کمانڈوز آپریشن کے بارے میں"پہلی بٹالین کے کمانڈر" کا بیان

مترجم: سید مبارک حسنین زیدی

2019-05-15


"پہلی بٹالین کے کمانڈر: بحری افواج کے افسر اکبر پیرپور کے واقعات"ایسی کتاب کا عنوان ہے جو صوبہ بوشہر کے آرٹ شعبہ میں تیار ہوئی ہے۔ اس کتاب کو سید قاسم حسینی نے ۲۷۲ صفحات میں لکھ کر تالیف کیا اور مزاحمتی ادب و ثقافت کے صوبائی تحقیقاتی مرکز اور مطبوعات سورہ مہر کے توسط سے یہ کتاب سن ۲۰۱۹ میں منظر عام پر آئی۔

کتاب کے "پیش گفتار" اور"مقدمہ" میں ہمیں اس بات کے بارے میں معلوم ہوگا کہ اکبر پیرپور، اسلامی جمہوریہ ایران کی بحری افواج کے ایک کمانڈو اور خرم شہر کے سقوط سے پہلے ۳۴ روزہ مقاومت و جدوجہد میں حاضر ہونے والے کمانڈوز میں سے ایک ہیں۔ جناب حسینی نے بھی کتاب میں موجود اپنے مقدمے میں انٹرویو کی ضروری تفصیلات اور کتاب کے تالیف اور تدوین کی کیفیت کے بارے میں لکھا ہے۔

"پہلی بٹالین کے کمانڈر" میں دس فصلیں، تصویری البم اور فہرست ہے۔ کتاب کی پانچ فصلیں راوی کے بچپن سے لیکر کمانڈو بننے تک کے حالات پر مشتمل ہے۔ چھٹی اور ساتویں فصل میں انقلاب اسلامی کی جدوجہد کے عروج سے لیکر عراق کی اسلامی جمہوریہ ایران پر مسلط کردہ جنگ اور اور ان سالوں میں راوی کے حالات سے مخصوص ہے۔ آٹھویں فصل، اس  فصل کو راوی کے خرم شہر میں حاضر ہونے سے مخصوص رکھا گیا ہے؛ وہ خرم شہر جو جدوجہد و مقاومت کر رہا تھا تاکہ صدامی افواج کے قبضہ میں نہ آسکے۔ نویں اور دسویں فصل میں راوی کے نومبر ۱۹۸۰ سے جب خرم شہر سقوط کر گیا، اب تک کے حالات موجود ہیں۔

بحریہ کے افسر اکبر پیرپور نے کتاب کی اُس خاص فصل میں خرم شہر کی مقاومت (آٹھویں فصل: کمانڈوز کا آپریشن)کے بارے میں بیان کیا ہے: "چند ہفتوں تک ہمارا کام یہ تھا کہ ہم صبح ہی سویرے، تقریباً چار یا پانچ بجے اٹھ جاتے۔۔۔ ناشتہ کرکے یا بغیر ناشتہ کیئے آبادان میں اپنے ہاسٹل سے خرم شہر آجاتے اور ہم میں جتنی بھی ہمت اور حوصلہ ہوتا ہم شہر کے مختلف علاقوں میں ظہر تک عراقیوں سے  جنگ کرتے۔ مغرب کے وقت جب عراقی  پیچھے ہٹ جاتے تو ہمارا کام بھی ختم ہوجاتا اور ہم آبادان واپس آجاتے اور اپنے آپ کو کل کی جنگ کیلئے تیار کرنے لگتے۔ کبھی دن کے وقت جنگ کے دوران ہماری گولیاں اور جنگی سامان ختم ہوجاتے ایسے میں ہم پیچھے ہٹنے پر مجبور ہوجاتے۔

خرم شہر میں ہمارے پاس کوئی حکمت عملی، کوئی خاص جنگی پروگرام اور جنگ کیلئے پہلے سے  طے شدہ کوئی پرواگرام نہیں تھا۔ ہمیں جس جگہ کے بارے میں بھی اطلاع ملتی کہ دشمن کی فوجیں وہاں پہنچ گئی ہیں اور رخنہ اندازی کر رہی ہیں، بغیر کسی تاخیر کے ایک گروپ وہاں جاتا اور دشمن کے نفوذ کرجانے والوں سے مقابلہ کرنا شروع کردیتا۔ البتہ ہمارے ساتھ علاقائی اور غیر علاقائی رضا کار جوان بھی تھے۔ ۔۔

عراقی رات کو خرم شہر میں رکنے سے ڈرتے تھے۔ ہمارے کمانڈوز اور شہر کے افراد رات کو جاتے اور ٹینک شکار کرکے لاتے تھے اور اس طرح اُنہیں نقصان پہنچاتے تھے۔ عراق سوچ رہا تھا کہ خرم شہر میں پورا ایک ڈویژن مستقر ہے! اسی ڈر و خوف کی وجہ سے شروع کے دو تین ہفتے تک وہ راتوں کو شہر  میں نہیں رکتے تھے۔

ہم راتوں کو آبادان میں محلہ بریم میں پٹرولیم کمپنی  کے گھروں میں سوتے تھے۔ عراق رات سے صبح تک ہمارے اوپر گولے برساتے۔ ہم لوگ اس قدر تھکے ہوئے ہوتے تھے کہ حتی دھماکے کی آواز سے بھی ہمیں بیدار نہیں کر پاتی تھی۔۔۔"



 
صارفین کی تعداد: 304


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 

ملتان میں شہید ہونے والے اسلامی جمہوریہ ایران کے کلچرل اتاشی شہید رحیمی کی اہلیہ کی روداد

علی کے ساتھ میری شناسائی اور ہماری ذمہ داریاں انقلاب کے ایام میں
اس کی مسکراہٹ کھانے سے اٹھتے دھویں کے پیچھے کھو گئی تھی اس نے فنگر چپس کی طرف اپنا ہاتھ بڑھایا تو میں نے ڈرانے کے لئے چمچہ اٹھا لیااس نے گرم گرم چپس اپنی انگلیوں میں دبایا اور مسکراتے ہوئے باہر کی راہ لی میں نے اس کا پیچھا کرنا چاہا مگر نہ کرسکی

کہنے لگا: اسکا دل بہت دھڑک رہا ہے۔۔۔۔۔۔

ایک پولیس والے نے پستول کے بٹ سے میرے سر پر مارا ۔ مجھے احساس ہوا کہ جیسے یہ لوگ حقیقت میں مجھے مارنا چاہتے ہیں ۔ میں نے اپنے آپ سے کہا اب جب مارنا ہی چاہتے ہیں تو کیوں نہ میں ہی انہیں ماروں۔ ہمیں ان سے لڑنا چاہئے۔ میرے سر اور چہرے سے خون بہہ رہا تھا اور میں نے اسی حالت میں اٹھ کر ان دو تین سپاہیوں کا مارا۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۷ واں پروگرام

کیمیکل بمباری کے عینی شاہدین کے واقعات

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۷ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۲ نومبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۷ دسمبر کو منعقد ہوگا۔"
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۹ واں پرواگرام (۱)

ایک ملت، ایک رہبر اور ایک عظیم تحریک

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۹ واں پروگرام، جمعرات کی شام، ۲۴ جنوری ۲۰۱۹ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اس پروگرام میں علی دانش منفرد، ابراہیم اعتصام اور حجت الاسلام و المسلمین محمد جمشیدی نے انقلاب اسلامی کی کامیابی کیلئے جدوجہد کرنے والے سالوں اور عراقی حکومت میں اسیری کے دوران اپنے واقعات کو بیان کیا۔

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔