،   تھانہ  اورحتیٰ   لبنا  ن  میں ایرانی  سفارت خانہ  میں بھی    کوئی  فائل  موجو نہیں    ہے ۔اور   یو کہا  جائے کہ   ۳۲ سالوں میں اب تک    اس سلسلہمین  کوئی  عدالتی  کوراوائی انجام دی ہی  نہیں گئی ہے ۔جب کہ بیروت  میں امریکہ  کے ایک  ۳۲ سالہ   جاسوس  کے قتل  ہونے  کی   وجہ  سے   امریکہ   میں  ایران کی ’’ساختمان  علوی ‘‘ علوی  بلڈنگ  کو  ضبط  کرلیا  گیا تھا۔ کیوں  کہ  ان کی  نگاہ مین   ایران   اس   جاسوس قاتل  ہے ۔اور افسوس  کی بات   ہے  اب بھی   ان  چارا یرانی  افراد  کولبنان میں  اغوا کرنے   والے   عناصر کے زندہ  ہونے کے باوجود ہم   لبنانی   حفاظتی  اور  عدالتی   ایجنسیوں  کے ذریعہ  انہیں   گرفتار اورپوچھ تاچھ کرنے مین  کامیاب نہیں   ہوسکے ہیں ۔‘‘

وہ  ایرنا نیوز  ایجنسی سے  اس  سلسلہ مین   اپنا  گلا  کرتے   ہوئے کہتے ہیں :’’افسوس ہے کہ  اب تک  ایک ’’ لوگو‘‘اور  مخصوص  صفحہ تک  اس  نیوز  ایجنسی  نے  کاظم  اخوان کے نام  سے   نہیں   بنایا ۔جب   کہ   صحافیوں کی   سائیٹ  اس  بھری ہوئی ہیں ۔افسوس  کہ   ہم نے اس   صحافی  کی ایک  تصویر تک شائع نہیں  کی  جبکہ اسرائیل  نے جنگ  مین  مفقود  ہوجانے والے پائیلٹ کے  لئے   انٹرنٹ   پر ہزاوں   صفحا ت  بناڈالے ہیں ۔اس کے  علاوہ   اس   نیوز  ایجنسی  ایرنا نے   اس  صحافی کےسلسلہ میں  اب تک صرف  ایک  بیان  ہی  صادر کیا ہے ۔(۲)

مصنف کا   دعویٰ  ہے کہ  ان چند  سالوں میں  اس کتاب  کی  دوبارہ   شائع  نہین ہونےدیا گیا ۔اور اسی   بات   پر مصنف کو  اعتراض  اور شکایت ہے ۔ان کے بقول :’’یہ کتاب  فارسی  زبان میں  صرف ایک  بار  چھپی  اور  دوسری  بار  نشر نہیں ہوئی ،اور مسلسل    کوششوں  کے  بعد  انگریزی  میں اس  کا ترجمہ  کیا گیا  ؛ اوریہ  توقع کی جارہی تھی  کہ اس  کتاب کو   دیگر ممالک کےسفارت خانوں  اور ثقافتی  اداروں  میں   بھیجا جائیگا لیکن   ابتک     یہ  اسٹور روم  میں  رکھی  ہوئی ہے ۔‘‘

(اغوا شدگان  میں سے  ایک )سید  محسن  موسوی کی   اہلیہ  مریم   مجتہدزادہ   کا بھی  خیا ل ہے:’’کئی سالوں  سے  ہم  ان  ڈپلومیٹ افراد کی  حالت   جاننے کی کوشش کررہے ہیں ؛جن لوگوں  نے  انہیں آخری بار  دیکھا  تھا   ان سے  متعدد بار گفتگو  کی گئی لیکن  ہر  بار  ان کے جوابات  مختلف  اور  پہلی گفتگو کے برخلاف  ہی رہتے ہیں ۔ان میں سے ایک  کہتا ہے کہ  سید  محسن  موسوی  کو  گرفتا ر  کرتے ہیں  قتل  کردیا  گیا تھا  اور  بعد  میں  اپنی آگے   گفتگومین  کہتاہے کہ وہ  نماز  کے بعد  دعائے  توسل بہت  ہی  اچھے انداز میں  پڑھتے  تھے۔ صیہونیوں  کی  طرف  سے ہمیں   کئی بار   کچھ  ہڈیاں  بھیجی  گئیں اور  کہا   گیا  کہ یہ  انہیں   سفارتی  افراد  کی   ہیں ۔اور  جب انکا   DNA ٹسٹ کروایا   تو  ہر بار   غلط   نکلا ۔ان  متضاد  باتوں کے پیش  نظر   وہ  اب  بھی زندہ  ہین اور ہم ان کی واپسی کے منتظر ہیں۔‘‘(۳)

مصنف  کے   خیال سے:’’ان    دنوں   ان  چار ایرانی  سفارتی افراد کو  اغوا ہوئے  دس ہزاز  روز   مکمل  ہوچکےہیں۔اور  انکے اہل  خانہ اور  ہمارے  اندران سے  متعلق جذبہ اور  ان کی  اہمیت   روز  اول کی  طرح   موجود ہے۔ممکن  ہے  کچھ لوگوں  کے  لئے   یہ  مسئلہ  تکراری ہو اور  انکا   جوش  ٹھنڈا   پڑ گیا ہو لیکن   ہمارے ۱۰۰ ہزار  دن  گذرنےکے بعد  بھی مسئلہ  ویسے ہی  تازہ رہیگا ۔خلاصہ  یہ کہ ہو سکتا ہے کہ  وزارت خارجہ   کی   طرف سے  کوئی مذمتی   بیان صادر ہو اور  وہ  کہیں  کہ  ہم شدت کےساتھ اس  مسئلہ کی   پیروری کررہے ہیں۔ وہ فوٹو گراٖفر  اور  صحافی  جو  ہماری قوم  کی فداکاریوں   کی  تصویریں  لیتے اور   ان  کی خبریں    پیش   کرتے تھے اور دشمن کے  مقابلہ میں    لشکر  اسلام کی شرفت  و عظمت کو  برملا کرتےتھے ،کو  اسیر ہوئے  ۱۰ ہزار  دن   گذر چکے  ہین  اور  وہ  وحشی   دشمنوں کی   قید  میں  ہیں ۔ہمارے ذرائع  ابلاغ  کوئی  چھوٹی  سی  حرکت  ایجاد کرنےکے لئے   ایک  گوشہ میں کاظم اخوان کی ایک   چھوٹی سی  تصویر  شائع کرنے  سے  دریغ کر رہے  ہین ۔اورہمارے دوست  ذرائع ابلاغ  اس   بات کو اہمیت نہیں  دے رہے  ہیں  ۔جبکہ  غاصب اسرائیل   اپنے  سفاک  ار ظالم   پائیلٹ  رون آراد(۴)کے  سلسلہ میں  تمام    سیٹیلائیٹ  چینلوں مین    اطلاعات  نشر کررہا ہے ۔ پس  ہمارے  زرائع  ابلاغ  کاظم اخوان کے سلسلہ مین  کیا  کررہے ہیں ؟

کاظم   اخوان  ،اسلامی   جمہوری  ایران کی نیوز ایجنسی کا ایرانی ،فنکار ، فوٹوگرافر اور ایک  سرکاری   رپورٹر تھے۔ا وراسلامی  جمہوری ایران  اس   ۲۷ سالوں  مین   ا ن کے بارے مین  صرف ایک  بار   بیان  صادر کیا  ہے ۔‘‘(۵)

 ان   اغوا شدہ  ایرانیوں کے سلسلہ مین  ایرانی   خارجہ پالیسی   اور  ڈپلومیٹک   ایجنسیوں  کی  کم توجہی  سے  متعلق  کتاب کے  مصنف کا  بیان  اس  صورت  میں   سامنے آیا ہے کہ     جب اسرائیلہوں   کے ذریعہ  انہیں  اغوا کئے جانے کی تیسویں  برسی  پر  ایران کے سابق وزیر  خارجہ  علی  اکر صالحی نے یوں  بیان دیا ہے :’’سید   حسن  موسوی    جمہوری  اسلامی  ایران کے نائب سفیر،احمد  متوسلیان   سفارت خانہ  کے  فوجی   دستہ  وابستہ   شخصیت ،تقی رستگا ر  مقدم  سفارت خانہ  کے   سٹاف  ،اور کاظم اخوان   اسلامی   جمہوری ایران   کی نیوز  ایجنسی کے   رپورٹر  یہ  وہ افراد  ہیں جو  بیروت  میں    ڈپملومیٹک   پاسپورٹ  کے ساتھ     عام   ڈپلومیٹ افراد کی طرح  قانوناً خدمات   انجام دے  رہے تھے۔جس  وقت  وہ  لوگ   سیاسی   نمبر  پلیٹ   والی  کار مین  سوار    ہوکر  شمالی   لبنا ن   سے بیروت مین  داخل  ہورہے تھے اسی  وقت اسرائیل  سے  وابستہ   پیشیور   فوجیوں  نے  انہیں    گرفتار  کرلیا ۔خبروں  کے مطابق  ان   سفارتی   افراد کو   موقتا   باز  پرس کے لئے  اسرائیل   کی  پشت پناہی  والی  میلشیا  نے لبنا کے جونیہ  علاقہ  سے   مقبوضہ  فلسطین   منتقل  کردیا ہے۔‘‘

انہوں  نے   ان چار سفارتی  افرادکی  تلاش  کے سلسلہ میں  وزارت خارجہ  کی   طرٖف  سے انسانی    فرض  اور  قانونی   ذمہ داری   کے عنوان  سے  ،بعض  اقدامات  کی  طرف ااشارہ کرتے ہویئے کہا :’’۱۳ ستمبر  ۲۰۰۸کو   اس  وقت کی  لبنانی حکومت نے    اسلامی  جمہوری ایران کے  سفارتی   افراد  کی   حفاظت   کے  ذمہ دار ہونے  کے لحاظ   سے  اقوام متحدہ    کو  خط  لکھا   اور  اس میں  اور ان سےدرخواست  کی کہ ان سے مربوط  ایجنسیوں  کو ان  چار  ایرانی  سفارت  کے  افراد  کے سلسلہ میں   سنجدیگی سے اقدام  کرنا چاہئےاور ساتھ ہی ان افراد کی   شرنوشت کو واضح   کرنے   کے لیے   لبنانی  حکومت  کی ہر  ممکنہ  کوشش  پر تاکید  کیا ہے۔اقوام  متحدہ   میں محفوظ یہ    خط  اس بات کی  سند    ہے  کہ لبنانی   حکومت   نے  ۱۹۸۲   میں  بیروت   پر  دوسروں کا  قبضہ   ہونےکے باوجود   اس  ذمہ  داری  کو  قبول  کیا ہے۔بالخصوص  لبنانی صدر مشل  سلیمان  نے   ان    چار  ایرانی  ڈپلومیٹ افراد کی  حالت   مشخص   کرنے   اور انکا   پتہ  لگالنے کے لئے   لبنانی  حکمت  کے مختلف  شعبوں   پر  پوری   کوشش  کرنے   پر زور    دیاہے ۔اس   رپورٹ میں      لبنان میں ان   چار  ایرانی سفارتی ٖافراد  کا  پتہ  لگانے   کی   کاروائی    پر غور کیا  گیا  اور  اقوام متحدہ  کی  طرف سے  اس  بشر دوستانہ  مسئلہ  پر   مدد کرنے  کا  وعدہ بھی کیا  گا ہے ۔اقوام  متحدہ میں  ایران  کے نمائندہ   نے بھی  جولائی  ۲۰۰۸ کو   وہاں معتمد  اعلیٰ   بان کی  مون  کو ایک   خط لکھا  جس میں  ان   سفارتی  افراد کے   اغوا ہونے کا وقت ،کیفیت  اور  جو   افراد  اس  قضیہ میں  ملوث ہیں    ،بارے مین  اطلاعات کو   بیان کیا گیا ہے ۔اور میں نے بھی   اپنی وزارت  خارجہ  کی    خدمات کی ابتدا ہی سے  وٹنگ کے  ذریعہ    علاقائی  اور  بین  الاقوامی   طور   پر   اس  مسئلہ   سے مربوط تمام  ایجنسیوں  کو  ان افرا   کا   پتہ لگانے کے  لئے تما  م  امکانا ت اور  طاقت استعمال کرنے  پر   تاکید  اور زور دیا  تھا۔میں   اقوام   متحدہ  کے معتمد  اعلیٰ   کی   طرف سے  ان چار  اغوا  شدہ سفارتی  افراد  کی    صورت حال  کو  واضح کرنے  کے  سلسلہ میں  مدد  کے اعلان  کے  پیش   نظر ایک   بار  پھر  یہ   درخواست  کرتے  ہیں  کہ ان  افراد کی    حتمی   صورت حال   کو  معلوم  کرنے کے  لئے  بین  الاقوامی  سطح  پر  ایک    کمیٹی   تشکیل   دیں جو   حقیقت  کا پتہ  لگاسکے۔‘‘(۶)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۔ ۴ جولائی   ۱۹۸۲  کو  ایرانی سفارت خانہ کے چار افراد کو اغوا  کیا  گیا  تھا۔

۲۔«روز شمار کتاب «کمین جولای 82» بہت جلد  شائع   ہونے  والی  ہے ۔نسیم نیوز  ایجنسی ،۱۱۔۴۔۱۳۹۳

۳۔«گلایہ نویسنده «کمین جولای ۸۲»»، فارس نیوز  ایجنسی، 15/4/1393.           

۴۔رون  آراد(رون آراد ) ادراسرائیلی    ہو ائی   فوج کا   مفقود اسٹنٹ  پائیلٹ  جو  ۱۶ اکتوبر ۱۹۸۶ کو  لبنان  کی خانہ جنگی  کے  دوران  فلسطین   کی   حریت    پسند  تحریک  کے  اہداف  کو   منہدم کرنے کی  غرض  سے لبنا  کے  صیدا   شہر  میں  پیراشوٹ کے ذریعہ   نیچے  اترا تھا  اور اسے نامعلوم   افراد  نے  گرفتا ر کرلیا تھا۔

۵۔’’ذرائع  ابلاغ   چار  ایرانی    ڈپلومیٹ   کی  گرفتاری  پر کوئی  خاص توجہ نہیں   دے رہے ہین ‘‘نسیم نیوز  ایجنسی۹۔۹۔۱۳۸۸

۶۔ ’’ لبنا ن  میں ایرانی  سفارتی   اٖفراد  کی اغوا کئے  جانے کی   تیسویں  برسی   پر ان کی یاد‘‘،مہر  نیوز ایجنسی ۲۱ تیر ۱۳۹۱

 

 



 
صارفین کی تعداد: 3227


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 
حسن مولائی کی یادیں

سو افراد، سینکڑوں افراد، ہزاروں

وہ لوگ جو چند گھنٹوں پہلے جمرات جا رہے تھے تاکہ رمی جمرات کا فریضہ ادا کرسکیں اب تولیہ اوڑھے سو رہے تھے۔ جب جنازے ختم ہوئے، تو مجھے سمجھ نہیں آئی کہ مجھے کہاں لوٹنا چاہئیے۔ اچانک میرے پیروں نے کام کرنا چھوڑ دیا اور میں نے پہلی مرتبہ وہاں گریہ کرنا شروع کردیا۔ واپس پلٹ کر ان سفید پیکروں کو دیکھنا شروع کیا۔ پوری سڑک جنازوں سے سفید ہوچکی تھی۔ ایک جوان مرد کی آواز پر چونکا جو میرے ساتھ کھڑا تھا اور میرے پیروں کے سامنے چپلیں رکھ رہا تھا۔
حجت الاسلام والمسلمین جناب سید محمد جواد ہاشمی کی ڈائری سے

"1987 میں حج کا خونی واقعہ"

دراصل مسعود کو خواب میں دیکھا، مجھے سے کہنے لگا: "ماں آج مکہ میں اس طرح کا خونی واقعہ پیش آیا ہے۔ کئی ایرانی شہید اور کئی زخمی ہوے ہین۔ آقا پیشوائی بھی مرتے مرتے بچے ہیں

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔

شدت پسند علماء کا فوج سے رویہ!

کسی ایسے شخص کے حکم کے منتظر ہیں جس کے بارے میں ہمیں نہیں معلوم تھا کون اور کہاں ہے ، اور اسکے ایک حکم پر پوری بٹالین کا قتل عام ہونا تھا۔ پوری بیرک نامعلوم اور غیر فوجی عناصر کے ہاتھوں میں تھی جن کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں تھا کہ وہ کون لوگ ہیں اور کہاں سے آرڈر لے رہے ہیں۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔