رضا شاہ، ایران کی عصری تاریخ کے روشن سائے میں

محمود فاضلی

2015-09-02


«رضاشاه در سایہ روشن تاریخ معاصر ایران، از آغاز تا پایان سلطنت» رضا  شاہ ،ایران  کی  عصری تا ریخ کی  روشنی میں، ابتدا  سے  حکومت کے خاتمے تک۔ رضا  شاہ پہلوی کے بارے میں ایک نئی کتاب  ہے  جس میں  موجودہ  ماخذ وں کی  طرف  رجوع کرتےہوئے سیاسی  منظر نامہ میں رضا  شاہ  پہلوی کی تاریخی شخصیت  اور حالات کا  تجزئیہ کرنے  کی کوشش کی گئی ہے۔ اس کتاب کے  ایک حصہ  کا  عنوان ’’اصل  ونسب رضا  شاہ ‘‘ یعنی  رضا  شاہ کا حسب ونسب ہے  ، جو  اس کے  زمانہ کے  افراد کے  ذریعہ    تیار  شدہ  رپورٹ   ہے۔جس میں  کہا   گیا ہے :’’رضا خان پہلوی  سلسلہ  پہلوی  کا  بانی،ولد  عباس  قلی خان سواد کوہی  المعروف بہ  داداش بیگ    ۱۲۵۶ ش کو ’’سواد کوہ   ‘‘ میں  پیدا  ہوا ۔ ۲۲ سال  کی  عمر میں  میں   قزاق دخانہ میں  قزاق   (فوجی)کے طور  پر خدمات انجام دینے لگا۔ اور  اسی  خدمت  کے دوران  اس کی  مختلف  عہدوں پر ترقیاں  ہوتی  رہیں  اور  مختلف شہروں کی ذمہ داریاں  اس کے  سپرد  کی گئیں ، ۱۲۹۴ ش  میں  اس کو (آتریاد) ہمدان کے  قزاق خانہ(فوجی   چھاؤنی)  کی بریگیڈ  کا    منتظم  بنا دیا  گیا ۔‘‘ اس  کتا ب میں موافقین اور مخالفین  کے  لحاظ سے ’’۱۹۱۹کےاقرار نامہ ‘‘کا  تجزئیہ کیا گاہے۔ اس کتاب میں   ’’رضا  خان کے  برطانیہ کے ساتھ  روابط ‘‘ کے موارد  کو  اس  طرح  سے بیان کیا  گیا ہے :

’’شاپور جی نے  مجھے   مخفیانہ  طور   پر ایک  کتاب دکھائی   جس میں     لکھا  گیا   تھا کہ   ہندوستان کا  نائب السلطنۃ  چاہتا ہے کہ  ایران   کی   دیکھ ریکھ کے لئے ایک  مناسب  شخص  تلا  ش کیا  جائے ۔اس  حکم  کی  تعمیل  کرتےہوئے  شاپور جی کے والد اردشیر  جی  نے  رضا  شاہ کا نام    ہندوستان کے نائب السلطنۃ کے  سامنے  پیش کیا ۔شاپور  جی کا مقصد  یہ  تھا  کہ یہ بتائے کہ  پہلوی  سلطنت کی  بنیاد  اس کے باپ کے  ذریعہ  رکھی گئی  ہے۔‘‘

مؤلف  نے    ملک الشعرا ی  بہار  کی   کتاب  ’’تاریخ    مختصر  احزاب سیاسی‘‘کے حوالہ سے    کتاب  کی  دوسری فصلوں میں ’’رضا  خان کے  برطانیہ کے ساتھ  روابط ‘‘ کے سلسلہ میں   یوں  لکھا ہے :’’ مجھےاس بات میں کوئی   شک نہیں ہے کہ سید ضیا الدین کا تختہ  پلٹے جانے سے قبل  فوج کے کمانڈر کے بیرونی  عناصر کے ساتھ  روابط تھےمنجیل میں   مقیم  فوجی   چھاونی  کے   تارگھر کا کلرک  سردار  ’’استار لوکسی‘‘روسی اپنے   خلاف  برطانیہ کی  سازشوں   کے سلسلہ میں   اس(رضا  خان )کی  طرف  اشارہ کرتے  ہوئے کہتا ہے کہ  رات کےکھانے کے بعد  جب  چھاونی میں سارے لوگ   آرام کرنے لگتے  تو یہ  افسر گاڑی پر سوار ہوکر  برطانوی   چھاونی   جایا  کرتا تھا   اور  ساری  رات  یا  را ت کا  ایک  حصہ  وہیں  گذارتا تھا‘‘۔

برسر کار  آنے  کے بعد  رضا خان کی کوشش  یہ تھی   جس طریقہ سے بھی  ممکن  ہو  یہ ثابت کردے  کہ برطانیہ  نہ صرف  اس کی  حمایت  کرتا ہے بلکہ  اس کے جیسے شخص کے ہوتے ہوئے برطانیہ  کو  ایران  میں  کسی  دوسری فوج کو  رکھنے کی  ضرورت نہیں  ہے ۔ یہ  وہی  نقشہ  تھا  جسے   آیرونسایڈ کے  ایران  میں  داخل  ہونے  کے  ابتدائی  ایام میں   ترسیم کیا  گیا تھا  اور رضا خان کے  لئے لازمی  تھا  اس    منظر  نامہ  کے  تحت   تیار   شدہ  پروگرام کو  جاری  رکھے ۔ وقت  گذرنے کے ساتھ ساتھ   بعض  روشن  فکر  افراد  نے    زبردستی  اس کی    آمریت کی  توجیہ  اور حمایت کرنا  شروع کردی۔ اس دوران  ان لوگوں نےنہ  مدرس  کی مخالفت   کی  فکر  کی اور  نہ ہی  بہار اور  مصدق  جیسے افراد کی دھمکیوں  کی پرواہ کی ۔  رضا  خان کی  حکومت  کے  ستون وہی افراد  قرار پائےجنہوں  نے دستوری  حکومت کے   دور  کے بحرانوں میں   مؤثر  کردار  ادا کیاتھا۔ رضا خان کے  زمانہ   میں  اگر کوئی  استقلا ل کی   چھوٹی سی  بھی  بات  کرتا  تو اسے رضاخان کے عتاب کا شکار  ہونا پڑتا  تھا۔ ’’ملک کےنامنظم   حالات  تختہ  پلٹے جانے کا  سبب  بنے‘‘اس فصل  میں     ان حالات   کو  مورد تجزئیہ    قراردیا   گیا  ہے جو   ملک  میں  تختہ  پلٹ  کی وجہ   بنے  اور اس میں  بیان  ہوا ہے کہ ’’مرکزی حکومت  تہران  کے   حالات    بہت زیادہ حرج  و مرج سے  دچار تھے‘‘ شاہ اور  وزیر اعظم  میں  سے کوئی  بھی   ان  حالات  پر قابو پانے کی  قدرت  نہیں  رکھتے تھے ۔احمد  شاہ   کو  علالت کی  بنا  پر  ڈاکٹروں    نے مکمل  آرام  کی صلاح دی تھی اور  کسی  وزیر میں   کوئی  مثبت  اقدام  کرنےکی  صلاحیت    نہیں   تھی ۔  حکومت  کا  خزانہ خالی ہوچکا  تھا  ،اسٹاف اور  فوجیوں  کو  مہینوں   سے تنخواہیں   نہیں  ملی تھیں ۔کسی  حکومتی شخص کے پاس   ملک  کے مستقبل کے  لئے کوئی  پروگرام نہیں  تھا اور  وہ صرف   وقت گذار رہے تھے۔ کتاب کی  فصل  ’’تختہ پلٹ کے  ابتدائی  اقدمات کس  طرح  انجام پائے‘‘ میں اس   طرح  لکھا  ہے:’’کتاب ’’حیات  یحییٰ‘‘میں  حاج مرزا  یحییٰ  دولت آبادی  اور  اس سلسلہ میں بعض  دیگر  ہم  عصر     افراد  جیسے  ملک  الشعرا  بہار اور  دوسرے   لو گ  اپنی  تحریروں میں    متفقہ  طور  پر لکھتے ہیں  کہ  تیسری  اسفند  ۱۲۹۹ کا  تختہ  پلٹ  کوئی   اچانک اور  ناگہانی   واقعہ  نہیں   تھا    کہ ایک   بارگی   جنرل  آیرونسایڈ نے اس کاپروگرام تیار  کردیا ہواور رضا خان نے   اس کو  جاری کردیا  ہوبلکہ اس  تختہ  پلٹ کے  ابتدائی ا قدامات   سال ۱۲۹۹  کی  ابتدا  اور وثوق الدولہ کی   کابینہ  کے  منحل   ہونے کے بعد   سے ہی  انجام  پانا شروع ہوگئے  تھے۔اور  اس  کامنظرنامہ  لندن   ، تہران  اور  قزوین ۔۔۔ میں ساتھ ساتھ  ترسیم   ہورہا  تھا۔‘‘     
 ’احمد شاہ کیا کرتا تھا ‘‘ عنوان  کے تحت  مؤلف نے   بہار کے  حوالہ سےیوں نقل  کیا  ہے:’’ملک  الشعرا     کہتے ہیں   کہ  مجھے  اطلاع ملی  تھی  کہ جب   احمد  شاہ نے  استانبول ،ترکی  میں   اپنے باپ  محمد علی  میرز  ا سے ملاقات  کی   تھی     تو اس نے  اسے   بتایا کہ  قزاق  جو  شاہ کے وفادار  ہیں اور  اب بھی  بادشاہ کے   کے  گارڈ کی  خدمات   انجام  دے رہے ہیں ، کی مددسے  دستوری  حکومت   کے  حامیوں  کے خلاف   تختہ  پلٹ کرکے   ایک  آمری  حکومت    تشکیل  دےتاکہ اس طرح  اپنی   سلطنت  کو استمرار   دے سکے ۔ شاید  یہی   وجہ ہے کہ   شاہ  احمد شاہ  نے  اس   وقت  وزیر اعظم   کو   یہ  رائے دی  تھی کہ پانچ   سو  فوجی  افراد  پر مشتمل   فوجی  دستہ اور سلطنتی  گارڈ     کا  تہران  میں    رہنا  لازمی  ہے  لھٰذا اس  مقدار میں  افراد  کو  فورا  قزوین سے تہران   روانہ کرنے کا  حکم   صادر کیا  جائے۔
فصل ’’فولاد کمیٹی  اور اس  کے ارکان ‘‘ کے ضمن میں  مؤلف   اس  طرح تحریر کرتے ہیں:’’فولاد  کمیٹی    ،  انگریزوں اور   کرنل  ’’ہیک ‘‘ کے اصرار  پر  اصفہان  میں  تشکیل   پائی  تھی۔اور  بعد میں  اس  کمیٹی نے  اپنا  ایک  شعبہ  تہران میں  بھی  کھول دیا  جس کا  انتظام  سید  ضیا الدین    طباطبائی کے   زیر  نظر تھا۔سید  ضیا کے  علاوہ  نصرت  الدولہ   فیروز اور اس کےبعض  دیگر  دوست بھی   انگریزوں کے  زیر نگرانی   ظاہری   یا  مخفی طور  پر  فولاد کمیٹی کے  رکن  تھے۔خلاصہ  یہ  کہ  ان  لوگوں  کی  کوشش یہ تھی   کہ کسی  طرح سے بھی حکومتی  امور  کی   باگڈور  اپنے ہاتھو ں میں لیکر  وثوق الدولہ  کے  معاہدے  کی  دفعات کو  نافذ کیا  جاسکے۔‘‘
فصل ’’برطانوی  سفارت  خانہ کی   سید  ضیا  کو  باقی رکھنےکی  کوششیں ‘‘ میں  سید  ضیا کی  حیثیت      اور حالت کا یوں تجزئیہ کیا  ہے :’’احمد شاہ کو اس  بات کی  خبر ہوگئی   تھی  کہ  تین   مہینہ تک   سیدضیا کو  برداشت  کرنے کے بعد  اب انگریز   اس کی حمایت سے  دست بردار  ہوگئے ہیں ۔اوراس کے کاموں سے  راضی  نہیں   ہیں۔لھٰذا  بادشاہ  کے سامنے     اس  کی  اجازت  کے  بغیر  وہ بھی ماہ   رمضان  میں،  سگریٹ  پینے کو  بہانہ  بنایا   اور  خادم  کو  حکم دیا  کہ جاکر  سید  کے  منھ سے سگریٹ   نکال کر  پھینک دے۔‘‘لیکن شواہد  یہ کہتے ہیں    کہ   سید  ضیا کی   معزولی  کے  آخری لمحات تک  انگریز  اس کو  باقی  رکھنے  اور حکومتی  باگڈور  اسی  کے ہاتھ میں   رہنےدینےکی   کوشش کرتے رہے ۔لیکن  جب  دیکھا   کہ  ایسا  ممکن  نہیں  ہے اور  اس کامعزول ہونا  طے  ہے  تو  اس کی  جگہ  احمد  شاہ کو   لے  آئے   تاکہ  مطمئن اور آسودہ  خاطر  ہوکر  ایران کو چھوڑیں ۔ اور  ان لوگوں  نے ایسا ہی کیا ۔‘‘

اس  کتاب   کی  فصلوں میں   سےایک ’’ برطانوی حکام  کو جذب کرنے کے لیےسید  ضیا الدین   کی کوششیں ‘‘ ہے  جسمیں   مؤلف نے    سیدضیا اور  برطانیہ کے  سفیر  مطلق    کے  تعلقات کی   طرف  اشارہ   کرتے  ہوئے لکھا کہ :’’تختہ  پلٹ   اور  گرفتاریوں  کے دو تین  روز  کے  بعدسید  ضیا  مشورہ  کے لئے ’’نارمین ‘‘کے پاس گیا ۔اور مستقبل  میں    اپنےجس  پروگرام کو  وہ ناٖفذ  کرنے کا  ارادہ  رکھتا  تھا   اس کے سامنے پیش  کیا۔اس  ملاقات کے  بعد ’’ نار مین   ‘‘نے بہت  ہی جوش  و خروش کے ساتھ’’ کرزن ‘‘کو رپورٹ میں لکھا  کہ:’’۔۔۔۱۹۱۹ کے   ادھورے معاہدے کو  چھوڑ دو  اور  سید  ضیا  الدین  کو  معاہدےکے تما  م   دفعات  پر عمل کرنے کی  مہلت  بغیرکسی  شرط اور  معاہدے کے دیدو‘‘
فصل ’’سیدضیا  الدین  کا درونی  مشکلات  اور بیرونی  سیاست کے درمیان   پھنس جانا‘‘ میں  تختہ  پلٹ  کے  سیاسی  بازیگری  کا  تجزیہ  کیا  گیا ہے :’’بعض  مغربی   تجزئیہ  نگاروں  نے  سید  ضیا  کو ایک  با بصیرت اور  روشن  فکر    شخص  بتایا  ہے ،بلدیاتی  امور میں  اس  کی  دلچسپی  کو  اس  کی  بصیرت  کی   انتہا   تصور  کیا ہے ۔اس  کی  روشن فکری میں  بھی   کجی تھی   اس نے  مغربی  افکار کے بارے میں   سنا  تو  تھا لیکن  اس  کو  جذب  نہیں  کر پایا تھا ۔اورحکومت  کی  ٹوپی  اس کے  سر پر   سہی   نہیں   بیٹھ  رہی تھی ۔‘‘

’’سید   ضیا  کی  ایران  سے جلا وطنی   ملک الشعرا  بہار  کی   قلم سے‘‘ایک   ایسا  موضوع  ہے جس کے سلسلہ میں اس  ۵۰۴  صفحات پر  مشتمل  کتاب میں   علیحدہ  طور  پر گفتگوکی  گئی ہے :’’در حقیقت   سید  ضیا   الدین   کی حکومت  ایک  ’’شتاب زدہ  حکومت ‘‘تھی کیوں   کی اس  کی حکومت  کی   مدت تین  ماہ  اور  چند  روز  تھی  اور  اس کے بعد  اس کو تقریبا بیس  سالوں سے زیادہ کے لئے  ملک سے  جلا  وطن ہونے  پر  مجبور ہونا   پڑا ۔اور یوروپ میں  پناہ لینی  پڑی ۔عجیب  بات یہ  ہے کہ  جلاوطن  ہونے   کے   کچھ  ہی عرصہ کے  بعد    اپنے  تختہ   پلٹ   کے ساتھیوں اور  دوستوں    کے ساتھ   وطن  واپس  آنے میں    کامیاب ہوگیا ۔

سید کی  کابینہ کو   ’’کابینہ  سیاہ ‘‘ کا  نام دیا  گیا ۔ اس زمانہ کے  شعرا اور مصنفین  نے    اس کا  اور اس کی  کابینہ  کاذکرنیک الفاظ میں کیا ہے ۔

     



 
صارفین کی تعداد: 3771


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 
ساواک کی تجویز کا جواب

یونیورسٹی میں تعلیم جاری رکھنے سے انکار،

میں ایک سال سے غیر حاضر تھا اور حالات کافی تبدیل ہو چکے تھے۔ اس سے قبل، میرے دوست سیاسی معاملات سے لاتعلق رہتے تھے لیکن اس بار وہ بہت جوش اور احترام سے میرے استقبال کو آئے۔
حجت الاسلام والمسلمین جناب سید محمد جواد ہاشمی کی ڈائری سے

"1987 میں حج کا خونی واقعہ"

دراصل مسعود کو خواب میں دیکھا، مجھے سے کہنے لگا: "ماں آج مکہ میں اس طرح کا خونی واقعہ پیش آیا ہے۔ کئی ایرانی شہید اور کئی زخمی ہوے ہین۔ آقا پیشوائی بھی مرتے مرتے بچے ہیں

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔

شدت پسند علماء کا فوج سے رویہ!

کسی ایسے شخص کے حکم کے منتظر ہیں جس کے بارے میں ہمیں نہیں معلوم تھا کون اور کہاں ہے ، اور اسکے ایک حکم پر پوری بٹالین کا قتل عام ہونا تھا۔ پوری بیرک نامعلوم اور غیر فوجی عناصر کے ہاتھوں میں تھی جن کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں تھا کہ وہ کون لوگ ہیں اور کہاں سے آرڈر لے رہے ہیں۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔