باقر کاظمی کی زندگی کی یادداشتیں

محمود فاضلی
مترجم: جون عابدی

2015-09-02


 

سید  باقر   کاظمی  ایران  کی مشہور  شخصیتوں  میں سے ہے جس  کا تعلق  احمد  شاہ  کے  دور  سے  ڈاکٹر  مصدق   کے   وزارت  عظمیٰ  کے دور  تک ہے ،وہ پہلوی  اول  کے زمانہ مین ایران کے وزیر  خارجہ  تھے  ۔انہوں نے  ہر  سال کے لحاظ سے     اپنی یادوں  کو  تحریر  کیا ہے۔

کاظمی  المعروف بہ  مہذب الدولہ ولد  سید محمود معتصم  الدولہ  ۱۲۷۱ ش کو  شہر   تفرش مین   پیدا  ہوئے ۔ سیکنڈری   تعلیم  حاصل  کرنے  کے بعد  مدرسہ  علوم  سیاسی  سے    تعلیم  مکمل  کرکے فارغ ہوئے اور  وہیں  تدریس  کرنے لگے۔۱۳۰۶ ش ،میں  ان کو   مدرسہ  علوم  سیاسی  کے   علمی   انجمن   کا رکن  بنایا  گیا  اور   اس نے   وہاں  جغرافیا   کی  تعلیم   دینا   شروع کردی۔

تعلیم  مکمل  کرنے کے بعد مہذ ب الدولہ     وزارت  خارجہ میں   داخل  ہوئے  اور  کچھ عرصہ  کے بعد      واشنگٹن میں   ایران سفارت  خانہ مین   معتمد  اول کے عنوان سے   منتخب  ہوئے۔انہوں نے  امریکہ  مین  قیام کے دوران  اپنا  گریجوئیشن   مکمل کیا ۔اور امریکہ میں تقرری    کی مدت تمام  ہونےکے بعد  ۱۳۰۸ش کو    کابل   میں ان کو   سفیر کے  نائب  کے  عنوان  سے  منتخب کیا  گیا ۔وہا   ں  کی دوسالہ تقرری   تمام  ہونے  کے  بعد  تہران   واپس  آگئے اور ۱۳۰۸ میں  ڈپٹی ڈائریکٹر اور  اس کے  بعد   وزارت  نقل  وحمل  کی   ذمہ  داری   سنبھالی ۔اور اس کے بعد  فروغی  کی  دوسری کابینہ میں  وزیر  داخلہ  کے  عنوان سے منصوب کیا گیا ۔

اس کے بعد   آذر بائیجان کا   گورنر   بنایا  گیا  اس دوران   اس   نے سب  سے  اہم کام  یہ کیا  کہ   شاہ گلی  ،تبریز  کی   اور ہالنگ (overhauling)کروائی  اور  مرمت  کروائی۔

جم کی کابینہ میں     کاظمی کو  وزیر  خارجہ   بنایا  گیا  اور  اس دوران  انہوں نے منجملہ جو کام  انجام  دیئے  وہ کابل کا  سفر اور ’’ ہیرمند   ‘‘کے پانی کی تقسیم  کے  معاہدے   پر دستخط ہیں  ۔۱۳۱۵ میں   سفیر   بنا کر  ترکی  بھیجا گیا اور  اس کےبعد  افغانستان کےسفیر قرار  پایے۔(۱)

شہریور  ۱۳۲۰ کے بعد  دوبارہ  فروغی کی  کابینہ میں   وزیر   برائے صحت  عامہ  اور  وزیر داخلہ کے  عنوان  سے  منتخب   ہوئے۔اور  ۱۳۲۱ میں  احمد  قوام    کی  حکومت   میں   کابینہ میں تبدیلی کے  بعد  وزیر  داخلہ   بنایا  گیا  اور  پھر  کابینہ میں  ترمیم  کے بعد   وزارت خزانہ کی  ذمہ داری  سنبھالی ۔ساعد کی  کابینہ میں  کاظمی   وزیر  ثقافت  بنایا  گیا۔ساعد  کی کابینہ کے منحل ہونے کے بعد  انہیں   جزیرہ نما   اسکینڈے نیویا (Scandinavia)کے ممالک مین ایران کا  سفیر مطلق بنایا  گیا ۔اور اسی  طرح    مہذب الدولہ  سین فراسسکو کی  کانفرنس  مین  ایران کی  نمائیندگی کرنے والے وفد  کے بھی  رکن  تھے۔ 

قومی   تحریک  (نہضت  ملی )کے  شروع  ہوتے  ہی  کاظمی  اس    سے وابستہ ہوگئے  ،وہ  ڈاکٹر مصدق   کی  کابینہ میں  وزیر خارجہ  اور  نائب  وزیر  اعظم قرار  پائے۔اور  دوسری کابینہ میں مرداد۱۳۳۲ ش  کی ابتدا تک وزیر  برائے صحت عامہ رہے  اور  ایسے  اقتصادی  پروگرام  کو  نافذ کرنے کی کوششیں کیں جو  تیل  کی  درآمد  پر  منحصر نہ ہو۔اور اس کے بعد ایران کی  طرف  سے  پیرس  مین  سفیر کے عہدے پر   معین  کئے گئے اورشہریور  ۱۳۳۲ ش تک  اس  عہدے  پر  برقرار رہے۔اور  تختہ  پلٹ کے بعد  ۲۸ مرداد  ۱۳۳۲ کو  سفارتخانہ سے استعفا دے  دیا ۔یورپ  میں   ایک سال  تک  قیا م کے بعد  کاظمی  ایران  واپس  آگئے اور قومی   مزاحمت کی  تحریک میں  فعالیت  کرنےلگے۔فروردین  ۱۳۳۴ میں  انہیں   گرفتار کیا  گیا اور  اس  کے کچھ  عرصہ  کے بعد  جلاوطن  کردیا گیا۔وہ    انجمن  قومی محاذ  دوم کے بانیوں میں سے  تھے۔اور اسی  طرح    مرکزی  مجلس  شوریٰ   کے نمایندو ں کو  منتخب  کرنے اور مرکزی  شوریٰ  کی  صدارت  کی  ذمہ داری  بھی سنبھالی  ۔(۲)سید  باقر کاظمی کا  انتقال  اردیبہشت  ۱۳۵۵ ش  کو  ہوا ۔

اس ماہر  سیاسی  شخصیت  نے   اپنی  فعالیت کے  زمانے  کی   یادوں کو   تحریر کیا  تھا  جسے’’یادداشتہای از  زندگانی  باقر کاظمی ‘‘کے  نام سے کتاب  کی  شکل میں   جمع کیا گیا ہے ۔اس  کتاب کے  مطالعہ  سے  معلوم  ہوتا  ہے کہ  کاظمی کو   ملک  کے مسائل  اور  مشکلات کا  دقیق  ادراک اور احساس  تھا ۔چنانچہ  جو  افراد  عصری   تاریخ  میں دلچسپی   رکھتے  ہیں  وہ  اس   سیاستداں کی   یادداشت  کے  ذریعہ  پہلوی  حکومت کی سیاست او ر اسی   طرح شہریور ۱۳۲۰ ش کے واقعات کے سلسلہ میں  اہم  اطلاعات   حاصل  کرسکتے ہیں ۔  

مصنف   نے ،اپنی   یادداشت میں ، ذاتی  زندگی کے علا وہ    ایران   اور  اپنے زمانہ کے  بین الاقوامی مسائل اور  واقعات   پر  بھی  خصوصی  توجہ  دی ہے ۔ مصنف  کا  ان  مسائل کو  الگ  الگ  کرکے بیان   کرنا  اس    یادداشت کی تاریخی  اہمیت  اور  اس کے  وثوق کو   دوبالا کردیتا ہے ۔یہ  یادوں  کا  مجموعہ  ان  دیگر  یادوں  کے   مجموعوں کے ساتھ  جنہیں     مختلف  وزرائے  خارجہ   نے  تحریر کیا  تھا ،بیرونی  روابط، عالمی  جنگ کے مسائل ،ایران  کے  موقف اور  دیگر  مسائل کے  سلسلہ میں   ایرانی  تاریخ کے  اہم ماخذ میں شمار  ہوتا ہے ۔جس مین  مطالعہ  اور  تحقیق کے  ذریعہ  تاریخ  کےبہت  ہی  مفید تاریک   نکات کوحاصل کیا جاسکتا ہے ۔

کاظمی  ایک  متدین   شخصیت کے مالک تھے   اور ہمارے   ملک  کی  عصری   تاریخ میں   ان پر کوئی الزا م نہیں لگا ہے ۔یہ ان  کی زندگی کے مثبت   نقاط مین سے ایک  ہے ۔اسی  یادداشت میں  انہوں   نے اپنے دین  کی پابندی   مثلا  فلاں   ماہ رمضان میں  ایک  روزہ  بھی نہیں  چھوڑ ا ،دعائیں  اور  تلاوت قرآن  بھی   ترک  نہیں  کی  وغیرہ  کی  طرف   اشارہ کیا ہے ۔    ہرسال لکھی گئی  یہ  یادیں  ۱۳۳۴  ہجری  قمری  سے  شروع  جاتی  ہیں  لہٰذا  فطری سی بات  ہے    اس کے پہلے سال مین  زیادہ  تر ان کی ذاتی زندگی  اور  تعلیمی   دور  کی باتیں  لکھیں  ہیں اور  ۱۳۳۴ میں   مدرسہ سیاسی میں   داخلہ  لیا اور  اس کے بعد سے  دستوری حکومت کے   کی  تاریخ  کی   یادیں لکھیں  ہیں ۔

یہ ہر سال    لکھی جانے والی   یادداشت ۱۳۳۴ سے شروع ہوتی اور  اس کی پہلی جلد  سال ۱۳۳۸ تک   کے  واقعات کو شامل  ہے ۔ فطری سی بات  ہے    اس کے پہلے سال مین  زیادہ  تر ان کی ذاتی زندگی  اور  تعلیمی   دور  کی باتیں  لکھیں  ہیں اور  ۱۳۳۴ میں   مدرسہ سیاسی میں   داخلہ  لیا اور  اپنی یادوں کے ضمن میں ،انہوں نے ،  دستوری حکومت کے بارے میں  جو کچھ بھی   انہیں  اطلاع  تھی  تحریر کیا  ہے  ۔ دوسری جلد میں  سید  ضیا  الدین   طبا طبائی کی کابینہ(کابینہ سیاہ) میں موجودگی  اور برطانیہ  اور  روس   کی   استعماری حکومتوں کے  کردار کی  طرف   اشارہ ہوا ہے کتاب  میں  کاظمی  کے سفر  بغداد  بیروت  اور شام    اور۔۔۔۔کے  حالات کو بیان  کرتے ہوئے امریکہ کے سفر  کے حالات کا  تذکرہ کیا  گیا ہے ۔

ان  یادوں  کی  تیسری جلد   ۱۳۰۷ کے آخری  ایام سے ۱۳۱۴  تک کے   واقعات کو  شامل ہے ۔وہی   دور  جب  رضا   خان  نے ایران کو  تجدد  اور جدیدیت میں   بدلنے   کے لئے   پوری طاقت  جھونک دی تھی ۔اسی زمانہ میں  جدید  قائم شدہ  عراقی   حکومت کے  ساتھ ایران   کے مختلف  مسائل کو  بیان  کیا گیا ہے ۔اسی  جلد میں   شط العرب    کے سلسلہ  عراق کے ساتھ    رضاشاہ کا  نرمی  برتنا،بحرین  کا مسئلہ اور  انگریزوں کے ساتھ  اختلافات  کو   بیان   کیا  گیا ہے ۔

اس کتا ب میں  ثقافتی  خبریں  اور  وہ باتیں  جو  بیرونی  عناصر سے مربوط  ہیں ،پر  تفصیلی  طور پر خاص  توجہ  دی گئی ہے ۔۱۳۱۳ مٰن فردوسی کانفرنس کا  انعقا د اس میں سے ایک ہے ۔افراد   کے سلسلہ  میں  شاید  سب سے اہم  اطلاعات  ان لوگوں  کے بارے میں ہوں جو  وزیر خارجہ   ہونے کی  وجہ  سے   ا ن   سے تعلق  رکھتے  تھے ۔منجملہ   ’’اسدی  ‘‘ کے قتل  کا  واقعہ جس  کے بارے میں   مصنف  لکھتے ہیں :

’’میر  نگاہ میں  وہ بہت  محتاط ،سمجھدار اور  شاہ  سے  بہت  انسیت  رکھنے والا  شخص  تھا۔مجھے  ہرگز   نہیں  لگتا   کہ  وہ الزامات  جو اس  پر  عائد  کئے گئے ہیں  وہ   درست  ہونگے۔بہت افسوس  کی بات  ہے  کہ   ہمارے ملک  میں   لوگوں  کے  ساتھ  غیر منصفانہ   رویہ  اپنا یا  جاتا  ہے اور  وہ لوگ تیمور  جیسے افراد   کے  ذاتی سوئے ظن کی بھینٹ  چڑھ  جاتے ہیں ‘‘۔

۱۳۱۳ میں  تاریخ   تخت  جمیشد  کے   نیچے سے   پائی  جانے  والی  تختیوں  اور  ۱۹  آبا ن  ۱۳۱۴ کو ’’مشیر الدولہ   پیر نیا ‘‘ جو میری  نگاہ میں  اپنے زمانہ  کا سب سے سمجھدار  اور کامل وزیر اعظم اور  ایران کی اہم  شخصیتوں میں  سے تھا  اور  اس کی  تقرری اورخدمات کے  آثار اب  بھی  باقی ہیں ،کو  دل  کا  دورہ پڑنے  کی طرف اشارہ   کیا ہے۔ان مرحوم   نے  موجودہ شاہ  کے ساتھ    فکری اور  عملی  ہماہنگی   نہ  ہونے کی  وجہ  سے آٹھ  ساتھ  تک  سیاست   سے  کنارکشی  اختیار  کرلی  اور  اس  دوران  قدیمی   ایران  کے سلسلہ میں    بیش قیمت  کتابین  تنظیم   اور  تالیف  کیں ۔لفظ  ’’پرشیا‘‘ کی  جگہ  ’’ایران ‘‘کے استعمال اور  انگریزوں کے  لفظ  پرشیا  پر زور  دینے کا  معاملہ  ایسی  خبریں    ہیں جو  ان  یادوں  میں  بیان ہوئی ہیں  ۔اس  کتاب میں   عراق میں  ایرانی مدارس   اور  وہ  رقم  جو  روضوں  میں  مدفون  بادشاہوں اور  شہزادوں   کی   قبروں کی  دیکھ ریکھ کے لئے  ایران سے  بھیجی جاتی  تھیں  کی  طرف  بھی مختصر  اشارہ کیا گیا ہے ۔  

ان  یادوں  کی   چوتھی  جلد میں    مصنف کی   حکومت میں  موجودگی  اور   شہریور ۱۳۲۰ میں  ایران  کے   حالات کے  سلسلہ میں   نکات کو  بیان کیا گیا ہے ۔رضا شاہ کے استعفے کے  بعد   ،کاظمی  کو  محمد علی  فروغی  کی  تشکیل  شدہ   کابینہ  میں  وزیر برائے  صحت عامہ اور  وزیر  داخلہ  منصوب کیا  گیا ۔ وہ اطلاعات  جو  اس  حساس  دور سے متعلق  حاصل ہوئی  ہیں   وہ بہت   اہمیت کی حامل ہیں ۔ان  یادوں کی  پانچویں  جلد  زیر طبع ہے ،جو  ۱۳۲۱سے ۱۳۴۳ تک کے  واقعات کو  شامل ہے ۔

 



1- شرح حال رجال سیاسی و نظامی معاصر ایران (جلد سوم) دکتر باقر عاقلی، چاپ اول سال 1380، جلد سوم ص1280 نشر گفتار باهمکاری نشر علم.
2- صورت جلسه کنگره جبهه ملی ایران، به کوشش امیر طیرانی، نشر گام نو 1385.



 
صارفین کی تعداد: 2081


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 

تیسری ریجمنٹ: ایک عراقی قیدی ڈاکٹر کے واقعات – تینتیسویں قسط

لیفٹیننٹ "کنعان" میرے ساتھ کام کرنے کے دوران جنگ کے جاری رہنے کے حوالے سے اپنی ناراضگی کا اظہار کرتا تھا اور عراقی حکومت پر تنقید کرتا تھا، لیکن فوجی آپریشنز میں وہ سنجیدگی اور اخلاص کے ساتھ کام کرتا تھا

کہنے لگا: اسکا دل بہت دھڑک رہا ہے۔۔۔۔۔۔

ایک پولیس والے نے پستول کے بٹ سے میرے سر پر مارا ۔ مجھے احساس ہوا کہ جیسے یہ لوگ حقیقت میں مجھے مارنا چاہتے ہیں ۔ میں نے اپنے آپ سے کہا اب جب مارنا ہی چاہتے ہیں تو کیوں نہ میں ہی انہیں ماروں۔ ہمیں ان سے لڑنا چاہئے۔ میرے سر اور چہرے سے خون بہہ رہا تھا اور میں نے اسی حالت میں اٹھ کر ان دو تین سپاہیوں کا مارا۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۷ واں پروگرام

کیمیکل بمباری کے عینی شاہدین کے واقعات

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۷ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۲ نومبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۷ دسمبر کو منعقد ہوگا۔"
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۹ واں پرواگرام (۱)

ایک ملت، ایک رہبر اور ایک عظیم تحریک

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۹ واں پروگرام، جمعرات کی شام، ۲۴ جنوری ۲۰۱۹ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اس پروگرام میں علی دانش منفرد، ابراہیم اعتصام اور حجت الاسلام و المسلمین محمد جمشیدی نے انقلاب اسلامی کی کامیابی کیلئے جدوجہد کرنے والے سالوں اور عراقی حکومت میں اسیری کے دوران اپنے واقعات کو بیان کیا۔

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔