تقی مکی نژاد کی زندگی کے کچھ پہلو

تاریخ سے متعلق دونئی کتابوں پر ایک نظر


2015-09-09


کتاب  ’’روز گار سرکشی (تقی  مکی  نژاد   کی  زندگی سے  متعلق  ہے جو   ایران میں   کمیونسٹوں  کے ۵۳ افراد  پر مشتمل  گروہ کا  ایک   فعال  رکن  تھا)‘‘یوسف نیک  نام  اور  کتاب’’اندیشہ  اجتماعی  متفکران  مسلمان (از فارابی تا ابن خلدون)‘‘تقی   آزاد  ار مکی  کے ذریعہ   لکھی  گئی ہے  جو  منظر   عا م   پر  آچکی ہے۔

کتاب ایران  نیوز  ایجنسی   ایبنا  کے    کی  رپورٹ کے مطابق    «نگاہی بہ زندگی تقی مکی‌نژاد»، «خاطرات و یادداشت‌ہای تقی مکی‌نژاد»، «گفت‌و‌گویی با تقی مکی‌نژاد»، «پیوستہ (نمونہ‌ای از آراء و آثار)» و «اسناد و تصاویر» جیسے عناوین  میں  ۲۲ مختلف  فصلوں کے  ساتھ  یہ کتاب  ۲۱۲ صفحات  پر مشتمل ہے ۔کتاب  کے ایک   حصہ میں آیا  ہے:’’۵۳  افراد     کی  سرگذشت اور  شہریور  ۱۳۳۰ کے  بعد   کے سالوں میں  حز ب تودہ   ایران (ایران  میں   کمیونسٹ   گروہ) کے قیام  کےسلسلہ میں   اس کے ارکان  کے کردار  کے سلسلہ میں  کام  ہوچکا ہے اوریہ  امر  ایران کی  عصری  تاریخ میں شناختہ شدہ  ہے ۔‘‘

’’مکی    نژاد کی   سرگذشت کےساتھ  ساتھ   اراک میں اس کی  خاندانی   تاریخ  خود   بہت  اہمیت  کی حامل ہے ۔اس کتاب کی ایک اہم  خصوصیت  یہ ہے کہ اس میں   یادداشت لکھنے والے   نے  ۱۳۱۴ میں   ٹیکنیکل  کالج کے    طلاب  کی   ہڑتال  کی   کیفیت  کو   تحریرکیا ہے ۔ یہ  ہڑتال  ان  اہم  اقدامات میں سے تھی جو   ٖڈاکٹر آرانی  کی   افکا ر اور اور  اس کے نفوذ کے زیر  اثر  انجام  پائے   تھے۔مکی   نژا  د   اس  ہڑتا ل  کو    منظم  کرنے  والا  اصلی کردار  تھا ۔قید خانہ  کے  حالات اور تبدیلیاں اور   قیدیوں  کی    سرگذشت  سے  متعلق  بیان   اس  یادداشت  کے دیگر   حصوں کی خصوصیات شمار ہوتا  ہے ۔اور  اسی  طرح   اس  کی    اور   اس  زمانہ  کے  دیگر   قیدیوں  کی   جیل کی زندگی  کی طرف   پراکندہ   یادداشتوں  میں  اشارہ  کیا جاسکتاہے ۔۔۔‘‘

انجنئر  تقی مکی  نژاد   ۱۳۱۲ میں   ’’دنیا ‘‘نامی  رسالہ اور  ڈاکٹر آرانی  سے  آشنا ہوا ۔اور  اس  کی   ہر  ہفتہ   منعقد  ہونے والی   میٹنگوں میں جانےلگا ۔آرانی  کے  ساتھ آشنائی  نے    اس  کی زندگی میں    شدید نفسیاتی   تلاطم  پیدا  کردیا  تھا ۔ان  میٹنگومیں  اس کی  ملاقات   انور خامہ ای  ،ایرج اسکندری اور  شہید زادہ  سے ہوئی ۔۱۳۱۳ میں حکومت  کی طرف  سے    ٹیکنیکل   کالج  کے قیام  کے فیصلہ  کے بعد   انور  خامہ ای  کی موافقت سے  اسے  کالج  کے ابتدائی  دورہ  کے طلاب میں قبول  کر لیا  گیا ۔اس  پہلے تک   حکومت   ہر سال   بہترین  طلاب میں   سے ۱۰۰ افراد کو امتحان کے ذریعہ   منتخب  کرتی  تھی اور  اعلی ٰ  تعلیم کے لئے  یوروپ  بھیجتی  تھی ۔اس  زمانہ  میں ٹکنیکل  کالج میں   ہڑتا ل کے سلسلہ میں    اس  کی   اہم   فعالیتیں ۱۳۱۵۔۱۳۱۶ کے تعلیمی   سال  کے دوران  انجام  پائیں ۔مکی    نژاد   ٹیکنیکل  کالج میں    ہڑتال  کےسلسلہ میں  اپنی یادداشت میں یوں لکھتا ہے :’’۔۔۔۱۳۱۴ میں    ٹیکنیکل کالج میں    کامبخش اور  ڈاکٹر  آرانی  کی   رہنمائی میں    میں نے   ہڑتا ل  کو  تنظیم اور  ترییب  دیا  تھا اور  ہڑتا ل  ختم  ہونے   کے  اعلان کے  ایک  ہفتہ   بعد   اس  وقت  کے    وزیر  ثقافت  مرحوم  علی  اصغر  حکمت  نے ہماری   تمام مانگو کو  مان  لیا  اور  انہیں  اجرا   بھی کردیا ۔‘‘

انجینئر   تقی  مکی نژاد  کا شمار ان مفکرین کی نسل میں   ہوتا   ہے جو  مذہبی  تھے اور   رضا خان کے دور میں سیاسی  اور سماجی    مقابلہ کے لئے  ۵۳ رکنی  گروہ  سے  منسلک ہوگئے تھے اور   گروہ کے اکثر  افراد  کی   طرح  ڈاکٹر آرانی   کی ملاقات   نے اس  میں   شدید   نفسیاتی   اور شخصیتی   تبدیلیا   ں  پیدا کردیں   تھیں۔ان   تبدیلیوں کااصلی   سبب  ڈاکٹر  آرانی   کی  میگزین   ’’دنیا ‘‘ تھی ۔ان  میٹنگوں میں  آرانی ان    مطالب کی   توجیہ اور وضاحت   پیش  کرتا تھا جو  میگزین  میں   شائع ہواکرتی  تھیں ۔

   اسے   ۵۲ رکنی   گروہ کے دیگراعضا  کےساتھ  کوتوالی  کی   جیل  میں  بند کیا گیاا ور   اس کے  بعداسے  پانچ سال کی جیل کی  سزا ہوگئی ۔رہا  ہونے  کے  بعد   اس  نے    سلیمان   میرزا  اسکندری   کے گھر  پر  حز ب تودہ   ایران (ایران  میں   کمیونسٹ   گروہ)کے قیام کے سلسلہ میں   منعقد ہونے  والی میٹنگ میں  شرکت  کی  انتظامیہ کمیٹی   کے رکن کے طور  پر  منتخب ہوا ۔اس نے  دوبارہ   ٹیکنیکل کالج کی طرف  رجوع   کیااور وہاں  سے   مائیننگ  انیجینئرنگ  میں    ڈگری  حاصل  کی اور   ریلوے کے شعبہ میں     نوکری  کرنے  لگا   اور  وہاں سے اسےریلوے  سے  متعلق  مسایل میں  تحقیق کرنے کے لئے فرانس  بھیج  دیا  گیا ۔اور  فرانس    سےواپسی کے  بعدا سے  حزب تودہ میں    پھوٹ    پڑنے کا    پتہ   چلا  جس  کی وجہ سے  اس   گروہ  سے کنارہ کشی   اختیار  کرلی۔اور  گروہ  کی   طرف  سے شدید اصرار کے  باوجود   اس  نے  اس گروہ  میں   دوبارہ کو   ئی فعالیت   انجام  دینے میں   دلچسپی  ظاہر نہیں  کی ۔

’’روز گار سرکشی (تقی  مکی  نژاد   کی  زندگی سے  متعلق  ہے جو   ایران میں   کمیونسٹوں  کے ۵۳ افراد  پر مشتمل  گروہ کا  ایک   فعال  رکن  تھا)‘‘کے  مولف   یوسف  نیک فام ہیں  اور  ۲۱۲ صفحات  پر مشتمل   اس کتاب  کی پہلی طباعت  پردیس دانش پریس سے ہوئی    اور وہیں  سے نشر  کی گئی۔

 

’’اندیشہ  اجتماعی  متفکران  مسلمان (از فارابی تا ابن خلدون)‘‘

کتاب’’اندیشہ  اجتماعی  متفکران  مسلمان (از فارابی تا ابن خلدون)‘‘تقی   آزاد  ار مکی کی  تالیف ہے اورسروش  پریس   سے شائع  ہوکر  بازار میں   آگئی ہے ۔

اسلام میں سماجی  افکا ر کی  تاریخ   اور   مسلمان مفکرین  کی سماجی    افکار   دو ایسے  موضوعا  ت  ہین جن میں تحقیق کےذریعہ  امت  مسلمہ  کے فکری نظام  کو   دو  ددرجوں  یعنی  معاشرےاور  ممتاز افراد میں   بیان کا  جاسکتاہے  ۔اگرچہ   اسلامی    ممالک میں    سماجیات  کے میدان میں   کام   کرنے  کے مواقع    مغربی   ممالک سے  پہلے  ہی سے  فراہم تھے  لیکن  اس کے  باوجود   اسلامی   دنیا  میں  سماجی  افکار  کے  سلسلہ میں    منظم   طور  پر کام نہیں ہوا۔

کتاب’’اندیشہ  اجتماعی  متفکران  مسلمان (از فارابی تا ابن خلدون)‘‘کی  تالیف کا  مقصد  اسی   قسم  کے  نقائص کو دورکرنا  ہے ۔اس کتاب  میں مصنف کی کوشش ہے کہ  مسلمان  مفکرین  کی   افکار کے  اصولوں  کو   انکے    بچے ہوئے   آثار سے مختلف  طریقوں سے اخذ کیا جائے۔

 

اور وہ طریقے،مسلمانو  ں میں    تاریخ   نگار  ی ،مسلمان   مفکرین  کا   طرز تحقیق  اور   انکا ثقافتی  تجزئیہ(سفرنامہ  اور   ثقافتی  مطالعہ) ہیں ۔اس کتاب میں     ابونصر  فارابی ،ابوریحان  بیرونی  اور  امام محمد  غزالی  جیسے بزرگ  مسلمان محققین  کے سماجی   افکار  کی   تنقید   اور    وضاحت   کی  گئی ہے ۔

اسلامی انقلاب کی کامیابی  کے بعد  سے یہ  دوموضوعات’’ اسلام میں سماجی  افکا ر کی  تاریخ  ‘‘ اور’’   مسلمان مفکرین  کی سماجی    افکار‘‘علم سماجیات میں  گریجوئیشن اور  پوسٹ  گیریجوئیشن کے درسی نصاب میں    ہیں  ۔ پہلے  مرحلہ میں    یہ سوال  پیدا ہوتا ہے کہ   کیا  یہ   درسی  عناوین  خاص  طور    پر ہمارے  ملک   کے  سماجی    مسائل کو   حل کرنے میں   کارآمد  ہوسکتے ہیں ؟اور   اسلامی  انقلاب کی کامیابی کے بعد  کے  حالات    کی  طرف  توجہ  کے بغیر   کیا   علمی  اور  فکری   نقطہ  نگاہ سے   ایران    میں    ان     موضوعات کی کوئی  اہمیت ہے ؟

یہ  کتاب  انہیں  دوسوالوں  کے جواب   دینے کے لئے  لکھی   گئی  ہے۔اس کتاب   کی  ابتد ا میں  اس   مسئلہ  کی  ضرورت   اور  اہمیت  کو   بیان  کرنے اور  اس   سے متعلق    نظریات کو  بیان کرنے کی کوشش کی گئی ہے  اور اس کے بعد مسلمان   مفکرین کی  افکار کے    ضعیف اور قوی نکات  کا  تجزئیہ  کیا  گیا ہے۔آگے  مسلمانوں کے سماجی  افکار کے  اصول  ، خصوصیات   اور  امتیازات کو  بیان  کیا  گیا ہے اور اور آخر میں     فارابی، بیرونی، مسعودی، ابن بطوطہ، غزالی طوسی و ابن خلدون جیسے  ماضی کے   مسلمان  مفکرین کے  نظریات  کو  بیان  کیا  گیا ہے ۔

 کتاب’’اندیشہ  اجتماعی  متفکران  مسلمان (از فارابی تا ابن خلدون)‘‘مندرجہ ذیل  دس  فصلوں پر  مشتمل ہے:

ضرورت طرح اندیشہ اجتماعی مسلمانان، زمیںہ‌ہای شکل‌گیری تفکر اجتماعی در تمدن اسلامی، مبانی و اصول اندیشہ متفکران مسلمان، تاریخ‌نگاری در نزد مسلمانان، روش‌ہای تحقیق متفکران مسلمان، بررسی‌ہای فرہنگی متفکران مسلمان، اندیشہ اجتماعی ابونصر فارابی، اندیشہ اجتماعی ابوریحان بیرونی، اندیشہ اجتماعی امام محمد غزالی و اندیشہ اجتماعی ابن خلدون.

کتاب’’اندیشہ  اجتماعی  متفکران  مسلمان (از فارابی تا ابن خلدون)‘‘کی  پانچویں  طباعت  ۳۸۲ صفحا ت پر  مشتمل  ہے  جس کے  ایک    ہزار  نسخہ    ۱۵۵۰۰  تومان   فی   نسخہ کی  قیمت کے ساتھ    سروش  پریس  سے  طبع ہوکت   باز  ار میں  اچکے ہین ۔

ماخذ :کتاب  ایران نیوز  ایجنسی   ابنا

مترجم  سید محمد  جون  عابدی



 
صارفین کی تعداد: 4058


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 
حسن مولائی کی یادیں

سو افراد، سینکڑوں افراد، ہزاروں

وہ لوگ جو چند گھنٹوں پہلے جمرات جا رہے تھے تاکہ رمی جمرات کا فریضہ ادا کرسکیں اب تولیہ اوڑھے سو رہے تھے۔ جب جنازے ختم ہوئے، تو مجھے سمجھ نہیں آئی کہ مجھے کہاں لوٹنا چاہئیے۔ اچانک میرے پیروں نے کام کرنا چھوڑ دیا اور میں نے پہلی مرتبہ وہاں گریہ کرنا شروع کردیا۔ واپس پلٹ کر ان سفید پیکروں کو دیکھنا شروع کیا۔ پوری سڑک جنازوں سے سفید ہوچکی تھی۔ ایک جوان مرد کی آواز پر چونکا جو میرے ساتھ کھڑا تھا اور میرے پیروں کے سامنے چپلیں رکھ رہا تھا۔
حجت الاسلام والمسلمین جناب سید محمد جواد ہاشمی کی ڈائری سے

"1987 میں حج کا خونی واقعہ"

دراصل مسعود کو خواب میں دیکھا، مجھے سے کہنے لگا: "ماں آج مکہ میں اس طرح کا خونی واقعہ پیش آیا ہے۔ کئی ایرانی شہید اور کئی زخمی ہوے ہین۔ آقا پیشوائی بھی مرتے مرتے بچے ہیں

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔

شدت پسند علماء کا فوج سے رویہ!

کسی ایسے شخص کے حکم کے منتظر ہیں جس کے بارے میں ہمیں نہیں معلوم تھا کون اور کہاں ہے ، اور اسکے ایک حکم پر پوری بٹالین کا قتل عام ہونا تھا۔ پوری بیرک نامعلوم اور غیر فوجی عناصر کے ہاتھوں میں تھی جن کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں تھا کہ وہ کون لوگ ہیں اور کہاں سے آرڈر لے رہے ہیں۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔