ماجرا محرم کا

ترجمہ: ابوزہرا علوی

2022-02-20


آیت  قاضی  طباطبائی  نے ۱۹٦۱کی  اپنی  مجالس  میں  جو انھوں  نے  مخلتف  انجموں  میں  پڑھنی  تھی، امام  خُمینی  کی  باتوں  کونقل  کیا۔ انکا  لحن  آج  تک  میرے  ذھن  میں  ہےکہ   آپ  نے  فرمایا:
"ائے  عزادارن  حسینی!  آیت  اللہ  خُمینی  نے  دستور دیا ہے کہ جو آپ  اس  عظیم  مکتب میں    عزادری  کرتے  ہو اور بنام  حسیین شعائر مذھبی  و دینی کا احترم  کرتے ہو اور اپنے پاک  اشکوں  کو انکی  راہ  میں  بہاتے  ہو، روا نہیں  کہ  تم   ایسی  جگہ  جاؤ  کہ  جہاں  تم  اشک  فشانی  کرو بعدمیں  اسی  جگہ  ناپاک  اشک  بہائے جائیں  !یہ  بات  درست  نہیں! کہ  اس  جگہ  نا جایا  جائے، افسوس  کہ  یہ  آپکے  آنسو! دستور ہے کہ  نا جایا جائے!۔"
اس   زمانے میں  یہ  رسم  تھی  کہ  عزاداری  کے ماتمی  دستے  مجلس  کے  ،بازارمیں  مجلس  ختم  ہونے کے بعد، روزانہ  ایک ایک  کرکے فوجی  افسروں کے  کلب  جاتے  اور شاہ  کے لئےدعا کرتے۔ وہاں  ظاہریہ  کیاجاتاکہ  شاہ  اورفوج  بھی  امام  حسین  کےعزادارہیں!بعض  ماتمی  دستوکےآگےشاہ  کی  بڑی  سی  تصورہوتی  گویاکہ ایک  طرح  کی  تعظیم  وتائید  کی  جاتی  اورملیٹری  کلب  میں  ماتمی  دستوں  کودعوت  دی  جاتی؛کہ  جہا  ں  عام  دنوں  میں  رقص  وسرور  کی  محفلیں  سجتیں  اورگانےبجانےکی آوازیں  آتی  اورمحرم کےان  دس  دنوں  میں  یاحسین  کی  صدائیں  آتی!!!!
آیت  اللہ  قاضی  نے  امام  خُمینی  کادستور  سنادیاتھاکہ  ملیتری  کلب نہیں  جایاجائےاورجوپہلی  انجمن  جوکلب  نہیں  گئی،    وہ  خیابان  کی  محلےکی  انجمن  تھی۔امیرخیزمحلےکی  انجمن  بھی  نہیں گئی!جتنی  بھی  انجمیں  تھی  سب  خیابان  کے  محلےباقرخآن  اورامیرخیزکےمحلےستارخان  میں  تھیں۔ہم  نے  بھی  مختلف  ٹولیاں  بنالی  تھیں  کہ  جوانجمنوں  کوکلب  جانےسےروک  رہے  تھے۔سب  سےپہلے  ہم  انجمن  میں  جاتےاورمعلومات  لیتےمثال  کے  طورپرکل  دومچی  کی  انجمن  کلب  جائے  گی۔ہم  بیس  افرد  جمع  ہوتےانجمن  کی  اگلی  صف  میں  کھڑےہوجاتےسینہ  زنی  کرتے  جب  دستہ  کلب  کے  قریب  پہچتاتوہم  زورزورسےیاحسین۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  یاحسین  کرناشروع  کردیتے  معمول  کی  رسم  کے  مطابق  انجمن  کاپرگرام  ختم  ہوجاتاپرچم لپیٹ  لیئے  جاتےاورکلب  جاناموقوف  ہوجاتا!۔ روزآنہ  ہم یہی کرتے  اور  آقاقاضی  کوروزانہ  کی خبریں دے دیاکرتے۔چنددنایسا  چلتارہاکتنی  ہی  انجمنوں  کوہم  نےروکا،جس  پرحساس  ادارےچوکنے  ہوگئےاورمتوجہ  ہوگئےکہ  انجموں  کا کلب  ناآناکسی  خاس  پرگرام  کے  تحت  ہےلیکن  وہ  کچھ نہ  کرپائے۔ہاں  البتہ  کبھی  ایسابھی  ہوتا  کہ ہمارےلئےمناسب  موقع  ناتھاکہ  ہم  کسی  انجمن  کوروک  سکیں  توہم  بھی  اس  انجمن  کو   ملیٹری  کلب  جانےدیتے۔
 
منبع: نعلبندی، مهدی، اعدامم کنید (خاطرات محمدحسن عبدیزدانی)، تهران، مرکز اسناد انقلاب اسلامی، 1388، ص 51 - 52



 
صارفین کی تعداد: 656


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 
حسن مولائی کی یادیں

سو افراد، سینکڑوں افراد، ہزاروں

وہ لوگ جو چند گھنٹوں پہلے جمرات جا رہے تھے تاکہ رمی جمرات کا فریضہ ادا کرسکیں اب تولیہ اوڑھے سو رہے تھے۔ جب جنازے ختم ہوئے، تو مجھے سمجھ نہیں آئی کہ مجھے کہاں لوٹنا چاہئیے۔ اچانک میرے پیروں نے کام کرنا چھوڑ دیا اور میں نے پہلی مرتبہ وہاں گریہ کرنا شروع کردیا۔ واپس پلٹ کر ان سفید پیکروں کو دیکھنا شروع کیا۔ پوری سڑک جنازوں سے سفید ہوچکی تھی۔ ایک جوان مرد کی آواز پر چونکا جو میرے ساتھ کھڑا تھا اور میرے پیروں کے سامنے چپلیں رکھ رہا تھا۔
حجت الاسلام والمسلمین جناب سید محمد جواد ہاشمی کی ڈائری سے

"1987 میں حج کا خونی واقعہ"

دراصل مسعود کو خواب میں دیکھا، مجھے سے کہنے لگا: "ماں آج مکہ میں اس طرح کا خونی واقعہ پیش آیا ہے۔ کئی ایرانی شہید اور کئی زخمی ہوے ہین۔ آقا پیشوائی بھی مرتے مرتے بچے ہیں

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔

شدت پسند علماء کا فوج سے رویہ!

کسی ایسے شخص کے حکم کے منتظر ہیں جس کے بارے میں ہمیں نہیں معلوم تھا کون اور کہاں ہے ، اور اسکے ایک حکم پر پوری بٹالین کا قتل عام ہونا تھا۔ پوری بیرک نامعلوم اور غیر فوجی عناصر کے ہاتھوں میں تھی جن کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں تھا کہ وہ کون لوگ ہیں اور کہاں سے آرڈر لے رہے ہیں۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔