شاملو کا سفر نامہ امریکہ

محمود فاضلی
مترجم: جون عابدی

2015-09-02


کتاب «روزنامہ سفر میمنت اثر ایالات متفرقہ امریغ» کو ایران  کے مشہور  شاعر  احمد شاملو  نے لکھا  ہے  یہ کتاب  ۱۳۶  صفحات پر  مشتمل  ہے جو  ۲۳ سال  کے   انتظار کے  بعد   مازیار   پریس   سے  شائع   ہوئی ۔یہ کتاب  ۱۳۸۴ ش  سے   وزارت  ثقافت و تعلیم  کی  طرف  سے   طباعت کی  اجازت کی منتظر تھی ۔تقریبا  دو مہینہ  پہلے اس کو  شائع  کرنے کی   اجازت  ملی  ۔شائع   ہوکر  منظر  عام پر آتے  ہی   احمد  شاملو کے معتقدین  نے  اس کا  پرزور  استقبال کیا اور اب یہ  دوسری بار  زیر طبع ہے ۔

مازیر  پریس کے  مینیجر   اس  کتا ب کے ہاتھوں  ہاتھ  لینے   کے سلسلہ میں   کہتے ہیں :’’گذشتہ  ایام   میں   اس   کتاب   کے کچھ  حصہ   کو  آؤڈیو   فائل  کی  صورت میں انٹر نٹ  پر   منتشر کیا  گیا تھا ۔اس  بنا  پر   قارئین  کو  اس سفر نامہ   سے ایک  حد  تک  آشنائی ہوگئی تھی ۔اور فطری  طور   پر یہ  امر  اس کتاب  کے  پرزور  استقبال  کا سبب بنا ۔اس  طرح کے  کتاب بازار  میں آتے ہی   ختم ہوگئی ۔‘‘(۱)


شاملو  نے ’’تحقیقی  و تجزئیاتی مرکز  برائے  ایرانی  مسائل ‘‘(سیرا)کی دعوت  پر امریکہ کا سفر کیا  تھا ۔(۲)انہوں    نے  ایرانیوں  کے   درمیان     ایک  تقریر  میں  کہا تھا :’’آج کل میں   طنزیہ   اور مزاحیہ   پیرائے میں  ایک   سفر نامہ  لکھنے میں  مشغول ہوں ۔لیکن  یہ   کوئی ذاتی  سفرنامہ  نہیں ہے بلکہ یہ  سفر نامہ    قاجاری   حکومت کے   ایک  فرضی  بادشاہ  جو  احتمالا’’منحوس   قبیلہ ‘‘ سے  تعلق  رکھتا ،کی طرف سے بیان  کیا جارہاہے ۔تاکہ  اس کے   ذریعہ دو  ثقافتوں کے ٹکراؤ اور  سماجی    لاتعلقی کو  بہتر  طور  پر بیان  کیا  جاسکے۔‘‘ ’’دوثقافتوں کے ٹکراؤ اور  سماجی لاتعلقی ‘‘ سے ان کی مراد   مہاجر  فارسی  زبان  اور  میزبان  ملک کی   ثقافتوں  کا ٹکراؤ تھا کہ وہ وقت   بھی طنز  یہ  نسلوں سے سےخالی  نہ تھا ۔احمد شاملو  انہیں   طنزیہ   نسلوں کو    اس کتاب میں برملا  کرتےہیں  اور  قارئین کے  سامنے پیش کرتے ہیں ۔

ناصرالدین  قاجار  سفرنامہ  لکھنے میں   مہارت  رکھتاتھا۔اس کےمقامات  مقدسہ کی زیارت ،مازندران  اور خراسان   کے سفر اور اسی طرح   یوروپ کے سفرنامے    ایرانی  ادب  میں   سفرنامہ   نویسوں کے لئے  بہترین    آثار   کے عنوان  سے  محفوظ کئے گئے ہیں ۔اس قاجاری   بادشاہ  نے   یوروپ کے  اپنے  پہلے  اور دوسرے  سفر نامہ کو  خود  لکھا   تھا او ر تیسرے  سفر کا سفر نامہ  اس کے   بعض  ملازموں  جیسے  فخر الدولہ ،ابوالقاسم خان   ناصر الملک ،اور  ابوالحسن خان  فخر الملک  کے  ذریعہ  لکھا  گیا  تھا ۔

شاملو  اس   سفرنامہ کے مقدمہ  میں   لکھتے ہیں:’’بعض  لوگوں کا  خیا ل ہے کہ  میرے  اس   سفر  نامہ   جس کو میں نے  ۱۳۶۸۔۶۹  کے دوران  امریکہ میں  لکھا تھا ، کا  مقصد  ان  الٹی سیدھی   باتوں  کا جواب  دیناہے   جو   ایرانیو  ں  کے   فارسی  پریس  کی طرف   میری  ’’بارکلی‘‘یونیورسٹی   کی   تقریر کے رد  عمل میں  شائع ہوئی  تھیں۔  جبکہ    قطعی  ایسی کوئی بات نہیں  کیوں   کہ  وہ  باتیں جواب  کے قابل ہی نہیں  ہیں ۔میرا  ہمیشہ سے یہ   نظریہ  رہا ہے کہ  ایران   پرآمرانہ حکومت کرنے  والے افراد  ایک  سے بڑھ کر  ایک  بے وقوف  رہے ہیں ۔اور   میں  بہت  عرصہ  سے  اس  قسم  کے حاکموں کےبارے میں   کچھ  لکھنا  چاہتا   تھا  ۔اور  امریکہ  میں  مجھے  اس کام   کو انجام  دینے کی فرصت مل  گئی۔‘‘

مقدمہ میں  آگے   کہتے ہیں:’’نشر ہونے   سے   پہلے  جن  دوستوں نے   میرے اس سفر نامہ کا   مطالعہ کیاتھا   ان میں  سے   میری   اہلیہ کے علاوہ    جو   شروع  ہی  سے  اس کو تحریرکرنے کے مخالف تھیں،سب نے  اس کو  ایک کامیاب  کتاب  کے طور پر  تشخیص  دیا  تھا۔ایران  واپس آکر  اس    فائل کو   بند  کرنے  کی  غرض  سے جب میں   نے دوبارہ  ایک  نظر   مظفر الدین  شاہ کے   یورپ   کے سفرنامہ اور  ’’روزنامہ  خاطرات   اعتماد السلطنۃ ‘‘ پر ڈالی  تو   اس نتیجہ  پر  پہونچا کہ  میں  اس  کتاب میں  مثالیں بیان  کرنے میں   کامیاب  نہیں ہوسکا  ۔ (کیوں کہ  )ہماری  تاریخ کے   احمق  حاکموں کے کہکشان  کا دائرہ   اس   سے کہیں  زیادہ  وسیع ہے  جیسا  میں  نے  ’’ روزنامہ سفر میمنت اثر ایالات متفرقہ امریغ ‘‘ میں    خیال کیا ہے ۔‘‘

اسی  طرح  شاملو آگے لکھتے ہیں:’’میر ی محدود  فکر  ونظر   اس  خالص    رسوایئ کو   عیاں  کرنے سے  مانع   رہی    جبکہ  خود  ان   تاریخی   ہستیوں  نے  کمال  حماقت کے ساتھ  اپنے ناقابل توصیف    کارناموں  کو  ایران کے  تاریخی  دستاویزات میں محفوظ  کیا ہوا ہے۔قارئین  کے  لئے   «روزنامہ خاطرات اعتماد السلطنہ» کا  یہاں لکھنا   ممکن  نہیں  ہے  لیکن  آپ  ناصر الدین  شاہ کے دربار کے   ہر  روز کے واقعات  اس  میں دیکھ  سکتےہیں ۔اس  با ت کو  میں       اپنی کتاب  میں  مثالوں  کو   صحیح   طور  پر بیان  نہ کرسکنے کے دلیل  کے طور  پر لایا  ہوں ۔‘‘


انہوں  نے  آبا ن ۱۳۶۸ میں  برکلی   یونیورسٹی کی    تقریر میں  بھی   ا مریکہ کے سفرنامہ  کے  بارے میں  ذکر کیا  تھا:’’البتہ یہ سفرنامہ  شخصی نہیں  ہے بلکہ ایک   فرضی بادشاہ  جو  احتمالا زمانہ  قاجار کے منحوس    قبیلہ  سے تعلق  رکھتا ہے کی   طرف  سے بیان کیا  جارہاہے تاکہ   دو ثقافت کا  ٹکراہ اور سماجی  لاتعلقی کو   ظاہر کیا  جاسکے۔اور  اس  کو مزاحیہ  پیرائے   تحریر کرنےکا  مقصد یہ  ہے کہ  اس  طرح  تنقیدی   پہلؤوں کو  بہتر   طور   پر بیان کیا جاسکتا ہے ۔

وہ  آگے لکھتے ہیں’’آج شام  ہمارے   چند  نوکر  امریکی   علما  کے ساتھ  سر جوڑ کر بیٹھے  تھے  تاکہ   حکومت اور  سلطنت کے سلسلہ میں   گفتگو کریں  ۔ تبادلہ  خیا ل کریں  اور  کچھ  معلومات  حاصل  کریں ۔میری   نیت   یہ  تھی     کہ    لاٹری ،کاروں  ،کشتیوں  اور  تیل  کے کوئیں  کھود  نے کی   ذمہ داری  دیکر دیکھوں  کی  یہ  کتنے کام  کےلوگ  ہیں ۔لیکن  انکی گفتگو کے ماحصل  یہ   نکلا  کہ وہ  دوسروں کے تابع  اور مطیع   محض ہیں۔امریکی  حکومت   مسموع  اور  جعلی قرار  کی   بنا پر نہ   خدائی  عطیہ  ہے اور  نہ  ہی  پادشاہی  شان و شوکت۔اس  کے لوازمات  میں  سے  ہےکہ  نہ  وہ   ہمیشہ رہنے   والی ہے اور نہ   ہی  قابل  وراثت ہے۔نہ اس کے پاس   بھرا  ہوا  خزانہ  ہے اور  نہ ہی  قابل دید  قدرت۔نہ اس کے  پاس  ایسے چمچے اور چاپلوس  ہیں   کہ  اپنی  حکومت   کے  ایک حصہ کو  انہیں   بیچ دے اور  نہ ہی  ایسی  رعایا  کہ  بہ وقت ضرورت   ان کو   چوس سکے۔خلاصہ  یہ   کے  ہاتھی کا   فضلہ  ہے   جسم میں نہ  بو ہے  اور  نہ  کوئی   خاصیت ۔ایک  بے مصرف  عجیب  چیز ہے ۔خدا ہمارے  اجداد کی   مغفرت   کرے   کہ ہم    ان کے مثل نہیں  ہوسکتے:خوشا بحال اے   سستے  شہر کے لوگوں ۔اے حقیقی  بادشاہوں ۔یہ  ملک چند  اوباشوں اور   غنڈوں کا ملک ہے جن میں سے ہرایک     کسی نہ کسی  شئ  کا  بے تاج  بادشاہ  ہے :ایک   تیل کا بادشاہ ،ایک  بنائی   اور ٹیکسٹائل  سے  متعلق   شے  کا  سلطان ،کوئی شامی  پستہ پر حاکم  تو  کوئی   ٹایلٹ   پیپر  یا ٹیشو پیپر  کا   بادشاہ،کو  ئی   جیم جیم   ،کینڈی  ،بیری  اسٹرپس  جیسے  جنک فوڈ کا  پر قابض ہے   تو کوئی  حرام اندوں کے میک   ڈونالڈ کا مالک اور  وہ  پالکونک  ہے۔کوئی   خواتین   کے لباس پر   حکومت کررہا ہے   کہ  ہر  سال  نئے  فیشن کے طور ا ن کی  آستین ،پاینچے ،کالر  وں کو چھوٹا  بڑا   اور  تنگ  اور  ڈھیلا  کرتا رہتا ہے ۔ایک    رقاص  خانہ  کا مالک ہے اور ایک   مطرب خانہ  کا ،کوئی  نشہ آور اور مسکرات  کا سلطان تو  کوئی جوئے کے  اڈوں اور  ہر قسم کی برائیوں  کا بادشاہ  ۔۔۔خلاصہ یہ  اس دیا رمیں  ایک  سے  بڑھ کر ایک  بادشاہ  ہیں۔‘‘

۱۳۶ صفحا ت  مشتمل   اس  کتاب  میں   مختلف  فصلیں  ہیں ’’روزانہ کے واقعات‘‘برقلی کی   شہرت کا   ذکر‘‘اللہ صفا‘‘ کیلیفورنیا  کی   وجہ  تسمیہ ‘‘ ،’’گردش   ایام کی شکایت کا  تکملہ‘‘،’’تاریخی یادوں کا کچھ حصہ  جنکو   سونے  کے پانی سے لکھا  جانا چاہئے‘‘،’’پانی کے  اندر کی  فصل   جس  کا جواب  ہوا میں ہے ‘‘،’’خدا   کے  فضل و  کرم  کے  شاخ ودم  نہیں  ہوتے‘‘،’’سعدی    علیہ  الرحمہ  کی زبان    خراب  ہورہی  تھی ،الحمد للہ۔۔۔‘‘،’’اپنے والد  کی قبر  پر ہنسا  اور  کہا  کہ   آخری  بادشاہ نامہ  اچھا ہے ‘‘،حکومت   کےحالات  بہتر ہیں‘‘

احمد  شاملو(۲۱ آذر ۱۳۰۴ ۔۲ مردا  د ۱۳۷۹ ش) اسلامی   انقلاب سے قبل اور بعدکے ایک     شاعر ،مصنف،اڈیٹر، محقق،مترجم ،ثقافت نویس اور   مصنفین  کی انجمن کے بانی  تھے ۔انہوں نے  ۱۳۲۶ ش میں پہلی بار   اپنا  شعری    مجموعہ  «آهنگ‌های فراموش شده» کے عنوان  سے شائع  کروایا اور  اس کے  دس  سال کے بعد  ہوا ی  تازہ  شعر سپید کے عنوان  سے  مجموعہ  پریس ، سےکتاب  شائع کی (۳)۔

 



 
صارفین کی تعداد: 3733


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 
ساواک کی تجویز کا جواب

یونیورسٹی میں تعلیم جاری رکھنے سے انکار،

میں ایک سال سے غیر حاضر تھا اور حالات کافی تبدیل ہو چکے تھے۔ اس سے قبل، میرے دوست سیاسی معاملات سے لاتعلق رہتے تھے لیکن اس بار وہ بہت جوش اور احترام سے میرے استقبال کو آئے۔
حجت الاسلام والمسلمین جناب سید محمد جواد ہاشمی کی ڈائری سے

"1987 میں حج کا خونی واقعہ"

دراصل مسعود کو خواب میں دیکھا، مجھے سے کہنے لگا: "ماں آج مکہ میں اس طرح کا خونی واقعہ پیش آیا ہے۔ کئی ایرانی شہید اور کئی زخمی ہوے ہین۔ آقا پیشوائی بھی مرتے مرتے بچے ہیں

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔

شدت پسند علماء کا فوج سے رویہ!

کسی ایسے شخص کے حکم کے منتظر ہیں جس کے بارے میں ہمیں نہیں معلوم تھا کون اور کہاں ہے ، اور اسکے ایک حکم پر پوری بٹالین کا قتل عام ہونا تھا۔ پوری بیرک نامعلوم اور غیر فوجی عناصر کے ہاتھوں میں تھی جن کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں تھا کہ وہ کون لوگ ہیں اور کہاں سے آرڈر لے رہے ہیں۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔