سردار محمد جعفر اسدی کی یاداشت

کتاب "تیسری ہدایت"

محمود فاضلی

2015-08-23


ہدایت  سوم

سردار  محمد  جعفر اسدی  کی   یاداشت

سیدحمید  سجادی

پریس:سورہ مہر

پہلی  طباعت:۱۳۹۳

قیمت:۱۳۹۰۰ تومان

سید  حمید سجاد  منش  نے  کتاب’’ہدایت سوم ‘‘ میں   سردار  محمد  جعفر  اسدی   (۱) کی  بچپن سے  لیکر   مسلط کردہ  جنگ کے خاتمہ تک  کی  یادوں کو  تحریر کیا ہے۔ یہ   کتاب  ان ستر  واقعات کو  شامل  ہے جن میں  سردار  اسدی  کے جوانی کے  دور اور  شہیدمحراب  آیۃ اللہ مدنی سے ملاقات ،انقلاب سے پہلے کی مزاحمتیں ،انقلاب کی  کامیابی  اور مسلط کردہ   جنگ کا تذکرہ کیا  گیا ہے ۔کتاب  ’’ہدایت  سوم ‘‘علاوہ اس کے  کہ تمام  مخاطبین  کے لئےقابل  مطالعہ ہے ،  اہل   فارس کے لئے زیادہ  دلچسپ  کتاب ہے۔ بالخصوص ان   سپاہیوں کے لئے جن کے کمانڈر سردار  اسدی  تھے۔اس کتا ب کے  ایک  حصہ میں  صوبہ  فارس کے   سپاہیوں کی  شجاعت کی  طرف  بھی اشارہ کیا گیا ہے ۔اس  کتاب کی خاصیت کے بارے میں سجادی کا  خیال ہے ’’سب سے نمایاں  نقاط میں سےایک  جس نے مجھے اس   کتاب کو  لکھنے کی   ترغیب دلائی   وہ سردار  اسدی  کے  مسلط کردہ جنگ کے  اور   ملک  کے  دفاع میں بعثی   فوج سےمقابلہ کی  پہلے سال  کی   یادداشت ہے ۔ایسی یادیں جو  بہت  کم فوجیوں کی  طرف  سے سننے میں   آئی ہیں ’’کتاب ہدایت  سوم ‘‘ایسی یادداشت  ہیں جنہیں داستان کے  پیرائے  میں   بیان کیا  گیا ہے ۔ایسی  یادیں جن کا  سلسلہ ایک دوسرے  سے  مربوط اور  جڑا ہواہے تاکہ  مخاطب  کے لئے   مزید    دلچسپ ہوسکے‘‘۔

جب   سردار  اسدی  کی  یادداشت کے سلسلہ میں   سجادی  منش کو   کتاب لکھنے   کی  پیش  کش کی گئی  تو  ان  کے  پاس   ماخذو ں  میں  صرف   انکے  انٹرویو کی   ویڈیو کیسٹ اور سب سے  اہم  خو د سردار اسدی  تھے۔ آڈیو اورویڈیو  انٹر ویو کو  دو فصلوں  میں  بیان  کیا   گیا  ہے  اور  تیسری  فصل   دستاویزات اور  تصویروں  سے  مخصوص ہے ۔کتاب کی   پہلی جلد   میں   ان  کے  بچپن سےلیکر  جنگ  کے  خاتمہ  تک  کے واقعات کو  بیان کو بیان  کیا گیا  ہے ۔اور  دوسری  جلد میں  مختصر یادوں  کو  بیان  کیا گیا ہے  جن میں  تاریخ  اور  زمانہ کی  ترتیب  کا خیال  نہیں  رکھا گیا ہے ۔اور  یہی  امر   محققین کے  لئے  مشکل  کا سبب بنا  ہے ۔امیدہے  کہ   ناشر  اگلی  طباعت میں   اس  اہم   امر کو ضرور  انجام  دیں  گے۔

مصنف  کتاب کے  عنوان   کے  انتخاب  کے سلسلہ  میں  یوں  وضاحت  کرتے  ہیں :’’اس کتاب میں  اسی عنوان سے ایک    عالم  دین  کے  ذریعہ  ایک  بڑ ی خوبصورت  روایت کو بیان کیا  گیاہے ۔ان کا  اعتقاد ہے کہ  پروردگار عالم انسان کی   تین   قسم کی  ہدایت کرتا  ہے  جن میں   سے  تیسری ہدایت سب سے زیادہ  اہمیت کی حامل ہے ۔پھر  وہ   اشارہ  کرتے  ہیں کہ  وہ سپاہی  جو  اس  وقت   جنگ میں  پناہ  گاہوں(سنگروں )میں   نشانہ لگائے   بیٹھے  ہیں اور اپنی  جان کو   ہتھیلی  پر  لیکر  اپنے کو  خطرے میں  ڈالے ہوئے  ہیں    پروردگا   کی   تیسری   ہدایت  ان  کے شامل حال ہے۔البتہ  اس  بات سے  میں نے  ایک  پوشید ہ   معنی  حاصل کرتے ہوئے  اس  کتاب کا  نام ہدایت سوم  انتخاب  کیا  ہے۔اور میں  معتقد ہوں کہ  لشکر  اسلام کے تما   م  سپاہی منجملہ  آقای  اسدی  اسی  تیسری   ہدایت  کو  شامل ہیں ۔ تیسری  ہداہت   وہی  ہدایت   ہے تو انسان کا  ہاتھ  پکڑ کر   منزل  مقصود تک  پہونچادیتی ہے‘‘۔مصنف   کی  نظر میں  ’’محمد   جعفر  اسدی   کی  یادداشت میں  ان کی ذاتی  یادوں  اور شہدا  کے واقعات کے  علاوہ  ابتدا  سے  آخر تک  ایران اور عراق کی جنگ  پر ایک نگاہ  ہوجاتی  ہے ۔اور  وہ  شخص    جسے  اس جنگ سے آشنائی   نہیں  ہے   ان دنوں  کے واقعات کو  پڑھ  کر  اسے آشنائی  حاصل ہوجاتی ہے ۔‘‘

مصنف نے  فصل ’’اولین   لکہ ہای  خون ‘‘ یعنی خون کے پہلے قطرات کے  نشان  ،میں     ۱۳۴۲ ش میں ایک   ۱۷ سالہ  جوان   کے اندر   ایک چنگاری  کے روشن  ہونے اور  اس کے یہ  جاننے  کے تجسس کو  کہ  کیا   ہونے  والاہے ،  بہت ہی  واضح  طور  پر بیان   کیا ہے ۔ اس جوان  نے  زندگی میں   پہلی بار   مظاہروں اور  حکومت کے مخالف نعروں ،ہمہموں ،پولس   افسر کے ہاتھ میں اسلحہ  اس کا آگ ببولا ہونا ،عوام  کو  کفن پہنے  ہوئے  موت  کے  لئے  آمادہ رہتے ہوئے احتجاج   کرنے   کا   پہلی بار  مشاہدہ   کیا تھا۔اس نے  پہلی   بار  عوام کا ناحق   بہتا ہوا خون  دیکھا  تھا۔اسی  حادثہ کے دوران  حکومت   چند افراد  منجملہ  چند  علما کو   گرفتار کرتی ہے۔حکومت یہ خیال  کرتی ہے   کہ   ہم نے ان  علما اور  عوام کو  گرفتار کرکے   اس  احتجاج اور اعتراض  پر   کنٹرول  کر لیا ہے  لیکن  درحقیقت  شہنشاہی  نظام سے مقابلہ کے لئے   علمااور  جوانوں کی   طرف سے   یہی  امر  پہلا  قدم قرار  پایا۔

راوی  اپنےسربازی (فوجی  خدمات ) کے دور کو تلخ  دور کے نام سے یاد کرتے ہوئے  اور یوں لکھتے ہیں :’’فوجی   چھاؤنی  کی وہ   گھٹن کے   دو سال   جہاں     بدمز اج    افسروں   کو  برداشت   کرنا  پڑتا تھا  اور  بڑے  عہدے داروں  کی  زبردستیوں   کو  جھیلنا پڑتا  تھا ،یا  یوں کہا جائے کہ   غربت کا دور  تھا۔جس میں   سارے سرباز   شامل  تھے۔ہمیں    سخت فوجی   مشق  کرنی  پڑتی  تھی  لیکن  اس باوجود   ترقی   صرف  بڑے  عہدے  والوں  کوہی ملتی تھی ۔اور ہم محروم  ہی   رہتے  تھے‘‘۔یا   راوی  اس  دور  کو  خواب  پریشاں اور  شب بیداری  سے   یا د  کرتے ہیں   جس   نے  ہر  سرباز کو   مشکل میں   ڈال رکھا تھا۔اس سلسلہ میں   وہ یوں  لکھتے ہیں :’’جب حساب  کی  تکمیل  کا پرچہ  ہمیں   دیا گیا  اور میں   چھاؤنی   کے دروازے سے باہر  نکلا  تو   میں   نے  احساس کیا   کہ  میرا بدن   ایک  ایسے لوہے کی  مانند ہوگیا  ہے جسے    مسلسل دھوپ  کی  تپش   میں   رکھا گیا ہو  اگر  اسپر  پانی   ڈالاجائے  تو  وہ  پانی  فورا  سوکھ جائے گا‘‘۔

وہ     کویت میں   اپنے عارضی شغل    کے سلسلہ اور  اپنے گھر والوں  سے   پہلی  بار  گفتگو کرنے کو   آڈیوں   کیسٹ میں  رکارڈ کرنے کو   یوں   بیان   کرتے ہیں:’’میں  نے ایک  کیسٹ لی اور  اسے  رکارڈر   میں  لگا کر  آدھے  گھنٹہ تک    اپنی باتوں  کو  رکارڈ کرکرتارہا ۔کویت  کی  زندگی  ،اوردوستوں  کے بارے میں  بتایا، بھائی  بہنوں   کے   بارے میں  پوچھا اور  سب سے  زیادہ  جذبات میں    والدین   کی  احوال  پرسی کی  اور اس  کیسٹ کو  ایران  بھیج دیا۔بات  کرتے  وقت میں   محسوس  کررہا تھا کہ  میرے  تمام  اہل خانہ   میرے سامنے موجود ہیں ۔اور  ان کی  اتنی  یاد  آرہی  تھی کی  اس بنا پر ان کے جواب کو   بھی  محسوس  کررہا تھا۔ایک  مہینہ    کے بعد   میرے  گھر سے  بھی  کیسٹ  آئی   میں   نے اسے   ٹیپ  رکارڈر میں  لگایا  اور  سننے  لگا  والد  صاحب کی  باتوں کو سنا ،بند کردیا  اور رونے لگا   پھر والدہ  کی  باتوں کو سنا   پھر بند کردیا  اور  گریہ کرنے لگا ۔جب  بھی کسی کی   آواز کو  سننتا    تو  رونا  آجاتا تھا   ۔ میرے  آنسوں  اجازت نہیں دے  رہے تھے  کہ  میں   پوری  کیسٹ  سن سکوں ۔پہلی بار  مجھے   کیسٹ  سن نے میں  چار گھنٹے  لگے   تھے  اب بھی    میری بہن  کی  آواز  میرے کا نوں  میں   گونج رہی  ہے کہ  روتے  ہوئے  کہرہی تھی’’جعفر  بھیا  تم پر قربان جاؤن ؛امام  حسین   ؑ کے صدقہ  میں   خدا  تم تمہیں  ترقی دے ۔کہ  تم  نے ہم  سب کو  گھردے دیا ۔جب  بھی میں   گھر میں  جھاڑو دیتی ہوں  تو   گریہ  کرتی ہوں  اور  تمہارے لئے دعا کرتی ہوں ۔کہ  اب یہ  گھر   ہمارا  ہے اور میں  اپنے گھر میں جھاڑوں  دیتی ہوں ۔۔۔‘‘

مھدی   فیروزی  جو   راوی کے  پڑوس میں  رہتا تھا  ،نے   اس  کی زندگی  میں   ایک  نیا باب کھولا۔اس سے پہلی  ہی ملاقات میں   معاشرے  کی  گھٹن  والے ماحول اورحکومت کے  ۲۵۰۰ سالہ جشن  کی برائیوں اور حکومت  سے  مقابلہ کے لئے  آیۃ اللہ  خمینی  کے نجف   سے آنے  والے پیغامات کے سلسلہ میں   گفتگو  ہوئی۔گویا  اس کے بعد  سے یہ  دونوں اس  چھوٹے  سے گروہ کے  رکن  ہوگئے تھے:’’ہم  لوگوں نے اپنے  پیسوں سے  ایک  چھپائی  مشین خریدا   اور  ایک  ریڈیواور  ریکارڈر ،جو  بے خبر عوام کو  باخبر کرنےا ور  اعلانات  چھاپنے کے لئے  کافی تھے ۔تاکہ اس کے ذریعہ  عوام کوحکومت کی  تمام  کارستانیوں سے آگا ہ کیا جاسکے۔‘‘

فصل   ’’آن  دونفر ‘‘یعنی وہ   دو افراد  میں   راوی  اپنے  دوست اور آیۃ  اللہ   شریعت مداری کے   مقلد  ایک  طالب  علم جو نورآباد میں   آیۃ  اللہ  شریعت مداری کی تبلیغ کرتا تھا، کے  درمیان    کے  نظریاتی  اختلاف  کو بیان   کرتے ہیں ۔ اور  اس  طالب  علم کے یورپ سے  ایک  مہینہ کے  سفر  کی واپسی  کے بعد  اس سفر کے بارے میں  لکھتے ہیں:’’وہاں  بعض  افراد   شاہ کی حکومت  کو  ختم کرنے  کے بعد  ایران   میں  حکومت  قائم   کرنے کے فراق میں  ہیں ۔وہ  وہاں   بیٹھ کر پروگرام تیار  کررہے ہیں ۔’’ہفت خطی‘‘سات  لکیروں   والا  ایک شخص   ہے جسکا نام یزدی ہے  ۔ایک لوفر  شخص ہے جس کا  نام قطب زادہ ہے ،ایک   عالم کا  خبیث بیٹا  بھی   ہے جس کا  نام  بنی صدر ہے  ۔ان میں   سے بہت سے  نام  ایسے ہیں  جن کومیں نے پہلی بار  سناتھا۔اور بعد  میں  اسی طرح جیسا کہ  مہدی نے  کہا تھا  وہ  لوگ آئے اور چند دنوں کے لئے حکومت  کو اپنے  ہاتھ میں لےلیا‘‘۔

ایسا  معلوم ہوتا ہے کہ  اس فصل میں  راوی   مناسب  الفاظ استعمال  نہیں   کئے ہیں ۔

آیۃ اللہ   مدنی کے   نورآباد   ممسنی جلاوطنی   کی فصل  میں   مصنف نے  ایسے  نکات کی  طرف  اشارہ کیا ہے   جو  ان کے   معتقدین کے  لئے   بہت  دلچسپ ہوسکتے   ہیں۔اور  احتمالا  دیگر  کتابوں  میں  ان  سے متعلق ان باتوں  کو بیان نہیں  کیا گیا ہے۔مصنٖف انجمن  حجتیہ کے بارے میں   ان کے  نظریہ کو    بیان  کرتے ہیں :’’آیۃ  اللہ   مدنی   نے  انجمن   حجتیہ کے ارکان کے انحرافات کو بیان  کرنا  شروع کیا ،شاہی  حکومت  کے ساتھ انکے روابط کو  بیان کیا   اور  یہ   کہ انکے اعمال   ظالموں کی  مرضی کے  مطابق  اس لئے ہیں   تاکہ  امام   زمانہ  عج کا ظہور ہوجایئے۔‘‘

راوی   فصل  ’’دیدہ بان ‘‘نگہبان میں   توپ خانہ  کے  کی  نگرانی   پر مامور  ایک   افسر کے سلسلہ میں   کہتے ہیں:’’ایک   جوان   افسر   کو  پسند  نہیں   تھا  کہ  ہم اس کے   بارے میں   کچھ معلوم  کریں ۔نماز  کے وقت   وہ  اچانک   اپنی  جگہ  سے  اٹھ کر  چلا  جاتا تھا ۔ایک  دو بار  ایسا ہواکہ   وضو  کے وقت اس کو دیکھا  تو   سوال  کرنے  کے بہانہ  اس کو  شیخ  کی  صحن  میں  لے آئے  اورصف  نماز میں  کھڑا  کردیا ۔‘‘ وہ  نہر   والے  واقعہ کی  یوں وضاحت  کرتے ہیں :’’سوائے اس   مامور افسر  کے سب لوگ  خشکی  پر  پہونچ گئے  تھے  ۔بعد میں تلاش  کرنے  پر اس  کی  لاش  ملی   اس  کے جیب   میں  سے چند کاغذات  ملے جو  ایک  فدائی  اعلا ن  تھا   جس کو  اس وقت سب سے  پرھ سکتے  تھے  ۔اور اس وقت ہمیں   پتہ چلا کہ   وہ  ان چند   فریب  خوردہ  کمیونسٹوں  میں سے تھا ۔‘‘راوی  نے   اس  ٖٖفصل    یا  اس   کے حاشیہ میں     مسلط کردہ  جنگ  کے دوران  اس  گروہ کے   موقف  کی  طرٖ  ف  اشارہ کیا ہے ‘‘۔انہوں  نے فصل ’’چریکہای مخملی ‘‘ غیر   مستقل  فوجیوں  ،میں   ایک  غیر مستقل فوجی  گروہ کی طرف اشارہ  کیا ہے  جس کا  تعلق  کس سے  تھا بیان  نہیں کیا ہے  ۔

راوی اپنی  یادداشت میں   اس وقت کے سپاہ کے  کمانڈر کی  رپورٹ کو   جو اس نے انہیں  سے بیان کی تھی   یوں  بیان کرتے  ہیں :’’اس  نے  اپنی     گذشتہ  رپورٹ نہیں   پڑھی   تھی ؛اگرچہ  یہ   کمانڈر    یہ چاہتا تھا  کہ  جلد از جلد  اپنی   تعلیم  کو  پھر سے  شروع کرے  اور  دوسری راہ  اختیارکرے ۔ایسی  راہ   جس   کا  تعلق دور دور  تک محاذ سے نہ ہو۔یہ ایسا  واقعہ  تھا جسے  آٹھ سال کی جنگ کےدوران    نہیں  دیکھا  تھا  حتیٰ ایک سرکش  بھی   ہمیں    نہیں ملا   تھا۔‘‘راوی اس  بات کا شکوہ کررہے   ہیں    کہ ملک  کی اس حالت میں   اسے اپنی تعلیم  کی پڑی  تھی ۔

یہ کتاب   راوی   کی  دفاع مقدس  کی  یادوں سے  پر  مبنی ہے وہ   پندرہ  سالہ   داریوش  نامی  جوان کی   شہادت  کی  یادداشت کو  بیان  کرتے ہیں  جو  محاذ  میں داخل ہونے سے پہلے سپاہ میں    نگہبان تھا اور بغیر   مالی  درخواست کے  جنگ  کے لئے  چلا  گیا :’’ایک  روز  وہ  ایمبولنس  کو   چھپا  رہا  تھا  کہ  اسی  دوران  سو میٹر  کے  فاصلہ  پر گولی  آکر اس  کو  لگی۔داریوش  جب    گاڑی  سے  گرا  تھا   تو  اس کے  بدن   پر  ایک بھی نشان   نہیں   تھا  ۔اس کے محلہ  نورآباد  کے  ایک  جوان  نے  اس   کو دیکھنے کے بعد اپنے سر وصورت کو  پیٹنا   شروع کردیا   اور  اضطراب کیسا تھ  کہا ؛’’خدا  اس کی  بہن  پر رحم  کرے ‘‘میں  نے کہا :’’اس  کی ماں   پر کیوں نہ  رحم کرے ؟‘‘ اس  نے کہا   :’’اگر  تم ان دونون  بھائی بہنوں کو  پہچانتے ہوتے   تو  ہرگز  یہ سوال نہ پوچھتے‘‘۔گولی  اس  کی کنپٹی سے  ہوتے ہوئیے   اس کے  دماغ میں   جالگی  تھی ۔داریوش  کے محلہ  والے  لڑکے نےصحیح  کہا تھا :’’ایک   مہینہ  بھی  نہیں   ہوا تھا  کہ اس کی  بہن کے  انتقا کی   خبر  آگئی  ‘‘۔اس   فصل   میں    مصنف  اور   جمع آوری  کرنے  والے افراد  موضوع کو مزید   جذاب   بنانے کے لئے اس   حادثہ اور  ااس کے   اثرات  کی   زیادہ  وضاحت  کرسکتے تھے ۔

اس  کتاب  میں  آٹھ  سال   جنگ اور دفاع  کے  بہت  سے   سپاہیون اور  فوجیوں کی  کی   شجاعت اور شہادت کا  تذکرہ کیا  گیا ہے ۔اور  حقیقت  یہ ہے کہ   یہ  پتہ لگانا   کہ  کون سی یادداشت     سب سے  زیادہ جذاب اور  دلچسپ   ہے  مشکل ہے ۔راوی    آپریشن  والفجر   (۱) کی  طرف اشارہ  کرتے ہوئے لکھتے ہیں :’’عراقی  شہری  عبدا لجلیل  آکر   ایرانی  فوج سے  مل گیا  تھا  اور  اس کے  بارے میں خبر لائی  گئی کہ آخری  با ر اسے    مائین   بم کے  میدان میں  اس  حالت میں  دیکھا  گیا  تھا کہ  اس  کا بدن شدید  زخمی   تھا اور  قبلہ  کی  طرف   لیٹا  ہوا تھا ۔عراقیوں  نے اس  قدر   مائن   بچھائی ہوئی تھی  کہ  اس  کا جنازہ  باقی نہ بچا تھا ۔کئی سالوں کے  بعد   عراقی    عوام  کی  تحریک  کے دوران   اس  کے اہل خانہ  کو صدام نے   عراق  سے  نکال  دیا اور  وہ لوگ    اہواز  (ایران) میں  آکر  بس گئے۔انہوں  نے  عبد الجلیل کی قبر کے  بارے میں  پوچھا لیکن  ہمارے  پاس    اس کا  کوئی جواب   نہیں  تھا ۔عجیب   ملاقات  تھی  اس کی یاد  کسی  طرح  سے   ذہن  سے جانہیں   رہی  تھی ۔اس کی  مجلس  عزا  اور  اس جیسی   مجلسوں  میں  عبد الجلیل کا  نام آتے ہی  انکی صدائے  گریہ بلند ہونے لگتی تھیں ۔اس  نے  آپریشن  پر جاتے  ہوئے   وصیت  کے طور  یہ الفاط کہے تھے:’’اگر شہید  ہوگیا   تو  شاید  میرا  جنازہ  نہ ملے  اگر  مل جائے  تو   اہواز کے  بہشت آباد میں   دفن   کرادیجئےگا ۔اور  میری  قبر  پر لکھ دیجئے گا :’’انا  غریب   یا  ابا عبد اللہ ؑ‘‘یعنی اے  ابا عبد اللہ  حسین  میں  بھی  غریب الوطن ہوں ۔ جب  ان کے   والد  اور   بہن کو  بے تحاشہ   روتے  ہوئے   دیکھا تو   مجھ کو  غبطہ نہیں  ہوا کہ اس کی  ماں  کیوں  نہیں   ہے اور  ایران   آنے سے  پہلے   اس کی  دوری کی  تاب  نہ لا سکی اور  عبد الجلیل  سے جاملی ۔‘‘

کتاب کی  یادداشت  کو  جنگ  کے  کمانڈر نے  بیان کیا  ہے اور اس  کے ساتھ ساتھ  جنگ کے خوبصورت  اور قابل دید مناظر  کی  بھی روایت  کی ہے ۔اسدی  نے اس کتا  ب میں یہ کوشش کی ہے  کہ کامیابیوں اور  ناکامیوں دونو ں  کواس کتاب   میں   بیان کیا  جائے۔اور  دفاع  مقدس   کے سلسلہ میں ہونے  والی  بعض تحریفوں کے سلسلہ میں اس  کتاب  کی  ایک  فصل  میں  کہتے ہیں:’’مبالغہ  آرائی کو   بند کردینا  چاہئے اور جان لیجئے  کہ  اس  آٹھ سالہ  مقدس   دفاع  کے بارے میں   افراط اور تفریط  اس  کی اہمیت اور عظمت  پر ایسی  ضرب لگاسکتی ہیں   جو  ناقابل جبران  ہوگی ۔جس طرح    ہماری  عوام  نے  بڑی  بڑی کامیابیوں  کا مشاہدہ  کیا تھا  اسی  طرح  کچھ ناکامیاں بھی  ہمارے  نصیب میں   آئی  تھیں ۔ایمان دا ر   ماہرین کو   اس کا  تجزئی  ضرور  پیش کرنا  چاہئے‘‘۔

پاورقیاں :

۱۔سردار  اسدی  ۱۳۲۶ ش  میں   شیراز کے مھدی آباد   میں  پیدا ہوئے تھے۔تحصیل   معاش  کی خاطر   جنوبیوں  کی  طرح  بعض خلیجی  ممالک کا سفر کرتے  تھے ۔وہ  کچھ   سالوں کے  لیئے  کویت  بھی  گئے تھے۔جس  وقت   وہ  واپس آئے  تھے اس وقت   اسلا می انقلاب کی   تحریک   اوج اور  شباب پر تھی۔وہ  انقلابی مزاحمتوں کے لئے  نورآباد  ممسنی   کی طرف ہجرت کرگئے۔اسلامی   انقلاب کی کامیابی اور سپاہ کے  تشکیل  پانے کے بعد صوبہ فارس   کی  سپاہ کے قیام  عمل  میں آنے سے  پہلے   ہی جواد منصور  ی  کے حکم سےنورآباد ممسنی  میں    سپاہ  تشکیل  دینے  پر مامور کردئے   گئے۔جنگ کے   شروع  ہوتے  ہی  اسدی،نورآباد کی  سپاہ کےساتھ   گلف  چھاؤنی   جاتے  ہیں اور  ’’فارسیات‘‘ ٹکڑی  کی ذمہ داری  سنبھالتے  ہیں ۔پھر  وہاں سے  کربلا  نامی    چھاؤنی پر  جاتے ہیں  اور  صوبائی   بریگیڈ  تشکیل  پاتے   ہی  ماہ  تیر ۱۳۶۱ ش  میں بریگیڈ  المھدی  کے  کمانڈر  کا  عہدہ  سنبھالتے  ہیں ۔اور  جنگ کے خاتمہ  تک  اسی عہدہ  پر باقی رہتے  ہیں ۔مہر   ۱۳۵۹ میں   انہیں  فارسیات  اہواز کا   ذمہ دار  بنایا جاتا ہے اور۲۰۔ خرداد  ۱۳۶۰ش کو  آبادان  کے  جنگی آپریشن  کے علاقہ   کی ذمہ داری انہیں سونپی جاتی  ہے۔۱۳۶۱ ش میں  انہیں بریگیڈ  المھدی  ۳۳  کا  کمانڈر بنایا  جاتا ہے اور اس  دوران  انہوں  نے «فتح‌المبین، بیت‌المقدس، رمضان، محرم، والفجر مقدماتی، والفجر 1 و 2، خیبر، بدر، والفجر 8، کربلای 2، 4، 5، 10، نصر4، ظفر 7، والفجر 10، بیت‌ المقدس 7 و عملیات مرصاد» جیسے آپریشن میں  کمانڈر کے فرائض  انجام دئے۔۱۹شہریور ۱۳۷۰ کو بریگیڈ  المھدی ۳۳ کو الوداع کہا   اور  ۲۰ شہریور  ۱۳۷۰ کو  لشکر  ۱۹  فجر کے کمانڈر  بنادئے  گئے۔انہوں  نے مشرقی  آذربائیجان میں سپاہ  عاشور  ا ۵ میں زمینی سپاہ   فوج     اور  انسپیکٹوریٹ جنرل اسٹاف کے سربراہ کی  جانشینی  کے فرائض انجام دئے تھے۔



 
صارفین کی تعداد: 3392


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 
ساواک کی تجویز کا جواب

یونیورسٹی میں تعلیم جاری رکھنے سے انکار،

میں ایک سال سے غیر حاضر تھا اور حالات کافی تبدیل ہو چکے تھے۔ اس سے قبل، میرے دوست سیاسی معاملات سے لاتعلق رہتے تھے لیکن اس بار وہ بہت جوش اور احترام سے میرے استقبال کو آئے۔
حجت الاسلام والمسلمین جناب سید محمد جواد ہاشمی کی ڈائری سے

"1987 میں حج کا خونی واقعہ"

دراصل مسعود کو خواب میں دیکھا، مجھے سے کہنے لگا: "ماں آج مکہ میں اس طرح کا خونی واقعہ پیش آیا ہے۔ کئی ایرانی شہید اور کئی زخمی ہوے ہین۔ آقا پیشوائی بھی مرتے مرتے بچے ہیں

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔

شدت پسند علماء کا فوج سے رویہ!

کسی ایسے شخص کے حکم کے منتظر ہیں جس کے بارے میں ہمیں نہیں معلوم تھا کون اور کہاں ہے ، اور اسکے ایک حکم پر پوری بٹالین کا قتل عام ہونا تھا۔ پوری بیرک نامعلوم اور غیر فوجی عناصر کے ہاتھوں میں تھی جن کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں تھا کہ وہ کون لوگ ہیں اور کہاں سے آرڈر لے رہے ہیں۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔